فالو آن کے بعد بھارت کی خراب شروعات

Image caption مرلی دھرن کو آٹھ سو وکٹیں لینے کے ہدف کو پورا کرنے کے لیے مزید تین وکٹیں درکار ہیں

گال ٹیسٹ میچ کے چوتھے روز بھارت کی ٹیم سری لنکا کے پانچ سو بیس رنز کے جواب میں صرف دو سو چھہتر رن ہی بنا سکی جس کی وجہ سے اسے فالو آن کا سامنا کرنا پڑا۔

اس کی دوسری اننگ کا آغاز بھی اچھا نہیں رہا اور بغیر کوئی رن بنائے ہی سلامی بلے باز گوتم گمبھیر لست ملنگا کی بول پر آؤٹ ہوگئے۔ ان کا کیچ وکٹ کیپر سنگاکارا نے پکڑا۔

تھوڑی دیر بعد ہی وریندر سہواگ جو اچھا کھیل رہے تھے وہ بھی تیس رن بناکر پویلین واپس چلے گئے۔ ایک بار پھر وہ ویلیگیدرا کی بال پر ہی آؤٹ ہوئے۔

میچ کا تفصیلی سکور کارڈ

اس کے بعد سچن تندولکر اور راہول ڈریوڈ نے ٹیم کو سہارا دیا۔ ڈریوڈ چوالیس رنز بنا کر ملینگا کی گیند پر آؤٹ ہوئے۔ اس وقت ٹیم کا مجموعی سکور ایک سو اکسٹھ رنز تھا۔

چوتھے آؤٹ ہونے والے کھلاڑی تندولکر تھے جو چوراسی رنز بنا کر ملینگا کی گیند پر آؤٹ ہوئے۔

چوتھے روز کے اختتام پر بھارت نے اپنی دوسری اننگ میں پانچ وکٹوں کے نقصان پر ایک سو اکیاسی رنز بنائے تھے۔

اس سے پہلے پہلی اننگ میں بھارتی ٹیم کو مشکل میں ڈالنے والے سری لنکا کے پھرکی گیند باز مرلی دھرن تھے جنہوں نے پانچ وکٹیں حاصل کی ہیں۔ انہوں نے کل سترہ اوور پھینکے اور ترسٹھ رنز دیکر یہ کارنامہ انجام دیا۔

مرلی دھرن کا یہ آخری ٹیسٹ میچ ہے اور اپنے آٹھ سو کی وکٹوں کے ہدف میں وہ اب صرف تین رن پیچھے ہیں۔

اس سے قبل بھارتی بلے باز وریندر سہواگ نے اپنی سنچری مکمل کی لیکن ایک سو نو رن بنانے کے بعد وہ ویلگیڈرا کی بال پر آؤٹ ہو گئے۔ یواراج سنگھ نے پچپن رن بنائے لیکن باقی کوئی دوسرا کھلاڑی نصف سنچری تک نہیں پہنچ سکا۔

تیسرے روز دوپہر بعد سری لنکا نے آٹھ وکٹ کے نقصان پر پانچ سو بیس رنز بنانے کے بعد اپنی پہلی باری کا اعلان کر دیا تھا۔ آٹھویں وکٹ ملنگا کی گری جو چونسٹھ رن بنا کر آؤٹ ہوئے تھے۔

بلے باز ہیرات اپنی نصف سنچری مکمل کرکے اسّی کے ذاتی سکور پر کھیل رہے تھے۔ سری لنکا نے ٹاس جیت کر بھارت کے خلاف پہلے بیٹنگ کر نے کا فیصلہ کیا تھا لیکن پیر کے روز بارش کی وجہ سے کھیل شروع نہیں ہو سکا تھا۔

اس سے پہلے اتوار کو سری لنکا نے ٹیسٹ میچ کے پہلے روز دو وکٹوں کے نقصان پر دو سو چھپن رنز بنائے تھے۔

سنگاکارا نے بارہ چوکوں کی مدد سے ایک سو تین رنز بنائے اور سہواگ کی گیند پر کیچ آؤٹ ہوئے۔ اوپنر پرانوینتنا نے اپنی سنچری مکل کی تھی۔ انہوں نے ایک سو گیارہ رنز سکور کیے۔ میچ بارش کی وجہ سے مقررہ وقت سے پہلے ہی ختم ہوگیا تھا۔

بھارت کی طرف سے ایشانت شرما نے تین اور نئےگیند باز متھن نے بھی تین وکٹیں حاصل کی ہیں جبکہ ایک وکٹ سہواگ کو ملی ہے۔

ٹیسٹ اور ایک روزہ میچوں میں سب سے زیادہ وکٹیں حاصل کرنے والے سری لنکن سپنرمرلی دھرن نے ٹیسٹ کرکٹ سے ریٹائرمنٹ کے فیصلے کے بعد اپنا آخری ٹیسٹ میچ کھیل رہے ہیں۔

سری لنکا کے باؤلر، مرلی دھرن کو ٹیسٹ میچوں میں سب سے زیادہ وکٹیں لینے کا اعزاز حاصل ہے تاہم انہیں آٹھ سو وکٹیں لینے کے ہدف کو پورا کرنے کے لیے مزید آٹھ وکٹیں درکار ہیں۔

مرلی کا ٹیسٹ کرکٹ سے ریٹائرمنٹ کا فیصلہ

اڑتیس سالہ مرلی دھرن، پانچ روزہ ٹیسٹ میچوں سے ریٹائرمنٹ کے بعد امید ہے کہ ایک روزہ انٹرنیشنل میچ کھیلتے رہیں گے۔ مرلی دھرن نے ریٹائرمنٹ کا اعلان رواں ماہ کیا تھا۔

اسی بارے میں