کامن ویلتھ گیمز:’نو نیڈل‘ پالیسی کی خلاف ورزی پر دو انڈین ایتھلیٹس کھیلوں سے باہر

انڈیا

آسٹریلیا کے شہر گولڈ کوسٹ میں جاری کامن ویلتھ گیمز میں شریک دو انڈین ایتھلیٹس کو 'نو نیڈل' پالیسی یعنی کسی قسم کے انجکشن کے استعمال پر پابندی کی خلاف ورزی کرنے پر واپس بھیج دیا گیا ہے۔

کامن ویلتھ گئیمز فیڈریشن (سی جی ایف) نے ٹرپل جمپر راکیش بابو اور ریس واکر عرفان کولوتھم تھودی کے اجازت نامے منسوخ کر دیے ہیں اور انھیں پہلی دستیاب فلائٹ سے اپنے ملک واپس جانے کے لیے کہا گیا ہے۔

یہ بھی پڑھیے

کامن ویلتھ گیمز: جوش، جذبہ اور لگن

آخری منٹ میں گول، پاکستان انڈیا میچ برابر

کامن ویلتھ گیمز: محمد بلال کا کُشتی میں کانسی کا تمغہ

ان کھلاڑیوں کے کمروں سے یہ انجکشن برآمد ہوئے تھے۔

خیال رہے کہ ان کامن ویلتھ گیمز میں انڈین ٹیم کی جانب سے دو بار اس پالیسی کی خلاف ورزی کی گئی ہے۔

صفائی کرنے والے عملے کے ایک اہلکار کو ان کے کمرے میں ٹیبل پر پڑے ہوئے ایک کپ میں سرنج ملی تھی جبکہ ایک آسٹریلین انٹی ڈوپنگ اہلکار نے بابو کے بیگ سے سرنج برآمد کی تھی۔

جمعے کو سی جی ایف کی سماعت کے دوران کامن ویلتھ گیمز کے صدر لوئز مارٹن نے کہا کہ دونوں کھلاڑیوں نے 'ناقابل اعتبار اور ٹال مٹول' کرنے والے ثبوت فراہم کیے ہیں۔

ان کا کہنا تھا کہ 'جب کامن ویلتھ گیمز فیڈریشن نے کہا کہ 'کوئی رعایت نہیں تو اس کا مطلب ہے کہ کوئی رعایت نہیں ہے۔'

فیڈریشن کی صدر کے مطابق 'دونوں ایتھلیٹس کو معطل کر کے باہر نکال دیا گیا ہے۔'

دونوں ایتھلیٹس نے سرنجوں کے بارے میں لاعلمی کا اظہار کیا ہے۔

واضح رہے کہ تین اپریل کو ایک بیمار باکسر کو وٹامن کا بلااجازت انجیکشن لگانے پر انڈین سکواڈ کے منتظمین کی سرزنش کی گئی تھی۔

اسی بارے میں