کرکٹ فکسنگ: انڈیا کی خواتین کرکٹرز سے رابطوں پر بکیز کے خلاف مقدمہ درج

انڈیا کی خواتین کرکٹ ٹیم تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption پولیس نے بی بی سی ہندی کے عمران قریشی کو بتایا کہ راکیش بفنا اور جتندرا کوٹھاری پر فریب دہی اور سٹے بازی کے الزامات لگائے گئے ہیں

انڈین پولیس نے دو بُکیز کے خلاف انڈیا کی قومی ٹیم کی دو خواتین کرکٹرز کو میچ فکس کرنے کے لیے رابطہ کرنے کے الزام میں مقدمہ درج کیا ہے۔

یہ مبینہ واقعہ فروری کے مہینے میں انڈیا اور انگلینڈ کی محدود اوورز کی کرکٹ سیریز سے پہلے ہوا۔

پولیس نے بی بی سی ہندی کے عمران قریشی کو بتایا کہ راکیش بفنا اور جتندرا کوٹھاری پر فریب دہی اور سٹے بازی کے الزامات لگائے گئے ہیں۔

مزید پڑھیے

انڈیا میں ہر میچ پر اربوں کا دھندا کیسے ہوتا ہے

سرفراز کو سپاٹ فکسنگ کی پیشکش پر 10 سال کی پابندی

سپاٹ فکسنگ: شرجیل خان کی غیر مشروط معافی

انڈیا کی کھیلوں کی جوابازی کی صنعت دنیا میں سب میں سٹے بازی کی سب سے بڑی صنعتوں میں سے ایک سمجھی جاتی ہے۔ اس کا حجم 45 سے 150 بلین ڈالر تک ہے۔

ابتدائی معلومات کے مطابق ان دونوں مبینہ جواریوں نے ایک خاتون کرکٹر سے سپورٹس منیجر کا روپ دھار کر رابطہ کیا۔ امکان ظاہر کیا جاتا ہے کہ خاتون کرکٹر نے بفنا کے ساتھ ہونے والی یہ کال ریکارڈ کر کے انڈیا میں کرکٹ کا انتظام سنبھالنے والے ادارے بی سی سی آئی کو دے دی تھی۔

یہ واضح نہیں ہے کہ انھوں نے اس حادثے کے حوالے سے بورڈ کو کب بتایا تاہم بورڈ نے پیر کے روز پولیس کو اس حوالے سے اطلاع دے دی تھی۔

بی سی سی آئی کے ایک اہلکار اجیت سنگھ شیکھاوت نے میڈیا کو بتایا کہ 'جو لوگ سٹے بازی میں ملوث ہوتے ہیں وہ کسی بھی کرکٹ میچ کو متاثر کر سکتے ہیں۔ ان کے لیے یہ اہم نہیں ہوتا کہ یہ میچ کس سطح پر کھیلا جا رہا ہے۔‘

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images

ان کا مزید کہنا تھا کہ یہ بات ظاہر کرتی ہے کہ یہ خاتون کرکٹرز پر ویسے ہی اثر انداز ہو سکتے ہیں جیسے مرد کرکٹرز پر ہوتے ہیں اس لیے انھیں بھی اتنا ہی محتاط رہنا چاہیے۔

چند خبروں کے مطابق انڈین کرکٹ ٹیم کے ایک ون ڈے میچ پر 190 ملین ڈالر سے زیادہ کا جوا لگتا ہے۔

انڈیا میں کرکٹ اس سے قبل بھی میچ فکسنگ کے تنازعات کی زد میں رہی ہے۔ انڈیا کے سابق کپتان محمد اظہرالدین کے ملوث ہونے کا بھی انکشاف ہوا تھا۔ جس کے بعد ان پر تاحیات پابندی عائد کر دی گئی تھی۔

انڈیا کی منافع بخش ٹی ٹوئنٹی لیگ انڈین پریمیئر لیگ (آئی پی ایل) بھی فکسنگ کے تنازعات کی زد میں رہی ہے۔

انڈین ججز کی سربراہی میں بنائی گئی کمیٹیاں اس نتیجے پر پہنچی ہیں کہ آئی پی ایل سے منسلک متعدد شخصیات میچ فکسنگ اور غیرقانونی جوابازی میں ملوث رہی ہیں۔ جس کے بعد انڈین ٹیم کے فاسٹ بولر شری شانتھ پر سات برس کی پابندی عائد کر دی گئی تھی۔

اسی بارے میں