ایشیا کپ: منگل سے سری لنکا میں شروع

دسواں ایشیا کپ کرکٹ ٹورنامنٹ منگل سے سری لنکا کے شہر دمبولا میں شروع ہو رہا ہے۔

فائل فوٹو، شاہد آفریدی
Image caption کپتان شاہد آفریدی ٹیم کو جیت کی راہ پر دیکھنے کے شدت سے آرزومند دکھائی دیتے ہیں

ٹورنامنٹ میں سری لنکا، بھارت، پاکستان اور بنگلہ دیش کی ٹیمیں شریک ہیں۔

رانگیری انٹرنیشنل سٹیڈیم میں افتتاحی میچ میزبان سری لنکا اور پاکستان کے درمیان کھیلا جائے گا۔

سری لنکن کپتان کمارسنگاکارا جو اپنے ایک اور سینئر ساتھی مہیلا جے وردھنے کے ساتھ زمبابوے میں کھیلی گئی سہہ فریقی ون ڈے سیریز آرام کی غرض سے نہیں کھیلے تھے تازہ دم ہو کر ایشیا کپ میں جیت کی ہیٹ ٹرک مکمل کرنے کے عزم کے ساتھ میدان میں اتریں گے۔

سری لنکا نے اب تک چار مرتبہ ایشیا کپ جیتا ہے جن میں دو ہزار چار اور دو ہزار آٹھ میں مسلسل کامیابیاں بھی شامل ہیں۔

Image caption سری لنکا نے اب تک چار مرتبہ ایشیا کپ جیتا ہے

سری لنکن ٹیم اپنے ہوم گراؤنڈ پر یہ ٹورنامنٹ جیتنے کے لیے فیورٹ ہے۔ اس نے گزشتہ دنوں زمبابوے میں بھارت اور زمبابوے کےساتھ کھیلی گئی ون ڈے سیریز بھی جیتی ہے۔

سنگارکارا، جے وردھنے، تلکارتنے دلشان ، کاپوگدیرا اور سماراویرا جیسے ورلڈ کلاس اور فارم میں دکھائی دینے والے بیٹسمینوں کی موجودگی میں سری لنکن ٹیم کسی بھی بولنگ کے خلاف بڑا سکور کرنے کی بھرپورصلاحیت رکھتی ہے۔

نچلے نمبروں پر اُسے اینجیلو میتھیوز کی شکل میں کارآمد بیٹسمین ملا ہے جبکہ کولوسیکرا، مالنگا میتھیوز اور مرلی دھرن پر مشتمل اس کا بولنگ اٹیک بھی متوازن ہے۔

مرلی دھرن ایشیا کپ کے مقابلوں میں سب سے زیادہ ستائیس وکٹیں حاصل کرنے والے بولر ہیں۔

فٹنس مسائل سے چھٹکارہ پاکر آل راؤنڈر فرویز معروف بھی ٹیم میں واپس آئے ہیں۔

گزشتہ ایشیا کپ کے ہیرو اجانتھا مینڈس حیرت انگیز طور پر ٹیم میں جگہ نہیں بناسکے ہیں جسے چیف سلیکٹر اروندا ڈی سلوا حکمت عملی کا حصہ قرار دیتے ہیں۔

Image caption ٹیم میں شعیب ملک اور شعیب اختر کی واپسی ہوئی ہے

پاکستانی ٹیم اپنے اندرونی تنازعات پیچھے چھوڑ کر سری لنکا آئی ہے اور کپتان شاہد آفریدی ٹیم کو جیت کی راہ پر دیکھنے کے شدت سے آرزومند دکھائی دیتے ہیں۔

ٹیم میں شعیب اختر اور شعیب ملک کی واپسی ہوئی ہے جو پچھلے کچھ عرصے سے کرکٹ بورڈ کی ’گُڈ بُکس‘ میں نہیں رہے تھے لیکن کوچ وقار یونس کا خیال ہے کہ پاکستانی کرکٹ کا مستقبل اب نوجوان کھلاڑیوں کے ہاتھوں میں ہے۔ ٹیم میں شاہ زیب حسن کے علاوہ دو نئے کھلاڑی اسد شفیق اور عمر امین شامل کیے گئے ہیں۔

شاہد آفریدی حریف بیٹنگ کو قابو میں کرنے کے لیے شعیب اختر، محمد آصف، محمد عامر اور سعید اجمل سے توقعات وابستہ رکھے ہوئے ہیں جبکہ ایک بڑے سکور کے لیے ٹیم ان کے علاوہ سلمان بٹ، عمران فرحت اور شعیب ملک کی طرف دیکھے گی۔

Image caption بھارتی ٹیم میں کپتان مہندر سنگھ دھونی، گوتم گمبھیر، وریندر سہواگ اور ہربھجن سنگھ کی واپسی ہوئی ہے

ٹورنامنٹ میں شریک بھارتی ٹیم میں کپتان مہندر سنگھ دھونی، گوتم گمبھیر، وریندر سہواگ اور ہربھجن سنگھ کی واپسی ہوئی ہے جو زمبابوے میں کھیلی گئی ون ڈے سیریز میں شامل نہیں تھے اور ان کی غیرموجودگی میں بھارتی ٹیم زمبابوے سے دو بار ہار کر فائنل میں نہ پہنچ سکی۔

مہندر سنگھ دھونی ایشیا کپ کو ورلڈ کپ کی تیاری کے باقاعدہ آغاز سے تعبیر کرتے ہیں اور ان کا خیال ہے کہ اس ٹورنامنٹ سے ٹیم کا کامبنیشن تشکیل دینے میں مدد ملے گی۔

بنگلہ دیشی ٹیم انگلینڈ کا دورہ کر کے آئی ہے جس میں سوائے تمیم اقبال کی لارڈز پر سنچری کے اس نے کوئی قابل ذکر کارکردگی نہیں دکھائی لیکن ایشیائی وکٹوں پر وہ حریف ٹیموں کو حیران کرسکتی ہے۔

بھارت اور بنگلہ دیش کے درمیان میچ سولہ جون کو کھیلا جائے گا۔

اٹھارہ جون کو بنگلہ دیش اور سری لنکا کی ٹیمیں مد مقابل ہونگی۔

انیس جون کو پاکستان اور بھارت کا میچ ہے۔

اکیس جون کو پاکستانی ٹیم بنگلہ دیش کا مقابلہ کرے گی۔

بائیس جون کو آخری لیگ میچ سری لنکا اور بھارت کے درمیان کھیلا جائے گا۔

ایشیا کپ کی فاتح ٹیم کا فیصلہ چوبیس جون کو کھیلے جانے والے فائنل میں ہوگا۔

اسی بارے میں

متعلقہ انٹرنیٹ لنکس

بی بی سی بیرونی ویب سائٹس کے مواد کا ذمہ دار نہیں