جوہانسبرگ: پاکستان نے 32ویں اوور میں جنوبی افریقہ کو آٹھ وکٹوں سے شکست دے دی

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption سات اوورز میں چار وکٹیں لینے والے عثمان شنواری کو مین آف دی میچ قرار دیا گیا

جوہانسبرگ میں کھیلے جانے والے چوتھے ایک روزہ میچ میں پاکستان نے جنوبی افریقہ کو آٹھ وکٹوں سے شکست دے کر پانچ ایک روزہ میچوں کی سیریز برابر کر دی ہے۔

جنوبی افریقہ نے پاکستان کو میچ جیتنے کے لیے 165 رنز کا ہدف دیا تھا۔

میچ کا تفصیلی سکور کارڈ

سات اوورز میں چار وکٹیں لینے والے عثمان شنواری کو مین آف دی میچ قرار دیا گیا۔

اوپنر امام الحق نے بہترین بلے بازی کا مظاہرہ کر کے 91 گیندوں میں 71 رنز بنائے جس کے بعد یہ جنوبی افریقہ کے بولر پھیلکوایو کی گیند پر ڈی کاک کے ہاتھوں کیچ آؤٹ ہو گئے۔

اِن کے ساتھ آخر تک کھڑے رہے بابر اعظم جنھوں نے 53 گیندوں پر 41 رنز بنائے۔ امام الحق کے آؤٹ ہونے کے بعد آخری گیند پر چوکا مار کر محمد رضوان نے پاکستان کو میچ جتوا دیا۔

یہ بھی پڑھیے

سرفراز احمد پر چار میچوں کی پابندی عائد

کرکٹ میں نسلی امتیاز کے واقعات اور ان کے اثرات

سرفراز احمد نے ’نسل پرستانہ‘ فقرے پر معافی مانگ لی

سرفراز منہ کیوں چھپا رہے تھے؟

اِس سے قبل پاکستانی اوپنر فخر زمان 44 رنز بنا کر جنوبی افریقی بالر عمران طاہر کی گیند پر کیچ آؤٹ ہو گئے تھے۔

پاکستان اور جنوبی افریقہ کے درمیان پانچ میچوں پر مشتمل سیریز 2-2 سے برابر ہو گئی ہے۔

آج میزبان ٹیم کی جانب سے اننگز کا آغاز کوئنٹن ڈی کاک اور ہاشم آملہ نے کیا تھا۔

پاکستان کو پہلی کامیابی اس وقت ملی جب شاہین آفریدی نے کوئنٹن ڈی کاک کو ایل بی ڈبلیو کر دیا۔ جنوبی افریقہ نے فیلڈ امپائر کے فیصلے کے خلاف ریویو لیا تاہم تھرڈ امپائر نے فیلڈ امپائر کا فیصلہ برقرار رکھا۔

میزبان ٹیم ابھی پہلے نقصان سے پوری طرح سنھبل نہ پائی تھی کہ 18 رنز کے مجموعی سکور پر ریزا ہینڈرک شاہین آفریدی کی ہی گیند پر دو رنز بنا کر کیچ آؤٹ ہو گئے۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption جنوبی افریقہ نے پاکستان کو میچ جیتنے کے لیے 165 رنز کا ہدف دیا تھا

پاکستان نے جنوبی افریقہ کے کپتان فاف ڈوپلیسی کے خلاف رویو لیا تاہم تھرڈ امپائر نے فلیڈ امپائر کے ناٹ آؤٹ کا فیصلہ برقرار رکھا۔

دو وکٹیں گرنے کے بعد فاف ڈوپلیسی اور ہاشم آملہ نے ذمہ دارانہ بیٹنگ کا مظاہرہ کرتے ہوئے تیسری وکٹ کے لیے 101 رنز کی اہم شراکت قائم کی۔

119 رنز کے مجموعی سکور پر شاداب خان نے فاف ڈوپلیسی کو آؤٹ کر کے اپنی ٹیم کو اہم کامیابی دلائی۔ جنوبی افریقہ کے کپتان نے پانچ چوکوں اور ایک چھکے کی مدد سے 57 رنز بنائے۔

میزبان ٹیم کے آؤٹ ہونے والے چوتھے بلے باز ہاشم آملہ تھے جو عماد وسیم کی گیند پر بولڈ ہو گئے۔ انھوں نے سات چوکوں کی مدد سے 59 رنز بنائے۔

جنوبی افریقہ کی پانچویں وکٹ اس وقت گری جب ڈیوڈ ملر چار رنز بنا کر محمد عامر کی گیند پر ایل بی ڈبلیو ہوئے۔

ڈیوڈ ملر نے فیلڈ امپائر کے فیصلے کے خلاف ریوو لیا تاہم تھرڑ امپائر نے فیلڈ امپائر کا فیصلہ برقرار رکھا۔

پاکستان کی جانب سے عثمان شنواری نے عمدہ بولنگ کا مظاہرہ کرتے ہوئے ایک اوور میں تین کھلاڑیوں کو آؤٹ کیا۔ جنوبی افریقہ کی جانب سے کگیسو رابادا، ڈیل سٹین اور وین دیر ڈیسن یکے بعد دیگرے آؤٹ ہوئے۔

اس میچ میں پاکستان نے ٹاس جیت کر پہلے فیلڈنگ کا فیصلہ کیا ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption پاکستان کو پہلی کامیابی اس وقت ملی جب شاہین آفریدی نے کوئنٹن ڈی کاک کو ایل بی ڈبلیو کر دیا

اس اہم میچ کی کپتانی شعیب ملک کر رہے تھے۔ میچ شروع ہونے سے قبل شعیب ملک کا کہنا تھا ’ہم چاہتے تھے کہ سرفراز احمد آج کا میچ کھیلتے تاہم حال ہی میں ہوئے واقعے کی بنا پر وہ آج کا میچ نہیں کھیلیں گے اور میں اس متعلق مزید بات نہیں کرنا چاہتا۔‘

آج کا میچ اس حوالے سے بہت اہم ہے کیونکہ اگر پاکستان میچ ہار گیا تو سیریز بھی گنوا بیٹھے گا۔ آج کے مییچ میں پاکستان کی جیت سیریز کو مزید دلچسپ بنا دے گی۔

دونوں ٹیموں کے درمیان سیریز کا تیسرا میچ بارش کی وجہ سے منسوخ ہو گیا تھا جس کے بعد ڈک ورتھ لوئیس میتھڈ کے تحت جنوبی افریقہ 13 رنز سے میچ جیت کر سیریز میں سبقت حاصل کرنے میں کامیاب ہو گیا تھا۔

اسی بارے میں