کرکٹ ورلڈ کپ 2019: پاکستانی ٹیم کی ِکٹ کی رونمائی، ماضی کے مقابلے میں یہ کِٹ کیسی ہے؟

کرکٹ تصویر کے کاپی رائٹ Pcb

پاکستان کرکٹ بورڈ نے 30 مئی سے شروع ہونے والے کرکٹ ورلڈ کپ کے لیے پاکستان کرکٹ ٹیم کے کِٹ کی رونمائی کر دی ہے۔

کرکٹ کا سامان بنانے والی مقامی کمپنی اے جے سپورٹس کی بنائی ہوئی کِٹ میں گہرا سبز رنگ سب سے زیادہ نمایاں ہے۔

کرکٹ تصویر کے کاپی رائٹ Pcb
Image caption 2019

اس کِٹ کی شرٹ کے درمیان میں سبز رنگ کے مختلف شیڈز ہیں جن میں سفید رنگ سے پاکستان لکھا ہوا ہے۔ شرٹ کے بائیں جانب کرکٹ بورڈ کا لوگو اور دائیں جانب عالمی کرکٹ کپ 2019 کا لوگو موجود ہے۔

شرٹ کے عقبی حصے میں اوپر پاکستان کا جھنڈا اور درمیان میں کھلاڑی کا نام اور نمبر درج ہے۔

یہ بھی پڑھیے

جنید خان کا ’کڑوا سچ‘ اور پاکستان کا ورلڈ کپ سکواڈ

’بھئی کیسے بنا لیتے ہو ایسی وکٹیں؟‘

عامر، وہاب اور آصف علی کی ورلڈ کپ سکواڈ میں واپسی

کرکٹ تصویر کے کاپی رائٹ Pcb

اے جے کرکٹ ماضی میں بھی پاکستان کرکٹ ٹیم کے لیے کِٹ فراہم کرتے رہے ہیں اور انھوں نے 2003 کے عالمی کپ میں سری لنکا اور بنگلہ دیش کی ٹیموں کی لیے بھی کِٹ فراہم کی تھی۔

ٹورنامنٹ کے قواعد کے مطابق اس بار 1992 کے ورلڈ کپ کا فارمیٹ استعمال ہوگا جس کے تحت ہر ٹیم ایک دوسرے کے خلاف کھیلے گی۔

کرکٹ تصویر کے کاپی رائٹ Pcb

پاکستان اپنا پہلا مقابلہ ٹرینٹ برج کے میدان میں 31 مئی کو ویسٹ انڈیز کے خلاف کھیلے گا۔

شائقین کو سب سے زیادہ انتظار 16 جون کو ہونے والے مقابلے کا ہے جب پاکستان اور انڈیا مانچسٹر کے اولڈ ٹریفورڈ کے میدان میں مدمقابل ہوں گے۔

یاد رہے کہ پاکستان نے ورلڈ کپ کے مقابلوں میں کبھی بھی انڈیا کو شکست نہیں دی ہے۔

اگر آپ کو ماضی میں پاکستانی کرکٹ ٹیم کی جانب سے استعمال کی جانے والی کٹ یاد نہیں ہیں تو آپ اس گیلری میں انھیں دیکھ سکتے ہیں اور یہ فیصلہ کر سکتے ہیں کہ ان سب میں سب سے عمدہ ڈیزائن والی کِٹ کون سی تھی۔

کرکٹ تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption 1992

سنہ 1992 کا ورلڈ کپ وہ پہلا موقع تھا جب رنگین کٹس، سفید گیندوں اور فلڈ لائٹس کا استعمال کیا گیا تھا۔ اس ورلڈ کپ میں تمام ٹیموں کی کٹس ڈیزائن میں ایک جیسی تھیں اور صرف ان کے رنگ تبدیل کیے گئے تھے۔ یہ ورلڈ کپ پاکستان کی جیت پر ختم ہوا تھا اور اس وقت ٹیم کی قیادت موجودہ وزیر اعظم عمران خان کر رہے تھے۔

کرکٹ تصویر کے کاپی رائٹ Pcb
Image caption 1996

چار سال بعد 1996 کا عالمی کپ بر صغیر میں منعقد ہوا تھا جہاں پاکستان، انڈیا اور سری لنکا نے میزبانی کے فرائض سر انجام دیے۔

اس سے گذشتہ ورلڈ کپ کی طرح اس بار بھی مختلف ٹیموں کی کِٹس کے ڈیزائن ایک جیسے تھے لیکن رنگ مختلف تھے۔

اس ورلڈ کپ کا فائنل لاہور کے قذافی سٹیڈیم میں کھیلا گیا جہاں سری لنکا نے آسٹریلیا کو ہرا کر پہلی بار جیت حاصل کی۔

کرکٹ تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption 1999

تین سال بعد کرکٹ کے عالمی مقابلے انگلینڈ میں منعقد ہوئے جہاں پہلی بار ٹیموں نے علیحدہ ڈیزائن والی کِٹس استعمال کی۔

اس ورلڈ کپ میں پاکستان کی کارکردگی نمایاں رہی اور ٹیم نے فائنل تک رسائی حاصل کی جہاں انھیں آسٹریلیا کے ہاتھوں شکست ہوئی۔

کئی مبصرین کے مطابق یہ پاکستان کی تاریخ کی بہترین کرکٹ ٹیم تھی۔

کرکٹ تصویر کے کاپی رائٹ Stu Forster
Image caption 2003

جنوبی افریقہ نے 2003 کے ورلڈ کپ کی میزبانی کی تھی جس میں پاکستان کی کارکردگی انتہائی ناقص رہی اور ٹیم پہلے ہی راؤنڈ میں باہر ہوگئی۔

یہ ورلڈ کپ پاکستان کی تاریخ کے بہترین کھلاڑیوں کا آخری مقابلہ ثابت ہوا۔ سابق کپتان وسیم اکرم ، وقار یونس اور سعید انور نے اس ورلڈ کپ کے بعد دوبارہ پاکستان کی کبھی نمائندگی نہیں کی۔

کرکٹ تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption 2007

سنہ 2007 کا عالمی کپ ویسٹ انڈیز کے جزائر میں کھیلا گیا اور پاکستانی شائقین کے لیے شاید اس سے زیادہ برا ورلڈ کپ کبھی نہیں گزرا ہوگا۔

پاکستان کی ٹیم پہلے راؤنڈ میں آئرلینڈ سے شکست کھا کر نہ صرف ٹورنامنٹ سے باہر ہوگئی بلکہ ٹیم کے اس وقت کے کوچ باب وولمر میچ کے اگلے روز اپنے ہوٹل کے کمرے میں مردہ حالت میں پائے گئے۔

یہ لگاتار دوسرا ورلڈ کپ تھا جب پاکستانی ٹیم پہلے راؤنڈ میں ہی باہر ہوگئی۔

کرکٹ تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption 2011

سنہ 2011 کا عالمی کپ ایک بار پھر برصغیر میں کھیلا گیا لیکن اس بار پاکستان کو میزبانی کا موقع نہ مل سکا کیونکہ 2009 میں سری لنکن کرکٹ ٹیم پر شدت پسندوں کے حملوں کے بعد بین الاقوامی ٹیموں نے پاکستان آنے سے انکار کر دیا تھا۔

شاہد آفریدی کی قیادت میں پاکستانی ٹیم نے اس بار اچھے کھیل کا مظاہرہ کرتے ہوئے سیمی فائنل تک رسائی حاصل کی لیکن ایک بار پھر قسمت نے ساتھ نہیں دیا اور میزبان انڈیا کی ٹیم سے انھیں موہالی کے میدان میں شکست کا سامنا کرنا پڑا۔

انڈیا نے فائنل میں شریک میزبان سری لنکا کو ممبئی کے میدان میں شکست دے کر اپنا دوسرا عالمی کپ جیتا۔

کرکٹ تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption 2015

آسٹریلیا نے سنہ 1992 کے بعد پہلی بار ورلڈ کپ کی میزبانی 2015 میں کی جہاں ایک بار پھر پاکستان کی ٹیم قابل ذکر کارکردگی نہ دکھا سکی۔

مصباح الحق نے اس بار قیادت کی ذمہ داری سنبھالی تھی اور ٹیم کو کوارٹر فائنل تک لے گئے جہاں وہاب ریاض نے شاندار بولنگ کا مظاہرہ کیا لیکن میزبان آسٹریلیا کو جیت سے نہ روک سکے۔

فائنل میں آسٹریلیا نے شریک میزبان نیوزی لینڈ کو میلبرن کے کرکٹ گراؤنڈ میں شکست دے کر اپنا چوتھا عالمی اعزاز حاصل کیا۔

۔

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں