انگلینڈ اور آئرلینڈ کے لیے پاکستانی سکواڈ کا اعلان، پانچ نئے کھلاڑی ٹیسٹ سکواڈ میں شامل

کرکٹ تصویر کے کاپی رائٹ AFP

پاکستان کرکٹ بورڈ نے اتوار کو دورۂ انگلینڈ اور آئرلینڈ کے لیے پاکستان کے قومی ٹیسٹ کرکٹ سکواڈ کا اعلان کیا ہے جس میں پانچ کھلاڑی ایسے ہیں جو پہلی بار ٹیسٹ میں ملک کی نمائندگی کریں گے۔

قومی کرکٹ ٹیم کے چیف سیلیکٹر انضمام الحق نے لاہور میں سکواڈ میں شامل 16 کھلاڑیوں کے ناموں کا اعلان کیا۔

پاکستان ٹیم آئرلینڈ کے خلاف ایک ٹیسٹ اور انگلینڈ کے خلاف 24 مئی اور یکم جون کو دو ٹیسٹ میچ کھیلے گی۔

اس 16 رکنی سکواڈ میں زیادہ تر نوجوان کھلاڑیوں کو شامل کیا گیا ہے اور سلیکٹرز نے بظاہر بیٹنگ لائن اپ کو زیادہ مضبوط کرنے کی کوشش کی ہے۔

نوجوان کھلاڑیوں میں فخر زمان، امام الحق، سعد علی، عثمان صلاح الدین اور فہیم اشرف پہلی بار ٹیسٹ ٹیم میں شامل کیے گئے ہیں۔

فخر زمان کو ٹیم میں شامل کیے جانے کی ایک وجہ تو ایک روزہ اور ٹی ٹوئنٹی کرکٹ میں ان کی حالیہ فارم دکھائی دیتی ہے اور دوسری وجہ ان کا جارحانہ انداز بھی ہو سکتی ہے۔

انھوں نے فرسٹ کلاس کے 2016-17 کے سیزن میں 51 کی اوسط سے 663 رنز بنائے۔ انھوں نے اسی سیزن کے فائنل میچ میں 170 رنز کی اننگز بھی کھیلی تھی جس سے اندازہ ہوتا ہے کہ وہ ٹیسٹ کرکٹ میں بھی ایک بڑی اننگز کھیلنی کی صلاحیت رکھتے ہیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images

ان کے علاوہ اگر نوجوان کرکٹر سعد علی کی کارکردگی پر نظر ڈالی جائے تو ایسا لگتا ہے کہ انھیں حالیہ قائد اعظم ٹرافی میں ان کی فارم کے بنیاد پر ٹیسٹ سکواڈ میں شامل کیا گیا ہے۔

بائیں ہاتھ سے بلے بازی کرنے والے 24 سالہ سعد علی نے گذشتہ سیزن میں 68.35 کی اوسط سے 957 رنز سکور کیے تھے، جبکہ وہ اب تک اپنے فرسٹ کلاس کریئر 50 میچوں میں 3473 رنز بنا چکے ہیں، جس میں ان کی 232 رنز کی اننگز بھی شامل ہے۔

اسی طرح عثمان صلاح الدین جو کہ پاکستان کی جانب سے دو بین الاقوامی ایک روزہ میچز تو کھیل چکے ہیں لیکن یہ پہلا موقع ہے کہ انھیں ٹیسٹ سکواڈ میں شامل کیا گیا ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images

ستائس سالہ عثمان صلاح الدین دائیں ہاتھ سے مڈل آرڈر میں بلے بازی کرتے ہیں اور اب تک 99 فرسٹ کلاس میچوں میں 6329 رنز سکور کر چکے ہیں۔

چیف سلیکٹر انضمام الحق نے سکواڈ کا اعلان کرتے ہوئے اس میں زیادہ تر نجوانوںں کو شامل کرنے کی وجہ بتاتے ہوئے کہا کہ چونکہ ورلڈ کپ انگلینڈ میں ہو رہا ہے، اس لیے زیادہ سے زیادہ نوجوان کھلاڑیوں کو موقع دیا گیا ہے۔

انھوں بیٹنگ کو مضبوط کرنے کی وجہ کچھ یوں بتائی کہ 'کھلاڑیوں کا انتخاب کرتے ہوئے ہم نے بیٹنگ آرڈر مضبوط کرنے کی کوشش کی ہے۔ سب کو موقع ملے گا۔'

پاکستان کے چیف سیلیکٹر کا کہنا تھا کہ جن دنوں میں یہ سیریز کھیلی جائے گی انگلیڈ اور آئرلینڈ میں گیند زیادہ سوئنگ ہوتا ہے اس لیے بلےبازوں کو احتیاط سے کھیلنا پڑے گا۔

بولنگ میں بھی کچھ ذمہ داری نوجوان کرکٹرز کے کندھوں پر ہی ہوگی کیونکہ اس سکواڈ میں وہاب ریاض اور یاسر شاہ شامل نہیں ہیں۔

یاسر شاہ کی جگہ شاداب خان کو سکواڈ میں شامل کیا گیا ہے جو اب تک صرف ایک ہی ٹیسٹ میچ کھیل چکے ہیں جبکہ فاسٹ بولنگ کے شعبے میں دو ٹیسٹ میچ کھیلنے والے حسن علی اور پہلی بار ٹیسٹ سکواڈ میں جگہ بنانے والے فہیم اشرف کو ایکشن میں دکھائی دیں گے۔

فہیم اشرف کو ٹیم میں شامل کرنے کا ایک فائدہ یہ بھی ہو سکتا ہے کہ وہ بیٹنگ بھی کر لیتے ہیں۔

ٹیم کے کپتان سرفراز احمد ہوں گے، جب کہ بقیہ کھلاڑیوں میں اظہرعلی، سمیع اسلم، امام الحق، فخر زمان، اسد شفیق، حسن علی، فہیم اشرف، راحت علی، محمد عباس، عثمان صلاح الدین، شاداب خان، محمد عامر، بابر اعظم، حارث سہیل اور سعد علی شامل ہیں۔

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں