’کھلاڑی مظہر کی سرگرمیوں سے لاعلم تھے‘

تفضل رضوی سلمان بٹ کے ہمراہ
Image caption پولیس تینوں کرکٹرز کو دوبارہ طلب کرسکتی ہے:تفضل رضوی

پاکستان کرکٹ بورڈ کے قانونی مشیر تفضل حیدر رضوی کا کہنا ہے کہ پاکستانی کرکٹرز کو مظہر مجید کے بارے میں قطعاً اندازہ نہیں تھا کہ اس کی سرگرمیاں مشکوک یا غیر قانونی ہوسکتی ہیں اور وہ اسے صرف اپنے ایجنٹ کے طور پر جانتے تھے۔

بی بی سی اردو کے عبدالرشید شکور سے خصوصی گفتگو کے دوران تفضل حیدر رضوی نے کہا کہ سلمان بٹ، محمد آصف اور محمد عامر نے لندن پولیس کی تفتیش کے دوران یہ موقف اختیار کیا کہ مظہر مجید ان کا ایجنٹ ہے جو سپانسر شپ دلانےمیں ان کی مدد کرتا رہا ہے۔ وہ یہ کام گزشتہ کئی برس سے کرتا رہا ہے اور حالیہ برسوں میں کئی کرکٹرز اس کے کنٹریکٹ پر تھے۔

تفضل حیدر رضوی نے کہا کہ ان تینوں کرکٹرز کا کہنا ہے کہ وہ قطعاً اس بات سے بےخبر تھے کہ مظہرمجید کی سرگرمیاں غیر قانونی اور مشکوک ہو سکتی ہیں کیونکہ بظاہر وہ بہت مالدار شخص ہے جس کا اپنا فٹبال کلب بھی ہے۔

اس سوال پر کہ اگر مظہر مجید کرکٹرز کا ایجنٹ رہا ہے تو پھر ٹیم منیجر یاورسعید نے مبینہ طور پر کھلاڑیوں کو مظہر اور اس کے بھائی سے دور رہنے کی ہدایت کیوں کی تھی، تفضل حیدر رضوی نے کہا کہ منیجمنٹ ہر دورے سے قبل اپنے کرکٹرز کو متنبہ کرتی ہے کہ جس شخص کے بارے میں انہیں علم نہیں اس سے دور رہیں، یہ آئی سی سی کے ضابطہ اخلاق کے تحت کیا جاتا ہے لیکن کرکٹرز کایہ کہنا ہے کہ مظہر مجید تو کئی برس سے مختلف کھلاڑیوں کا ایجنٹ رہا ہے۔

تفضل حیدر رضوی نے کرکٹرز کے کمروں سے برآمد ہونے والی کرنسی کے بارے میں سوال پر کہا کہ ایجنٹ حضرات کرکٹرز کو اچھے معاوضوں پر مختلف اسپانسرشپ کی ڈیل کرواتے ہیں۔ ان کے مطابق ’برطانیہ میں پاکستانی کمیونٹی چاہتی ہے کہ کرکٹرز ان کی آؤٹ لیٹس پر آئیں تاکہ ان کی اہمیت میں اضافہ ہو تو ایجنٹ اس طرح کی سرگرمیوں سے کھلاڑیوں کو سپانسرشپ دلواتے رہتے ہیں تاہم میڈیا کرکٹرز کے پاس سے برآمد ہونے والی رقم بڑھا چڑھا کر پیش کر رہا ہے‘۔

کرکٹرز اور مظہر مجید کے درمیان موبائل کالز اور ایس ایم ایس کے بارے میں سوال پر بھی تفضل حیدر رضوی نے کہا کہ یہ اس لیے غیرمعمولی بات نہیں کیونکہ کھلاڑی اپنے ایجنٹ سے مستقل رابطے میں رہتے ہیں اور جہاں تک کسی خاص ایس ایم ایس کاتعلق ہے جیسا کہ میڈیامیں آرہا ہے تو پولیس نے ابھی تک انہیں اس بارے میں آگاہ نہیں کیا۔

پاکستان کرکٹ بورڈ کے لیگل ایڈوائزر نے کہا کہ پولیس تینوں کرکٹرز کو دوبارہ طلب کرسکتی ہے لیکن ابھی تک ان کے خلاف کوئی فرد جرم عائد نہیں ہوئی ہے ان کرکٹرز نے ابھی تک پولیس کے تمام سوالات کا تسلی بخش جواب دیا ہے۔

خیال رہے کہ لندن پولیس نے جمعہ کو سپاٹ فکسنگ کے الزام میں محمد عامر، محمد آصف اور سلمان بٹ کو تھانے میں بلا کر ان سے پوچھ گچھ کی تھی۔ تاہم تفتیش کے باوجود پولیس نے ابھی تک ان تینوں پاکستانی کھلاڑیوں پر باضابطہ الزام عائد نہیں کیا ہے تاہم کرکٹ کی گورننگ باڈی، آئی سی سی انہیں عارضی طور پر معطل کر چکی ہے۔

اسی بارے میں