یونس اور آفریدی کے لیےصدارتی تمغہ

پاکستانی کرکٹ ٹیم کے سابق کپتان یونس خان اور آل راؤنڈر شاہد آفریدی کو دنیائے کرکٹ میں غیرمعمولی کارکردگی پر صدارتی تمغہ برائے حسن کارکردگی دیا گیا ہے۔

یونس خان یہ ایوارڈ 23 مارچ کو گورنر ہاؤس پشاور میں ہونے والی تقریب میں صوبائی گورنر اویس احمد غنی سے وصول کرینگے جبکہ شاہد آفریدی کو سندھ کے گورنر ڈاکٹر عشرت العباد یہ ایوارڈ دیں گے۔

یونس خان کوان دنوں پاکستان کرکٹ بورڈ کی جانب سے ’خاموش ‛ پابندی کا سامنا ہے جس کی مدت کے بارے میں کچھ نہیں بتایا گیا ہے۔

شاہد آفریدی آسٹریلوی دورے میں بال ٹمپرنگ پر آئی سی سی کی جانب سے دو میچوں کی پابندی کی سزا بھگتنے کے بعد پاکستان کرکٹ بورڈ کی طرف سے تیس لاکھ روپے جرمانے کی زد میں بھی آچکے ہیں۔

یونس خان نے گزشتہ سال سری لنکا کے خلاف کراچی ٹیسٹ میں شاندار ٹرپل سنچری اسکور کی تھی اور پھر ان کی کپتانی میں پاکستانی کرکٹ ٹیم نے ٹوئنٹی ٹوئنٹی کا عالمی کپ جیتا تھا۔

شاہد آفریدی کو پرائڈ آف پرفارمنس اسی عالمی کپ میں شاندار کارکردگی پر دیا گیا ہے جس کے سیمی فائنل اور فائنل میں انہوں نے میچ وننگ نصف سنچریاں بنائی تھیں۔

شاہد آفریدی نے بی بی سی سے بات کرتے ہوئے کہا کہ انہیں اس پذیرائی پرخوشی ہوئی ہے کیونکہ اپنے چودہ سالہ کیرئر میں وہ پاکستان کے لیے کچھ کر دکھانے کی سوچ کے ساتھ کھیلے ہیں۔

Image caption پاکستان کے لیے کچھ کر دکھانے کی سوچ کے ساتھ کھیلا ہوں: شاہدآفریدی

انھوں نے کہا گو کہ انہوں نے کوئی بہت بڑی پرفارمنس نہیں دی لیکن جو بھی کارکردگی دکھائی وہ بہتر رہی ہے۔

شاہد آفریدی نے ورلڈ ٹوئنٹی ٹوئنٹی کا ذکر کرتے ہوئے کہا کہ سیمی فائنل اور فائنل جیسے دو بڑے موقعوں پر ان کی بیٹنگ پاکستان کی جیت میں کام آئی۔ یہ جیت اس لیے بھی ضروری تھی کہ پاکستان میں انٹرنیشنل کرکٹ نہ ہونے کے سبب شائقین مایوس تھے اور یہ جیت ان کے چہروں پر مسکراہٹ لے آئی۔

یونس خان اور شاہد آفریدی کے علاوہ سابق ہاکی اولمپئن خواجہ ذکاء الدین کو بھی صدارتی تمغہ برائے حسن کارکردگی سے نوازا گیا ہے۔ پرائڈ آف پرفارمنس ایوارڈ پانے والوں میں سابق باکسر لال سعید اور بلوچستان میں کھیلوں کے فروغ کے لیے کام کرنے والے عطاء محمد کاکڑ بھی شامل ہیں۔

پاکستانی ہاکی ٹیم کے سابق کپتان اصلاح الدین کو ستارۂ امتیاز کے لئے منتخب کیا گیا ہے۔ ان کی کپتانی میں پاکستان نے 1978 میں عالمی کپ جیتا تھا جبکہ شفقت رانا (کرکٹ) فیصل محمود ( تائی کانڈو) اور طارق محمود (گالف) کو تمغہ امتیاز دیا گیا ہے۔

اسی بارے میں