آخری وقت اشاعت:  پير 12 جولائ 2010 ,‭ 14:30 GMT 19:30 PST

یوگینڈا:چوہہتر فٹبال شائقین ہلاک

اس مواد کو دیکھنے/سننے کے لیے جاوا سکرپٹ آن اور تازہ ترین فلیش پلیئر نصب ہونا چاہئیے

ونڈوز میڈیا یا ریئل پلیئر میں دیکھیں/سنیں

یوگینڈا میں پولیس نے کہا ہے کہ دارالحکومت کمپالا میں دو بم حملوں میں چوہہتر لوگ ہلاک ہو گئے ہیں۔ پولیس نے خدشہ ظاہر کیا کہ دھماکے کے پچھے صومالیہ کی مسلمان شدت پسندوں کا ہاتھ ہے۔

پولیس نے کہا ہے کہ حملے ایک رگبی کلب اور ایک ریستوران میں ہوئے جہاں لوگ فٹبال کا میچ دیکھ رہے تھے۔ انہوں نے کہا کہ یہ واضح نہیں کہ حملے کیسے کیے گئے۔

تاہم پولیس کے انسپکٹر جنرل نے کہا ہے کہ ’بم حملوں کا نشانہ یقینی طور پر فٹبال میچ دیکھنے والوں کا ہجوم تھا‘۔

ماضی میں صومالی شدت پسند کمپالا میں حملوں کی دھمکی دیتے رہے ہیں۔ یوگینڈا اور برونڈی کے پانچ ہزار فوجی صومالیہ کے دارالحکومت موگادیشو میں تعینات ہیں۔یہ فوجی وہاں کی عبوری حکومت کی مدد کر رہے ہیں۔

زخمی عورت

صومالیہ میں تعینات غیر ملکی فوجیوں کا وقتاً فوقتاً صومالی شدت پسندوں سے ٹکراؤ ہوتا رہتا ہے جو صومالیہ کے زیادہ تر جنوبی اور وسطی حصوں پر قابض ہیں۔

انسپکٹر جنرل نے حملوں کے لیے اسباب گروپ پر شبہہ ظاہر کیا۔ اگر یہ بات سچ ہے تو یہ پہلا موقع ہوگا کہ اس گروپ نے صومالیہ سے باہر حملہ کیا ہے۔

موگادیشو میں الشباب کے ایک کمانڈر نے کہا کہ انہیں یوگینڈا میں ہونے والے حملوں سے خوشی ہوئی ہے۔ تاہم انہوں نے اس بات کی تردید یا تصدیق کرنے سے انکار کر دیا کہ ان حملوں کے پیچھے ان کی تنظیم کا ہاتھ ہے۔

امریکہ صدر براک اوباما نے ان حملوں کی مذمت کی اور انہیں بزدلانہ فعل قرار دیا۔ ان کی طرف سے جاری ہونے والے ایک بیان میں کہا گیا ہے کہ وہ یوگینڈا کی حکومت کی مدد کرنے کے لیے تیار ہیں۔ کمپالا میں امریکی سفارتخانے نے تصدیق کی ہے کہ ہلاک ہونے والوں میں ایک امریکی شہری بھی شامل تھا۔

[an error occurred while processing this directive]

BBC navigation

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔