فٹ بال میں ہیڈنگ ڈیمنیشا کا باعث، سکاٹ لینڈ اور انگلینڈ میں نئی ہدایات

تصویر کے کاپی رائٹ Martin Rose

سکاٹ لینڈ کی فٹ بال ایسوسی ایشن نے تصدیق کی ہے کہ اس نے بارہ سال سے کم عمر کے بچوں کو فٹ بال کی تربیت کے دوران 'ہیڈنگ' یا سر سے کھیلنے پر پابندی لگا دی ہے۔

سکاٹ لینڈ میں فٹ بال کے انتظامی ادارے کا کہنا ہے کہ وہ 12 سے 17 سال کی عمر کے کھلاڑیوں پر بھی کھیل کے دوران سر کے استعمال کو محدود کر رہے ہیں۔

گلاسگو کی یونیورسٹی میں ہونے والی ایک تحقیق سے ثابت ہوا ہے کہ ڈیمنیشا یا بھول جانے کی بیماری کا تعلق فٹ بال سے ہے جس کے بعد ملک کی فٹ بال فیڈریشن کی طرف سے یہ فیصلہ سامنے آیا ہے۔

یہ نئی ہدایات فوری طور پر نافذ العمل ہوں گی لیکن میچوں کے دوران سر کے استعمال پر پابندی نہیں ہو گی۔

گلاسگو یونیورسٹی کی یہ تحقیق گزشتہ سال اکتوبر میں شائع کی گئی تھی جس میں کہا گیا تھا کہ فٹ بال کے سابق پیشہ ور کھلاڑیوں کے دماغی بیماری میں مبتلا ہونے کے امکانات عام آدمیوں کی نسبت بہت زیادہ بڑھ جاتے ہیں۔ ان کھلاڑیوں کی آخری عمر میں ڈیمنشیا کے مرض سے موت واقع ہونے کے امکانات بھی عام آدمی کے مقابلے میں پانچ گنا زیادہ ہوتے ہیں۔

سکاٹ لینڈ کی فٹ بال فیڈریش کا کہنا ہے کہ یہ عام سمجھ بوجھ اور ان امکانات کو کم کرنے کی بات ہے۔

سکاٹ لینڈ کے فٹ بال فیڈریشن کے سربراہ ائن میکسویل نے کہا ہے نئی ہدایات کا مقصد فٹ بال کوچز کو کھلاڑیوں کو کمی عمری میں تربیت کے دوران غیر ضروری طور پر سر کا استمعال کرنےسے باز رکھنا ہے۔

انھوں نے کہا یہ بات اہم ہے کہ کم عمر کھلاڑیوں کے میچوں کے دوران سر کا استعمال بہت کم ہوتا ہے لیکن نئی ہدایات کسی بھی قسم کے امکان کو ختم کرنے کے لیے دی گئی ہیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ Gideon Mendel

انگلینڈ میں بھی فٹ بال فیڈریشن نے اپنے تازہ ہدایت نامے میں تبدیلی کر دی ہے لیکن اس نے ہیڈنگ پر پابندی عائد کرنے سے گریز کیا ہے۔

سکاٹ لینڈ فٹ بال فیڈریشن کی نئی ہدایات:

  • چھ سے 11 سال کے کھلاڑیوں کی تربیت کے دوران ہیڈنگ نہیں کرائی جائے گی۔ اس عمر کے کھلاڑیوں کو کھیل سے لطف اندوز ہونے، کھیل کو سمجھنے اور بال پر قابو رکھنے پر زور دیا جائے گا۔
  • 12 سے 13 برس کے کھلاڑیوں میں ہیڈنگ کو کم ترجیح دی جائے گی اور اس کو محدود پیمانے پر استعمال کرنے دیا جائے گا۔
  • 14 سے 15 برس کے کھلاڑیوں میں بھی اس کو کم ترجیح دی جائے گی۔ ہر ہفتے میں ہیڈنگ کی تربیت صرف ایک دن دی جائے گی اور کھلاڑیوں کو بھی ایک خاص تعداد سے زیادہ ہیڈنگ کرنے کی اجازت نہیں دی جائے گی۔
  • 16 سے17 برس کے کھلاڑیوں میں ہیڈنگ کی تربیت کا سیشن صرف ایک دن کرایا جائے گا اور کوچز کو یہ خیال رکھنا ہو گا ہے کہ کوئی کھلاڑی متواتر ہیڈنگ نہ کرے۔

اس ہدایت نامے میں یہ کہا گیا کہ کھلاڑیوں کو ہیڈنگ کرنے پر جرمانہ عائد نہیں کیا جائے گا لیکن کوچز کو کھیل کے دیگر حربوں پر زور دینا ہو گا جن میں ڈربلنگ، پاسنگ اور مشترکہ حملے شامل ہیں ۔

سکاٹ لینڈ کی فٹ فیڈریشن کا کہنا ہے کہ وہ لوگوں کی حوصلہ افزائی کرے گی کہ جو کلب نئے ہدایت نامے پر عمل نہیں کریں گے اس کی شکایت درج کرائیں۔

اس قسم کی پابندی امریکہ میں میچوں کے دوران بھی سنہ دو ہزار پندرہ سے نافذ العمل ہے۔

امریکہ میں یہ پابندی والدین اور کوچز کی طرف سے امریکی سوکر فیڈریشن کے خلاف قانونی کارروائی کے بعد عمل لگائی گئی تھی۔

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں