پی ایس ایل فور: سنسنی خیز مقابلے کے بعد اسلام آباد یونائیٹڈ کی چار وکٹوں سے جیت، فائنل پہنچنے کے لیے زلمی کا سامنا

کرکٹ تصویر کے کاپی رائٹ Pcb
Image caption آصف علی اسلام آباد کے ہیرو ثابت ہوئے اور انھوں نے 10 گیندوں پر 24 رنز بنائے

پاکستان سپر لیگ فور کا پہلے ناک آؤٹ میچ کراچی کے نیشنل سٹیڈیم کراچی میں کھیلا جا رہا ہے دفاعی چیمپئین اسلام آباد یونائیٹڈ نے نے سنسنی خیز مقابلے کے بعد کراچی کنگز کو چار وکٹوں سے ہرا کر زلمی کے خلاف دوسرے ناک آؤٹ میچ میں جگہ بنا لی ہے۔

جمعے کے روز ان کا مقابلہ پشاور زلمی سے ہوگا اور میچ میں فتح حاصل کرنے والا اتوار کو کوئٹہ گلیڈی ایٹرز کے خلاف فائنل کھیلے گا۔

کراچی کنگز کی جانب سے دیے گیے 162 رنز کے جواب میں اسلام آباد یونائیٹڈ نے آخری اوور کی تیسری گیند پر ہدف عبور کر لیا۔

کراچی کے بائیں ہاتھ کے بولر عمر خان کے سپیل کے اختتام پر لگ رہا تھا کہ کراچی شاید میچ میں آگے ہو گیا ہے لیکن حسین طلعت اور ایلکس ہیلز کی درمیان نصف سنچری کی شراکت نے یونائیٹڈ کو مستحکم کیا اور اس کے بعد آصف علی اور فہیم اشرف نے زوردار ہٹنگ کر کے جیت کو یقینی بنایا۔

کراچی کے گذشتہ میچ کے ہیرو عثمان شنواری جنھوں نے کوئٹہ کے خلاف ایک اوور میں پانچ رنز کا دفاع کیا تھا آج وہ کارکردرگی دکھانے میں ناکام رہے اور تین اوورز میں 42 رنز دیے۔

لیکن کنگز کی شکست کو یقینی بنانے میں دو اوورز کا اہم کردار تھا جب پہلے 18ویں اوور میں محمد عامر نے زبردست بولنگ کی لیکن ان کی آخری دو گیندوں پر فہیم اشرف نے دس رنز بٹور لیے اور اس سے بھی زیادہ اہم لمحہ 19ویں اوور میں آیا جب عامر یامین کے اوور کی پہلی گیند پر بابر اعظم نے آصف علی کا کیچ چھوڑ دیا جو اس وقت دس رنز پر کھیل رہے تھے۔

آصف علی اسلام آباد کے ہیرو ثابت ہوئے اور انھوں نے 10 گیندوں پر 24 رنز بنائے جس میں دو بلند و بالا چھکے اور ایک چوکا شامل تھا جو کہ میچ وننگ شاٹ ثابت ہوا۔

تصویر کے کاپی رائٹ Pcb
Image caption ہیلز 41 رنز بنا کر آؤٹ ہو گئے

کراچی کنگز کی جانب سے نوجوان سپنر عمر خان نے چار اوورز میں 16 رنز دے کر دو وکٹیں حاصل کیں اور ان کی بولنگ کے سامنے یونائیٹڈ کے کھلاڑی بالکل بے بس نظر آئے۔

عامر یامین نے بھی اپنے چار اوورز میں صرف 27 رنز دیے اور دو وکٹیں اور ایک نہایت شاندار کیچ لیک لیا محمد عامر، عثمان شنواری اور عماد وسیم کی کارکردگی کا معیار اتنا اچھا نہ تھا۔

اسلام آباد یونائیٹڈ کی جانب سے لیوک رانکی جلد آؤٹ ہوگئے لیکن اس کے بعد پہلے کیمرون ڈیلپورٹ نے اچھی اننگز کھیلی اور 38 رنز بنائے اور اس کے بعد ہیلز اور حسین طلعت نے نصف سنچری کی شراکت قائم کی جس کی مدد سے انھیں جیت کے لیے پلیٹ فارم ملا۔

پی ایس ایل میں اپنا پہلا میچ کھیلنے والے ایلکس ہیلز کو 41 رنز بنانے پر مین آف دا میچ کا اعزاز ملا۔

تصویر کے کاپی رائٹ Pcb
Image caption عمر خان نے چار اوورز میں 16 رنز دے کر دو وکٹیں حاصل کی ہیں

کراچی کنگز کی اننگز:

تصویر کے کاپی رائٹ Pcb
Image caption بابر اعظم نے سب سے زیادہ 42 رنز بنائے

کراچی کنگز کی ٹیم نے اپنے 20 اوورز میں نو وکٹوں کے نقصان پر 161 رنز بنائے۔ ان کی جانب سے اوپنر کولن منرو نے 32 رنز اور بابر اعظم نے 42 رنز بنائے۔ ان کے علاوہ لیم لیونگ سٹون نے 30 رنز کیے۔

جب دس اوورز کے بعد کراچی کنگز کا سکور ایک وکٹ پر 100 رنز تھا تو اس موقع پر لگ رہا تھا کہ ان کی ٹیم 200 رنز کے قریب سکور لے جائے گی لیکن اسلام آباد یونائیٹڈ کی بولرز نے انتہائی زبردست کارکردگی دکھاتے ہوئے کم بیک کیا اور اگلے دس اوورز میں صرف 61 رنز دے کر آٹھ کھلاڑی آؤٹ کر دیے۔

اسلام آباد کی جانب سے محمد موسی سب سے کامیاب بولر تھے جنھوں نے 42 رنز دے کر تین وکٹیں لیں۔ اس کے علاوہ فہیم اشرف نے بھی 30 رنز کے عوض تین آؤٹ کیے۔

کراچی کنگز نے انتہائی جارحانہ آغاز کیا اور کولن منرو کی اننگز کی بدولت پاور پلے کے اختتام پر 78 رنز بنا کر پی ایس ایل کی تاریخ میں بنائے گئے سب سے زیادہ سکور کا ریکارڈ برابر کر دیا۔

لیکن اس کے بعد کراچی کنگز کی مشکلات میں آہستہ آہستہ اضافہ شروع ہونے لگا۔

تصویر کے کاپی رائٹ Pcb
Image caption اسلام آباد یونائیٹڈ کا شاندار کم بیک جس نے کراچی کنگز کو تیز آغاز کے باوجود

کراچی کی جانب سے کولن منرو نے دھواں دھار آغاز کیا اور اسلام آباد کے کپتان محمد سمیع کو ان کے پہلے اوور میں تین چوکے لگائے۔

اگلے اوور میں رمان رئیس کے ساتھ بھی یہی حشر ہوا اور انھیں منرو نے دو اور بابر اعظم نے ایک چوکا لگایا۔

تیسرے اوور میں فہیم اشرف آئے تو ان کے ساتھ بھی یہی سلوک ہوا اور بابر نے ایک اور منرو نے دو چوکے لگائے۔

دسویں اوور میں کراچی کنگز نے ٹیم کے سو رنز مکمل کر لیے لیکن اگلے ہی اوور میں شاداب خان نے لیم لیونگ سٹون کو 30 رنز پر کیچ آؤٹ کرا دیا۔

ٹورنامنٹ کے سب سے کامیاب بیٹسن کولن انگرام کے آنے کے بعد کراچی کو امید بنی کے شاید وہ بابر اعظم کے ساتھ لمبی شراکت قائم کریں گے لیکن 12ویں اوور میں رمان ریئس نے بابر کو 42 رنز پر کیپر کے ہاتھوں کیچ آؤٹ کر دیا جس کے لیے امپائر ریویو کی مدد لینے پڑی۔

جب 16ویں اوور کے لیے محمد موسی آئے تو انھوں نے ایک بار پھر پہلی گیند پر چھکا کھانے کے بعد اگلی گیند پر ٹورنامنٹ کے سب سے کامیاب بلے باز انگرام کو 23 رنز پر آؤٹ کر دیا اور اس کے تین گیند بعد افتخار احمد بھی ایک رن بنا کر انھی کی گیند پر آؤٹ ہوگئے۔ محمد موسیٰ نے اپنے سپیل میں 42 رنز دے کر تین کھلاڑیوں کو آؤٹ کیا۔

تصویر کے کاپی رائٹ Pcb
Image caption محمد موسی نے اسلام آباد کے لیے تین وکٹیں حاصل کیں

17ویں اوور میں فہیم اشرف نے بین ڈنک کو بھی باؤنڈری پر 12 رنز پر کیچ آؤٹ کرا دیا۔ محمد سمیع کے اگلے اوور میں عامر یامین بھی ایک رن بنا کر رن آؤٹ ہوگئے۔

فہیم اشرف نے اپنے آخری اوور میں بہترین گیندیں کرائیں اور صرف دو رنز دے کر دو اور کھلاڑی آؤٹ کیے۔

اس سے پہلے اسلام آباد کو پہلی کامیابی چوتھے اوور میں ملی جب محمد موسی نے منرو سے چھکا کھانے کے بدلہ اگلی ہی گیند پر لے لیا اور انھیں 32 رنز پر آؤٹ کرا دیا۔

پانچویں اوور میں فہیم اشرف نے نئے آنے والے بلے باز لیونگ سٹون کو چکمہ دیا لیکن ان کے ہوا میں کھیلے گئے کیچ کو اسلام آباد کے کپتان ممحمد سمیع نے گرا دیا۔

تصویر کے کاپی رائٹ Pcb
Image caption کولن منرو نے 11 گیندوں پر 32 رنز بنائے

ان دونوں ٹیموں نے ماضی میں پلے آف مرحلے میں تین بار ایک دوسرے کا سامنا کیا ہے جہاں تینوں بار انھوں نے پہلے بیٹنگ کو ترجیح دی۔ ان میچوں میں دو بار انھیں شکست کا سامنا کرنا پڑا جبکہ ایک بار وہ فتح سے ہمکنار ہوئے۔

اس سال کھیلے گئے دونوں میچوں میں کراچی نے پہلے بیٹنگ کی اور دونوں بار وہ ہار گئی۔

ان دونوں ٹیموں کے مابین 23 فروری کو کھیلے گئے پہلے میچ میں اسلام آباد یونائٹیڈ نے باآسانی سات وکٹوں سے جیت حاصل کی۔

اس کے بعد27 فروری کو کھیلے گئے دوسرے میچ میں کراچی نے بہتر کھیل پیش کرتے ہوئے 169 کا ہدف دیا جو کہ آصف علی کی شاندار بیٹنگ کی بدولت اسلام آباد نے پانچ وکٹوں پر پورا کر لیا۔

تصویر کے کاپی رائٹ Pcb
Image caption کراچی کنگز کے دونوں اوپنرز نے ٹیم کو برق رفتاری سے 52 رنز کا آغاز دیا

گذشتہ سال ان دونوں ٹیموں نے بالترتیب پہلی اور دوسری پوزیشن حاصل کی تھی اور کوالیفائر مقابلے میں لیوک رانکی کی دھواں دھار اننگز نے اسلام آباد کو فائنل میں پہنچا دیا تھا۔

اس میچ میں فتح حاصل کرنے والی ٹیم جمعے کو پشاور زلمی کے خلاف فائنل میں کوالیفائی کرنے کے لیے کھیلے گی جہاں اتوار کو کوئٹہ گلیڈی ایٹرز کی ٹیم ان کی منتظر ہوگی۔

کراچی کنگز کی ٹیم کپتان عماد وسیم، عامر یامین، بابر اعظم، بین ڈنک، کولن انگرم، کولن منرو، لییم لیونگسٹون، محمد عامر، افتخار احمد، عثمان شنواری اور عمر خان پر مشتمل ہے۔

اسلام آباد یونائیٹڈ کی ٹیم میں لیوک رونکی، ایلکس ہیلز، کیمرون ڈیلپورٹ، چیدڈ وک والٹن، حسین طلعت، آصف علی، شاداب خان، فہیم اشرف، محمد موسی، محمد سمیع اور رومان رئیس شامل ہیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ Pcb
Image caption کراچی کنگز نے ٹاس جیت کر پہلے بیٹنگ کا فیصلہ کیا ہے

اسی بارے میں