کامن ویلتھ میں پاکستان کا پہلا میڈل

اظہر حسین
Image caption اظہر حسین نے مقابلوں میں پاکستان کو پہلا میڈل دلوایا ہے

دلّی میں جاری دولتِ مشترکہ کھیلوں میں پاکستان کے پہلوان اظہر حسین نے گریکو رومن کشتی میں پچپن کلوگرام کی کیٹیگری میں چاندی کا تمغہ حاصل کر لیا ہے۔

یہ ان کھیلوں میں پاکستان کا پہلا تمغہ ہے۔

بدھ کو منعقدہ فائنل میں پاکستانی پہلوان کا مقابلہ بھارت کے راجند کمار سے تھا جنہوں نے اظہر حسین کو شکست دے کر بھارت کو آج کے دن کا پانچواں طلائی تمغہ دلوایا۔

اس سے قبل گریکو رومن کشتی کے دو مقابلوں سے پاکستان نے اپنے پہلوانوں کے نام واپس لے لیے تھے جن میں سے ایک مقابلہ ہندوستان کے خلاف تھا۔ اس کے بعد ہندوستانی پہلوان کو واک اوور سے فاتح قرار دے دیا گیا۔

کشتی ٹیم کے مینجر چودہری اصغر نے بی بی سی کو بتایا کہ انعام الحق اور محمد سلمان کو اکھاڑے میں نہ اتارنےکا مقصد یہ تھا کہ وہ فری سٹائل کشتی پر توجہ مرکوز کر سکیں جس میں ان کے میڈل حاصل کرنے کے امکانات زیادہ روشن ہیں۔

چودھری اصغر نے زور دے کر کہا کہ یہ کہنا درست نہیں ہوگا کہ انعام الحق مقابلے کے لیے نہیں پہنچے۔ وہ آٹھ تاریخ کو فری سٹائل کے مقابلوں میں حصہ لیں گے۔

ان کا کہنا تھا کہ ’ایسا نہیں ہے کہ انعام الحق پہنچے ہی نہیں، جیسا کہ کہا جا رہا ہے۔ میں نے انہیں حصہ نہیں لینے دیا۔ گریکو رومن میں ہماری شرکت آپشنل تھی۔۔۔اور ہم نے متعلقہ عہدیداران کو حسب قواعد اپنے فیصلے سے مطلع کر دیا تھا‘۔

انہوں نے کہا کہ ’گریکو رومن میں ہم چانس لے رہے تھے لیکن اس طرز کے مقابلوں میں مقابلہ بہت سخت تھا۔ بس یہ بات تھی، ہمارے طرف سے کوئی مسئلہ نہیں ہے۔‘

یہ پوچھے جانے پر کہ اگر واک اوور دے دیا گیا تھا تو پھر ہندوستانی پہلوان اکھاڑے میں کیوں آیا اور انعام الحق کا نام کیوں پکارا گیا، چودھری اصغر نے کہا کہ ضوابط کہ مطابق پہلوان کو اکھاڑے میں آنا پڑتا ہے جس کے بعد ریفری ہاتھ اٹھا کر انہیں فاتح قرار دیتا ہے۔

دولتِ مشترکہ کھیلوں میں پاکستانی دستے کی اب تک کی کاکردگی کافی مایوس کن رہی ہے اور اظہر حسین کے علاوہ صرف ہاکی ٹیم ہی سکاٹ لینڈ کے خلاف اپنا پہلا میچ جیت پائی ہے۔ سکواش اور ٹینس میں بھی ابھی تک کھلاڑیوں کو مایوسی ہی ہوئی ہے۔ منگل کو ٹینس کے کھلاڑی عقیل خان اور اعصام الحق بھی اپنا میچ ہار گئے تھے۔

اسی بارے میں