پی ایس ایل: لاہور قلندرز کی کوئٹہ گلیڈی ایٹرز کے ہاتھوں شکست

پی ایس ایل تصویر کے کاپی رائٹ PCB

پی ایس ایل کے چوتھے ایڈیشن میں کوئٹہ گلیڈی ایٹرز ناقابلِ شکست ہونے کا اعزاز برقرار رکھے ہوئے ہے۔

شارجہ میں ہونے والے پاکستان سپر لیگ کے 12 ویں میچ میں کوئٹہ گلیڈی ایٹرز نے لاہور قلندرز کو دلچسپ مقابلے کے بعد تین وکٹوں سے شکست دے دی۔

لاہور قلندرز نے پہلے بیٹنگ کرتے ہوئے کوئٹہ گلیڈی ایٹرز کو جیتنے کے لیے 144 رنز کا ہدف دیا تھا۔

کوئٹہ گلیڈی ایٹرز نے یہ ہدف اننگز کی آخری گیند پر سات وکٹوں کے نقصان پر حاصل کر لیا۔

گلیڈی ایٹرز کو میچ جیتنے کے لیے آخری اوور کی آخری گیند پر دو رنز درکار تھے جو کہ کپتان سرفراز احمد کے زوردار چھکے کی صورت میں میسر آئے۔

کوئٹہ گلیڈی ایٹرز کے کپتان سرفراز احمد نے ذمہ دارانہ بیٹنگ کرتے ہوئے 36 گیندوں پر 52 رنز بنائے اور وہ ناٹ آؤٹ رہے۔ اپنی عمدہ کارکردگی کی بدولت سرفراز مین آف دی میچ قرار پائے۔

یہ بھی پڑھیے

قلندرز کی سنسنی خیز مقابلے کے بعد سلطانز کو شکست

اسلام آباد یونائیٹڈ کی کوئٹہ گلیڈی ایٹرز کے ہاتھوں شکست

’ہیٹ ٹرک کرنا محمد سمیع کی پرانی عادت‘

پی ایس ایل کے اس سیزن میں یہ کوئٹہ گلیڈی ایٹرز کی چوتھی لگاتار کامیابی تھی اور اب یہ آٹھ پوائنٹس کے ساتھ پوائنٹس ٹیبل پر سرِفہرست ہے۔

لاہور قلندرز کی جانب سے دیے گئے 144 رنز کے ہدف کے تعاقب میں کوئٹہ گلیڈی ایٹرز کا آغاز کچھ اچھا نہ تھا۔

تصویر کے کاپی رائٹ PCB

اننگز کے پہلے ہی اوور میں اوپنر شین واٹسن بغیر کوئی رن بنائے راحت علی کی گیند پر آؤٹ ہوئے۔

26 کے مجموعی سکور پر ریلی روسو بھی 17 رنز بنا کر یاسر شاہ کی گیند پر بولڈ ہو گئے جبکہ عمر اکمل سکور میں صرف نو رنز کا اضافہ کر کے حارث رؤف کی گیند پر کیچ آؤٹ ہو گئے۔

احسن علی نے 40 رنز کی عمدہ اننگز کھیلی تاہم وہ بھی 77 کے مجموعی سکور پر سندیپ لمیچن کا شکار ہوئے۔ اگلے ہی اوور میں صرف دو رنز بنا کر ڈوین سمتھ فخر زمان کے ہاتھوں رن آؤٹ ہو گئے۔

محمد نواز 19 اور انور علی صرف ایک رن بنا پائے۔ تاہم اس دوران وکٹ کی دوسری جانب موجود کپتان سرفراز احمد لگاتار رنز میں اضافہ کرتے رہے۔

لاہور قلندرز کی جانب سے 25 رنز کے عوض دو وکٹیں لے کر نمایاں بولر رہے جبکہ راحت علی، یاسر شاہ، سندیپ لمیچن اور وائز نے ایک، ایک بلے باز کو آؤٹ کیا۔

اس سے قبل کوئٹہ گلیڈی ایٹرز نے ٹاس جیت کر قلندرز کو پہلے بیٹنگ کی دعوت دی تھی۔

مقررہ 20 اوورز کے اختتام پر لاہور قلندرز سات وکٹوں کے نقصان پر 143 رنز بنائے تھے۔

21 رنز کے عوض تین وکٹیں لے کر گلیڈی ایٹرز کے غلام مدثر نمایاں بولر رہے۔ سہیل تنویر نے دو جبکہ محمد نواز اور انور علی دونوں نے ایک بلے باز کو آؤٹ کیا۔

تصویر کے کاپی رائٹ PCB

قلندرز کی جانب سے 40 گیندوں پر 45 رنز بنا کر اے بی ڈی ویلیئرز ٹاپ سکورر رہے۔

قلندرز کے اوپنر فخر زمان صرف تین رنز بنا کر محمد نواز کی گیند پر عمر اکمل کے ہاتھوں کیچ آؤٹ ہوئے۔

گرنے والی دوسری وکٹ سلمان بٹ کی تھی جو کہ پانچ رنز بنا کر غلام مدثر کی گیند پر کیچ آوٹ ہوئے ۔

غلام مدثر نے عمدہ بولنگ کرتے ہوئے اگلی ہی گیند پر سہیل اختر کو 41 کے مجموعی سکور پر آؤٹ کر دیا۔

دسویں اوور میں انور علی کی گیند پر کوری اینڈرسن 19 رنز بنا کر محمد نواز کے ہاتھوں کیچ آؤٹ ہو گئے۔

کپتان اے بی ڈی ویلیئرز کے ساتھ 40 رنز کی پارٹنرشپ کے بعد ڈیوڈ وائز 20 رنز بنا کر سہیل تنویر کی گیند پر ڈوائن سمتھ کے ہاتھوں کیچ آؤٹ ہو گئے۔

گوہر علی پانچ جبکہ یاسر شاہ صرف ایک رن بنا کر آوٹ ہوئے۔ اے بی ڈی ویلیئرز 45 رنز بنا کر ناٹ آؤٹ رہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ PCB

کوئٹہ کی ٹیم اس وقت پوائنٹس ٹیبل میں آٹھ پوائنٹس کے ساتھ سرِفہرست ہے۔

کوئٹہ گلیڈی ایٹرز پی ایس ایل کے چوتھے ایڈیشن واحد ناقابلِ شکست ٹیم بن کر ابھری ہے۔ گلیڈی ایٹرز نے اب تک چار میچ کھیلے ہیں اور اپنے مدِمقابل دفاعی چیمپیئن اسلام آباد یونائیٹڈ، پشاور زلمی، لاہور قلندرز اور ملتان سلطانز کو شکست سے دوچار کیا ہے۔

لاہور قلندرز نے اب تک پانچ میچ کھیلے ہیں جن میں سے انھیں دو میں کامیابی اور تین میں شکست کا سامنا کرنا پڑا ہے۔ چار پوائنٹس کے ساتھ قلندرز پوائنٹس ٹیبل پر چوتھے نمبر پر ہے۔

پاکستان سپر لیگ کے گذشتہ تین ایڈیشنز میں لاہور قلندرز اور کوئٹہ گلیڈی ایٹرز چھ مرتبہ مدِ مقابل آ چکے ہیں۔ کوئٹہ گلیڈی ایٹرز چار بار فاتح رہی جبکہ لاہور قلندرز دو مرتبہ فتح سے ہمکنار ہوئی۔

سرفراز احمد کی کپتانی میں کوئٹہ گلیڈی ایٹرز کی ٹیم شین واٹسن، احسن علی، ریلی روسو، عمر اکمل، ڈوین سمتھ، محمد نواز، غلام مدثر، سہیل تنویر، انور علی، اور فواد احمد پر مشتمل تھی۔

لاہور قلندرز کی ٹیم فخر زمان، سلمان بٹ، اے بی ڈی ویلیئرز (کپتان)، سہیل اختر، ڈیوڈ وائز، حارث رؤف، راحت علی، سندیپ لمیچن، یاسر شاہ، گوہر علی اور کوری اینڈرسن پر مشتمل تھی۔

اسی بارے میں