حارث رؤف اور انڈین پنجاب سے تعلق رکھنے والے سکیورٹی گارڈ کے درمیان مکالمہ: ’یہ گیند بہت قیمتی ہے، اسے سنبھال کر رکھنا‘

  • عبدالرشید شکور
  • بی بی سی اردو ڈاٹ کام
حارث

،تصویر کا ذریعہGetty Images

حارث رؤف کے لیے یہ ویسے بھی ایک بڑا دن تھا۔ پہلے میچ میں عمدہ بولنگ کے بعد آسٹریلیا کے ایک نمایاں جریدے نے انھیں اپنے سرورق پر فیچر کیا، بلکہ یہ بھی کہا کہ انھوں نے ڈیل سٹین کی کمی محسوس ہی نہیں ہونے دی۔

ایسے میں ان کی ملاقات انڈین پنجاب سے تعلق رکھنے والے ایک سکیورٹی گارڈ سے ہوئی۔

بی بی سی سے بات کرتے ہوئے حارث کا کہنا تھا: ’سٹیڈیم میں داخل ہوتے وقت ایک سکیورٹی گارڈ نے مجھ سے کہا کہ میچ کے بعد آپ مجھ سے ضرور ملنا، میں آپ کو گلے لگانا چاہتا ہوں۔ میں نے کہا کہ میں آپ کو ابھی گلے لگا لیتا ہوں۔‘

حارث بتاتے ہیں کہ جب وہ اس سکیورٹی گارڈ سے بغل گیر ہوئے تو گارڈ آبدیدہ ہو گئے۔

مزید پڑھیے

’میں نے سوچا یہ شخص کسی پریشانی میں مبتلا ہے۔ میں نے اس سے پوچھا تو اس نے صرف یہی کہا کہ مجھے آپ سے گلے مل کر بہت خوشی ہوئی ہے۔‘

یہ وہ لمحہ تھا جب حارث نے دل ہی دل میں دعا کی اگر انھیں میچ میں پانچ وکٹیں حاصل ہو جاتی ہیں تو وہ اس سکیورٹی گارڈ کو یہ گیند بطور تحفہ دیں گے کیونکہ وہ اسے ’چھوٹی سی خوشی دینا چاہتے ہیں۔‘

راولپنڈی سے تعلق رکھنے والے حارث رؤف جو پہلی مرتبہ لاہور قلندرز کے ٹرائلز کے دوران منظرِ عام پر آئے تھے آج کل آسٹریلیا میں بگ بیش ٹی ٹوئنٹی لیگ کی فرنچائز میلبرن سٹارز کی نمائندگی کر رہے ہیں۔

گذشتہ ہفتے حارث رؤف لاہور قلندرز کے تعاون سے آسٹریلیا میں کلب کرکٹ کھیل رہے تھے جب اچانک میلبرن سٹارز نے انھیں ڈیل سٹین کے متبادل کے طور پر منتخب کر لیا۔

اتوار کے روز جب حارث میدان میں اترے، تو انھوں نے وقار یونس کی یارکرز کی یاد تازہ کر دی اور ہوبارٹ ہریکینز کے پانچ کھلاڑیوں کو پویلین کی راہ دکھا دی۔ اپنی اس کارکردگی پر وہ مین آف دی میچ قرار پائے۔

،تصویر کا ذریعہ@BBL

،تصویر کا کیپشن

میچ کے بعد حارث نے وہ گیند اس سکیورٹی گارڈ کو دی تو وہ ایک مرتبہ پھر جذباتی ہو گئے

میچ کے بعد حارث نے وہ گیند اس سکیورٹی گارڈ کو دی تو وہ ایک مرتبہ پھر جذباتی ہو گئے۔

انھوں نے بی بی سی سے بات کرتے ہوئے بتایا کہ ’میں نے اس سے صرف یہ کہا کہ یہ بہت اہم گیند ہے اسے سنبھال کر رکھنا۔‘

’اللہ نے میری دعا قبول کر لی، آپ ایسے لوگوں کے ساتھ اچھا برتاؤ کریں تو ان کی دعائیں آپ کو ضرور لگتی ہیں۔‘

،تصویر کا ذریعہGetty Images

،تصویر کا کیپشن

جب حارث رؤف ڈھائی سال قبل گوجرانوالہ میں رائزنگ اسٹارز پروگرام کے ٹرائلز دینے آئے تھے تو اس وقت تک انھوں نے اپنی تمام تر کرکٹ ٹیپ بال سے ہی کھیلی تھی

ٹیپ بال سے بگ بیش تک کا سفر

لاہور قلندرز کے چیف آپریٹنگ افسر ثمین رانا بی بی سی اردو سے بات کرتے ہوئے کہتے ہیں کہ حارث رؤف اور دیگر کرکٹرز کو سامنے لانے کا سہرا کوچ عاقب جاوید کے سر ہے جنھوں نے ان تمام کرکٹرز کے ٹیلنٹ کو پرکھا۔

جب حارث رؤف ڈھائی سال قبل گوجرانوالہ میں رائزنگ اسٹارز پروگرام کے ٹرائلز دینے آئے تھے تو اس وقت تک انھوں نے اپنی تمام تر کرکٹ ٹیپ بال سے ہی کھیلی تھی۔

،ویڈیو کیپشن

’پی ایس ایل میں تیز ترین گیند کرنا چاہتا ہوں‘

وہ راولپنڈی میں پارٹ ٹائم سیلز مین تھے اور کرکٹ کا شوق انھیں گوجرانوالہ لے گیا تھا جہاں عاقب جاوید نے ان میں چھپا ہوا ٹیلنٹ دیکھ لیا اور انہی کے کہنے پر حارث رؤف سے 10 سال کا معاہدہ کیا گیا تھا۔

انھیں آسٹریلیا بھیجا جاتا رہا جہاں انھوں نے مقامی کلب کی طرف سے میچز کھیلے اس دوران انھیں آسٹریلیا کا دورہ کرنے والی بھارتی ٹیم کی نیٹ پریکٹس میں بھی بولنگ کا موقع ملا تھا جہاں انھوں نے وراٹ کوہلی کو بھی بولنگ کی تھی۔

آہستہ آہستہ ان کی بولنگ میں پختگی آتی گئی اور ابوظہبی کے ٹی ٹوئنٹی ٹورنامنٹ میں انھوں نے تیز رفتار بولنگ کر کے سب کو حیران کردیا تھا۔

ثمین رانا کا کہنا ہے کہ انھوں نے حارث رؤف کو سی پی ایل اور یورپی لیگ میں بھی موقع دلانے کی کوشش کی لیکن وہ لوگ غیر معروف بولر کو کھلانے میں ہچکچاہٹ کا شکار تھے۔

،تصویر کا ذریعہGetty Images

،تصویر کا کیپشن

ین الاقوامی کرکٹ میں پاکستان کی نمائندگی ان کا دیرینہ خواب ہے

تاہم وہ بگ بیش میں میلبرن کی ٹیموں کے جنرل مینیجر نِک کمنز کے شکرگزار ہیں جنھوں نے ان پر اعتماد کرتے ہوئے حارث رؤف کو ٹرائلز میں موقع دیا۔

حارث رؤف کا کہنا ہے کہ بین الاقوامی کرکٹ میں پاکستان کی نمائندگی ان کا دیرینہ خواب ہے۔ اس وقت پاکستانی ٹیم میں تیز رفتار بولرز نظر آ رہے ہیں جن میں نسیم شاہ، شاہین شاہ آفریدی، محمد حسنین اور محمد موسیٰ شامل ہیں۔

اگر انھیں موقع ملا تو وہ بھی اپنی بہترین کارکردگی کا مظاہرہ کرنے کی ہر ممکن کوشش کریں گے۔