راہول ڈراوڈ نے محمد موسٰی کے بارے میں کیا کہا تھا؟

موسی تصویر کے کاپی رائٹ PCB

نوجوان فاسٹ بولرز محمد موسٰی اور نسیم شاہ کی پاکستانی کرکٹ ٹیم میں شمولیت کو چیف سلیکٹر اور ہیڈ کوچ مصباح الحق سرپرائز پیکج قرار دیتے ہیں لیکن چند سابق کرکٹرز کا خیال ہے کہ ان نئے نوجوان فاسٹ بولرز کو وقت سے پہلے انٹرنیشنل کرکٹ میں لایا جا رہا ہے، اور وہ بھی آسٹریلیا جیسی مشکل سیریز کے دوران۔

19 سالہ محمد موسٰی کا تعلق کوہستان سے ہے۔ وہ راولپنڈی میں پیدا ہوئے اور وہیں اپنی کلب کرکٹ شروع کی۔ وہ اپنے کریئر میں سوئی سدرن گیس، اسلام آباد یونائیٹڈ اور سوئی نادرن گیس کی ٹیموں کی نمائندگی کر چکے ہیں۔

انڈین کوچ راہول ڈراوڈ کے ستائشی کلمات

محمد موسٰی نے گذشتہ برس نیوزی لینڈ میں ہونے والے انڈر 19 ورلڈ کپ میں پاکستان کی نمائندگی کی تھی۔

یہ بھی پڑھیے

آسٹریلیا کی طرف سے کھیلنے کی ادھوری خواہش

انڈر 19 ورلڈ کپ کے سیمی فائنل میں پاکستان کو شکست

دورہ آسٹریلیا: نوجوان ٹیم کا اعلان، عثمان قادر بھی شامل

اس ٹیم میں شاہین آفریدی بھی شامل تھے جنھوں نے 12 وکٹیں حاصل کیں جبکہ محمد موسٰی سات وکٹیں حاصل کرنے میں کامیاب ہوئے تھے۔ جس میں انڈیا کی کرکٹ ٹیم کے خلاف 67 رنز کے عوض 4 وکٹوں کی کارکردگی شامل تھی۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images

پاکستان انڈر 19 ٹیم صرف 69 رنز پر آؤٹ ہو کر میچ 203 رنز سے ہار گئی تھی لیکن انڈیا کی کرکٹ ٹیم کے کوچ راہول ڈراوڈ شاہین شاہ آفریدی اور محمد موسٰی کی صلاحیتوں سے متاثر ہوئے بغیر نہ رہ سکے تھے۔

محمد موسٰی کہتے ہیں ’میں شکست کے بعد افسردگی میں ڈریسنگ روم میں بیٹھا تھا۔ باہر شاہین شاہ آفریدی انڈیا کی کرکٹ ٹیم کے کوچ راہول ڈراوڈ سے باتیں کر رہے تھے۔ انھوں نے مجھے بتایا کہ راہول ڈراوڈ کہہ رہے تھے کہ تم دونوں بولرز میں بہت ٹیلنٹ ہے اور مجھے لگ رہا ہے کہ تم دونوں کو صرف دو سال کے عرصے میں سینیئر ٹیم میں کھیلنا چاہیے۔‘

محمد موسٰی کا کہنا ہے کہ شاہین شاہ آفریدی کو بھی یہ یقین تھا کہ ہم دونوں ایک دن پاکستان کی طرف سے انٹرنیشنل کرکٹ ضرور کھیلیں گے۔

’لیکن میں شاہین کو کہتا تھا کہ تم مجھ سے پہلے کھیل جاؤ گے کیونکہ تم میں مجھ سے زیادہ ٹیلنٹ ہے اور تمہارا قد بھی فاسٹ بولر والا ہے۔‘

تصویر کے کاپی رائٹ PCB

فرسٹ کلاس کریئر

محمد موسٰی کی فرسٹ کلاس کرکٹ گذشتہ سال ہی شروع ہوئی ہے اور انھوں نے اب تک صرف سات فرسٹ کلاس میچ کھیلے ہیں۔

انھوں نے مصباح الحق کی قیادت میں سوئی نادرن گیس کی طرف سے واپڈا کے خلاف اپنے پہلے فرسٹ کلاس میچ کی پہلی اننگز میں تین اور دوسری اننگز میں ایک وکٹ حاصل کی۔

موجودہ سیزن میں انھوں نے سوئی نادرن گیس کی طرف سے خیبر پختونخوا کے خلاف ٹی ٹوئنٹی میچ میں عمدہ بولنگ کرتے ہوئے چار وکٹیں حاصل کیں۔

پاکستان سپر لیگ

انڈر 19 اور فرسٹ کلاس کرکٹ میں اپنے ٹیلنٹ کو سامنے لا کر وہ پاکستان سپر لیگ تک بھی پہنچے اور اسلام آباد یونائیٹڈ نے ان کی صلاحیتوں سے فائدہ اٹھانے کا فیصلہ کیا۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images

محمد موسٰی نے اپنے ٹی ٹوئنٹی کریئر کی ابتدا بھی متاثر کن انداز میں کی اور پاکستان سپر لیگ میں اسلام آباد یونائیٹڈ کی طرف سے پشاور زلمی کے خلاف شارجہ میں کامران اکمل، ڈیوڈ ملان اور ڈیرن سیمی کو آؤٹ کر کے مین آف دی میچ قرار پائے۔

محمد موسٰی نے پی ایس ایل میں سات میچز کھیلے جن میں انھوں نے آٹھ وکٹیں حاصل کیں۔

محمد موسٰی کا اس موقع پر کہنا تھا کہ’ان کی خوش قسمتی ہے کہ انھیں وقار یونس جیسے ورلڈ کلاس بولر سے بہت کچھ سیکھنے کو ملا۔‘

ان کا کہنا تھا ’وقار بھائی کی موجودگی سے مجھے بہت فائدہ ہوا ہے وہ مجھے بہت اہم باتیں بتا رہے ہیں کہ جب تمہارا رن اپ اور بولنگ ایکشن بہتر ہو گا تو تمہاری رفتار میں مزید اضافہ ہو گا۔‘

وقار یونس اب پاکستانی کرکٹ ٹیم کے بولنگ کوچ بنے ہیں اور محمد موسٰی کے لیے اچھا موقع ہے کہ وہ ان کے وسیع تجربے سے فائدہ اٹھائیں۔

اسی بارے میں