علی ترین کی پی ایس ایل میں کامیاب بولی سوشل میڈیا پر گرماگرم بحث کا موضوع

پاکستان کرکٹ بورڈ کے چیئر مین احسان مانی اور علی ترین تصویر کے کاپی رائٹ PCB
Image caption پاکستان کرکٹ بورڈ نے چھٹی ٹیم کی بولی کے لیے اس کی بنیادی قیمت 52 لاکھ ڈالر رکھی تھی تاہم علی ترین نے اس قیمت سے زیادہ کی بولی لگا کر اس کے حقوق خرید لیے

پاکستان تحریک انصاف کے سینیئر رہنما جہانگیر ترین کے بیٹے علی ترین نے پاکستان سپر لیگ (پی ایس ایل) کی چھٹی ٹیم خرید لی ہے جس کے بعد ایسا کیسے ہو سکتا ہے کہ سوشل میڈیا پر کسی قسم کا کوئی ردعمل سامنے نہ آتا۔

جمعرات کو جیسے ہی یہ خبر سامنے آئی کے پاکستان سپر لیگ کی چھٹی ٹیم جو گذشتہ سال ملتان سلطانز کے نام سے میدان میں اتری تھی علی ترین نے خرید لی ہے تو جہاں اس پر کچھ طنز و مزاح کیا گیا وہیں یہ خبر بھی سیاسی رنگ میں رنگ دی گئی۔

جہانگیر ترین نے ٹوئٹر پر اپنے بیٹے کو ٹیم کے حقوق حاصل کرنے پر مبارک باد کچھ اس انداز میں دی: ’میں علی ترین اور جنوبی پنجاب کے کرکٹ کے شائقین جو پی ایس ایل میں اپنے خطے کی نمائندے کے خواہشمند تھے کے لیے خوش ہوں۔ اس کھیل کے لیے علی میں بہت جذبہ ہے اور مجھے یقین ہے کہ وہ پاکستان کرکٹ کے لیے کچھ بھی بامعنی کرنے کے لیے سب کچھ کریں گے۔‘

مزید پڑھیے

پی ایس ایل اور آئی پی ایل کا مقابلہ کیا ممکن ہے؟

پی ایس ایل 4: شاہد آفریدی کس ٹیم کا حصہ بنیں گے؟

پی ایس ایل کے ناکام پاکستانی بیٹسمین

پی ایس ایل کیا کیا بیچے گی؟

پی ایس ایل بورڈ کے لیے کماتی ہے یا بورڈ پی ایس ایل کے لیے؟

تصویر کے کاپی رائٹ TWITTER

بعض سوشل میڈیا صارفین نے تو بنا وقت ضائع کیے یہ سوال اٹھا دیے کہ علی ترین ٹیم تو خرید سکتے ہیں لیکن کوئی اپنے دادا کے پیسوں سے ایک فلیٹ بھی نہیں لے سکتا؟

تصویر کے کاپی رائٹ TWITTER

پی ایس ایل میمز نے لکھا: ’اب جب کہ علی ترین نے چھٹی ٹیم کے حقوق حاصل کر لیے ہیں، جتنے بھی آزاد کھلاڑی گھوم رہے ہیں تیار ہو جائیں، جہاز آتا ہی و گا۔‘

تصویر کے کاپی رائٹ TWITTER

ایک صارف نے پی ایس ایل کے گذشتہ سیزن کے دوران لاہور میں ہونے والے میچ سے قبل گراؤنڈ کو سکھانے کے لیے ہیلی کاپٹر کو استعمال کیے جانے کی تصویر شیئر کرتے ہوئے لکھا: ’پی ایس ایل کی چھٹی ٹیم کے سٹیڈیم پہنچنے کے مناظر۔‘

تصویر کے کاپی رائٹ TWITTER

اس سے قبل پی ایس ایل انتظامیہ نے سماجی رابطے کی ویب سائٹ ٹوئٹر پر گذشتہ روز ایک پیغام میں بتایا تھا کہ علی ترین نے چھٹی فرینچائز کے حقوق حاصل کر لیے ہیں۔

پاکستان کرکٹ بورڈ نے چھٹی ٹیم کی بولی کے لیے اس کی بنیادی قیمت 52 لاکھ ڈالر رکھی تھی تاہم علی ترین نے اس قیمت سے زیادہ کی بولی لگا کر اس کے حقوق خرید لیے۔

پی ایس ایل اتظامیہ نے ٹوئٹر پر ایک پیغام میں بتایا کہ علی ترین نے آئندہ سات سال کے لیے چھٹی ٹیم کے حقوق حاصل کر لیے۔

خبر رساں ادارے اے پی پی کے مطابق پاکستان کرکٹ بورڈ کے ایک ترجمان کا کہنا تھا کہ پی ایس ایل کی چھٹی ٹیم کی بولی کا عمل جمعرات کو قذافی سٹیڈیم لاہور میں ہوا جس کی بنیادی قیمت 52 لاکھ ڈالر رکھی گئی تھی۔

تصویر کے کاپی رائٹ PSL
Image caption پاکستان سپر لیگ کے چوتھے ایڈیشن کا آغاز 14 فروری سنہ 2019 کو رنگارنگ افتتاحی تقریب کے ساتھ متحدہ عرب امارات میں ہو گا

ترجمان کے مطابق علی ترین نے پی ایس ایل کی چھٹی فرینچائز کے حقوق سات سال کے لیے 52 لاکھ ڈالر میں حاصل کر لیے۔

اس موقع پر بات کرتے ہوئے علی ترین نے میڈیا کو بتایا تھا کہ ’ہم جنوبی پنجاب میں کرکٹ کے حوالے سے کافی کام کر رہے ہیں اور ہمارا پروگرام ہے کہ ہر ضلع میں ایک گراؤنڈ اور اکیڈمی بنانے کے ساتھ ساتھ کلب کرکٹ کو سپورٹ کریں۔‘

خیال رہے کہ پی ایس ایل میں چھٹی ٹیم کا اضافہ راوں برس ہونے والے ایڈیشن میں کیا گیا تھا جسے شان پراپرٹی بروکرز نے خرید کر اس کا نام ملتان سلطانز رکھا تھا۔

تصویر کے کاپی رائٹ PSL Twitter account
Image caption پی سی بی نے شون پراپرٹی بروکرز کی زیر ملکیت فرنچائز ملتان سلطانز کا معاہدہ منسوخ کردیا جس کے بعد فرنچائز کے تمام مالکانہ حقوق واپس پاکستان کرکٹ بورڈ کو منتقل ہو گئے تھے

ملتان سلطانز کی ٹیم پی ایس ایل کے تیسرے ایڈیشن میں لوگوں کی نگاہوں کا مرکز رہی اور اس نے حریف ٹیموں کے خلاف یکطرفہ فتوحات حاصل کیں تاہم اپنے اختتامی میچوں میں اسے پے در پے شکستوں کا سامنا کرنا پڑا جس کے بعد وہ ایونٹ سے باہر ہو گئی تھی۔

ملتان سلطانز کی ٹیم رواں برس طے شدہ وقت کے مطابق متعدد مواقع ملنے کے باجود اپنی بینک گارنٹی جمع کروانے میں ناکام رہی جس کے بعد پی سی بی نے ان کا معاہدہ منسوخ کرنے کا فیصلہ کیا تھا۔

پی سی بی نے شان پراپرٹی بروکرز کی زیر ملکیت فرنچائز ملتان سلطانز کا معاہدہ منسوخ کردیا تھا جس کے بعد فرنچائز کے تمام مالکانہ حقوق واپس پاکستان کرکٹ بورڈ کو منتقل ہو گئے تھے۔

گذشتہ ماہ 20 نومبر کو جب اسلام آباد میں چوتھے ایڈیشن کی ڈرافٹنگ ہوئی تو اس ٹیم کو 'چھٹی ٹیم' کا نام دیا گیا تھا۔

پاکستان سپر لیگ کے چوتھے ایڈیشن کا آغاز 14 فروری سنہ 2019 کو رنگارنگ افتتاحی تقریب کے ساتھ متحدہ عرب امارات میں ہو گا۔

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں