کرکٹ: پاکستان کی لارڈز میں شاندار فتح، انگلینڈ کو نو وکٹوں سے شکست

امام الحق تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption امام الحق فتح کے بعد اپنی خوشی کا اظہار کرتے ہوئے

پاکستان اور انگلینڈ کے درمیان لارڈز میں ہونے والے پہلے ٹیسٹ میچ کے چوتھے دن پاکستان نے انگلینڈ کو نو وکٹوں سے شکست دے دی ہے۔

انگلینڈ کی ٹیم اپنی دوسری اننگز میں 242 رنز بنا کر آؤٹ ہو گئی تھی اور پاکستان کو اس میچ میں کامیابی کے لیے 64 رنز کا ہدف ملا۔ پاکستان نے یہ ہدف باآسانی صرف ایک وکٹ کے نقصان پر حاصل کر لیا۔

میچ کا تفصیلی سکور کارڈ

نوجوان پاکستانی ٹیم کی لارڈز میں تاریخی فتح

یہ 1995 کے بعد پہلی مرتبہ ہوا ہے کہ انگلینڈ نے اپنے ملک میں گرمیوں میں کھیل کے دوران پہلا ہی ٹیسٹ ہارا ہو۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption پاکستان کی جانب سے دوسری اننگز میں محمد عامر اور محمد عباس نے چار چار وکٹیں حاصل کیں جبکہ شاداب خان نے دو کھلاڑیوں کو آؤٹ کیا۔

پاکستان کے آؤٹ ہونے والے واحد بلے باز اظہر علی تھے جو کہ 12 کے مجموعی سکور پر جیمز اینڈرسن کے ہاتھوں بولڈ ہوگئے۔ تاہم اس کے بعد حارث سہیل اور امام الحق نے بااعتماد انداز میں پاکستان کے لیے ہدف مکمل کر لیا۔

اس سے قبل چوتھے دن کے آغاز پر ہی انگلینڈ اپنے گذشتہ شب کے سکور میں زیادہ اضافہ نہ کر سکا اور اس کی چار وکٹیں یکے بعد دیگرے گر گئیں۔

پاکستان کی جانب سے دوسری اننگز میں محمد عامر اور محمد عباس نے چار چار وکٹیں حاصل کیں جبکہ شاداب خان نے دو کھلاڑیوں کو آؤٹ کیا۔

انگلینڈ کے کل کے ناٹ آؤٹ بلے باز جوس بٹلر کھیل شروع ہونے کے آغاز میں ہی محمد عباس کا شکار بن گئے۔ اور اگلے ہی اوور میں محمد عامر نے مارک وڈ کو سرفراز کے ہاتھوں کیچ آوٹ کروایا۔

اس کے بعد محمد عباس نے سٹورٹ براڈ کو صفر کے سکور پر آؤٹ کر دیا۔ انگلینڈ کی آخری وکٹ محمد عامر نے حاصل کی جب انھوں نے ڈوم بیس کو بولڈ کر دیا۔

گذشتہ شب جوس بٹلر اور ڈوم بیس نے ساتویں وکٹ کی شراکت میں 126 قیمتی رنز جوڑے۔ جب یہ دونوں بلےباز کریز پر آئے تو صرف 110 کے سکور پر انگلینڈ کی چھ وکٹیں گر چکی تھیں اور بظاہر اس پر اننگز کی شکست کے خطرے منڈلا رہے تھے۔

کل کے کھیل کی تفصیل جاننے کے لیے یہاں کلک کیجیے

لیکن ان دونوں کھلاڑیوں نے پاکستانی فاسٹ بولروں اور شاداب خان کو بہت عمدگی سے کھیلا اور میچ تیسرے روز ختم کرنے کی امید توڑ دی۔

یاد رہے کہ بابر اعظم کے زخمی ہونے کی وجہ سے پاکستان کے پاس اس میچ میں ایک وکٹ کم ہوگی۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption بٹلر (دائیں) اور بیس نے شاندار بیٹنگ کا مظاہرہ کیا ہے

میچ کے دوسرے روز بابر اعظم 68 کے انفرادی سکور پر بین سٹوکس کے ایک باؤنسر سے بچنے کی کوشش میں زخمی ہو کر اپنی بیٹنگ جاری نہ رکھ سکے اور انھیں میدان سے باہر جانا پڑا۔ پاکستانی ٹیم کے فزیوتھیراپسٹ کلف ڈیکن نے بعد میں بتایا کہ 'بدقسمتی سے ایکسرے میں ان کی بائیں کلائی میں فریکچر کی تصدیق ہو گئی۔' بابر اعظم انگلینڈ کے خلاف بقیہ سیریز نہیں کھیل سکیں گے۔

پاکستان کی جانب سے پہلی اننگز میں ٹاپ سکورر بھی بابر ہی رہے تھے۔ ان کے علاوہ پاکستان کے ٹاپ آڈر نے اچھی کارکردگی دیکھائی۔ اظہر علی 50، اسد شفیق 59، اور شاداب خان نے 52 رنز بنائے۔

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں