پی سی بی چیف ایگزیکٹیو وسیم خان: ’پاکستان میں ٹیسٹ سیریز کھیلنے پر بنگلہ دیش ہچکچاہٹ کا شکار ہے‘

کرکٹ تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images

پاکستان کرکٹ بورڈ کے چیف ایگزیکٹیو آفیسر وسیم خان کا کہنا ہے کہ بنگلہ دیش کرکٹ بورڈ پاکستان میں ٹی ٹوئنٹی سیریز کھیلنے پر تو رضامند ہے لیکن ٹیسٹ سیریز کھیلنے پر ہچکچاہٹ کا شکار ہے۔

وسیم خان کا کہنا ہے کہ آئی سی سی بنگلہ دیشی ٹیم کے دورہ پاکستان کے سکیورٹی پلان کو منظور کرچکی ہے۔

انھوں نے کہا کہ سری لنکا کی ٹیم پہلے محدود اوورز اور اب ٹیسٹ سیریز یہاں کھیل رہی ہے اور سکیورٹی کا کوئی خدشہ ظاہر نہیں کیا ہے، اس لیے بنگلہ دیش کرکٹ بورڈ سے یہ پوچھا جارہا ہے کہ آپ ٹیسٹ سیریز کیوں کھیلنا نہیں چاہتے؟

وسیم خان نے بھی کہا کہ یہ بات بالکل واضح ہے کہ پاکستان کرکٹ بورڈ کے پاس ٹیسٹ سیریز کسی دوسرے ملک میں کھیلنے کا کوئی آپشن اب موجود نہیں ہے۔

یہ بھی پڑھیے

پاکستان کی بنگلہ دیش کرکٹ ٹیم کو دورے کی دعوت

بنگلہ دیش کا پاکستان میں ٹی ٹوئنٹی سیریز کھیلنے سے انکار

آسٹریلیا کو ٹیسٹ میچ ہرانے کے لیے پاکستان کیا کرے؟

تصویر کے کاپی رائٹ WASEEM KHAN
Image caption پاکستان کرکٹ بورڈ کے چیف ایگزیکٹیو آفیسر وسیم خان

ایم سی سی کی ٹیم کا دورہ پاکستان

وسیم خان کا کہنا ہے کہ میری لیبون کرکٹ کلب (ایم سی سی) کی ٹیم کمار سنگاکارا کی قیادت میں آئندہ سال فروری میں پاکستان کا دورہ کرے گی۔ اس دورے میں وہ لاہور میں ٹی ٹوئنٹی میچوں کی سیریز کھیلے گی۔

وسیم خان کا کہنا ہے کہ ایم سی سی سے گزشتہ چند ماہ سے اس دورے کے لیے بات چیت جاری تھی اور اب ایم سی سی نے باضابطہ طور پر اس دورے کی تصدیق کردی ہے۔

آسٹریلوی ٹیم ٹیسٹ سیریز پاکستان میں کھیلے گی

وسیم خان کا کہنا ہے کہ آسٹریلوی کرکٹ ٹیم سنہ 2022 میں پاکستان کا دورہ کرے گی جس میں اسے دو ٹیسٹ اور تین ٹی ٹوئنٹی میچز کھیلنے تھے لیکن اب یہ ٹیسٹ سیریز تین میچوں پر مشتمل ہو گی۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images

قطر ٹی 10 لیگ میں پاکستانی کرکٹر سے بکیز کا رابطہ

پاکستان کرکٹ بورڈ کے چیف ایگزیکٹیو وسیم خان نے اس بات کی تصدیق کی ہے کہ قطر میں ہونے والی ٹی ٹین لیگ کے دوران مشکوک افراد کی جانب سے ایک سابق پاکستانی کرکٹر سے رابطہ کیا گیا لیکن اس کرکٹر نے اس کی بروقت اطلاع پاکستان کرکٹ بورڈ اور انٹی کرپشن یونٹ کو دے دی تھی۔

انھوں نے بتایا کہ پاکستان کرکٹ بورڈ نے اس معاملے کی تمام تر تفصیلات سے آئی سی سی کو آگاہ کر دیا ہے۔

وسیم خان نے تسلیم کیا کہ غیرملکی کرکٹ لیگس میں پاکستانی کرکٹرز کو کھیلنے کی اجازت دینے کے بارے میں پاکستان کرکٹ بورڈ کی پالیسی کنفیوز ہے جس کا جائزہ لے کر درست کیا جارہا ہے۔

واضح رہے کہ پاکستان کرکٹ بورڈ پر اس وجہ سے تنقید ہوئی ہے کہ اس نے اپنے کرکٹرز کو ابوظہبی میں کھیلی گئی ٹی ٹین لیگ میں کھیلنے کی اجازت نہیں دی تھی لیکن قطر کی ٹی ٹین لیگ میں اجازت دے دی تھی۔

انھوں نے کہا کہ پاکستان کرکٹ بورڈ چاہتا ہے کہ اگر ملک میں ڈومیسٹک کرکٹ نہیں ہو رہی تو کرکٹرز باہر جا کر کھیل سکیں اور تجربہ حاصل کریں۔

اسی بارے میں