ڈی ویلیئرز کا سو، تنویر کی چار وکٹ

Image caption ژاک کیلس نے اپنی سینتیسویں ٹیسٹ سنچری مکمل کی ہے

جنوبی افریقہ اور پاکستان کے درمیان ابوطہبی میں دوسرے ٹیسٹ کے پہلے دن جنوبی افریقہ نے ژاک کیلس اور اے بی ڈی ویلیئرز کی شاندار سنچریوں کی مدد سے تین سو گیارہ رن بنالیے ہیں اور اس کے پانچ کھلاڑی آؤٹ ہوئے ہیں۔

میچ کا تفصیلی سکور کار

میچ کی تصاویر

پاکستان کی طرف سے اپنی زندگی کا پہلا ٹیسٹ میچ کھیلنے والے تیز رفتار بولر تنویر احمد نے چار کھلاڑیوں کو آؤٹ کیا۔

اس میچ کا آغاز ہی انتہائی ڈرامائی انداز میں ہوا جب دوسرے اوور میں تنویر احمد نے پیٹرسن کو آؤٹ کر دیا۔ پیٹرسن کا کیچ سلپ میں کپتان مصباح الحق نے لیا۔ اس وقت جنوبی افریقہ کا سکور صرف ایک رن تھا۔

دوسرے ٹسیٹ کا پہلا دن ایمپائرنگ کے لحاظ سے بھی کافی دلچسپ رہا۔ ٹی وی کیمروں کے ری پلیز نے ایمپائرز کے کئی فیصلوں پر سوالیہ نشان لگا دیے۔

جنوبی افریقہ کے آؤٹ قرار دیئے جانے والے دوسرے کھلاڑی ہاشم آملہ تھے۔ ان کو بھی ووکٹوں کے پیچھے کیچ آؤٹ قرار دیا گیا جب ٹی وی ری پیلز پر محسوس ہوا کہ گیند ان کے بلے سے دور سے گزری تھی۔

ہاشم آملہ تو بدقسمتی سے ایک ایسی گیند پر آؤٹ قرار دیئے گئے جو بظاہر ان کے بلے کو لگی ہی نہیں تھی لیکن جنوبی افریقہ کی تیسری وکٹ کپتان سمتھ کی گری وہ بھی کیچ آؤٹ ہوئے۔ اس مرتبہ گیند صاف طور پر بلے کو چھو کر عدنان اکمل کے دستانوں میں گئی تھی۔

تین ووکٹوں کے گرنے کے بعد کیلس اور ڈی ویلیئرز میدان میں یکجا ہوئے۔ ان دونوں نے زبردست بلے بازی کا مظاہرہ کیا اور دیکھتے ہی دیکھتے جنوبی افریقہ کے سکور دو سو بارہ رن پر پہنچا دیا۔

اس دوران پاکستان بولروں کی طرف سے کئی ایک بڑی زور دار اپیلیں مسترد کر دی گئیں۔ ایک اپیل تو وکٹوں کے پیچھے کیچ کی گئی۔ اس مرتبہ ٹی وی پر بال کے بلے کو چھونے کی آواز بھی آئی لیکن سمیع کی گیند پر ہونے والی یہ اپیل مسترد قراد دی گئی۔

Image caption تنویر احمد نے ٹیسٹ کرکٹ میں اپنے پہلے ہی اوور میں وکٹ حاصل کی

چائے کے وقفے کے فوراً بعد تنویر احمد کی اٹھتی ہوئی گیند کو ژاک کیلس سمجھ نہیں پائے اور گیند ان کے بدن کو چھو کر وکٹوں میں جا لگی۔ اس وقت ژاک کیلس کا انفرادی سکور ایک سو پانچ رن تھا۔

ٹیسٹ میچوں میں ژاک کیلس کی یہ سینتیسویں سنچری تھی اور وہ اس اننگز کے دوران اس وقت خوش قسمت رہے جب ایمپائر نے محمد سمیع کی ایک ایسی ایل بی ڈبلیو اپیل مسترد کر دی جس میں ری پلے کے مطابق کیلس آؤٹ تھے۔

ابوظہبی کے شیخ زاید سٹیڈیم میں کھیلے جا رہے اس میچ میں پاکستان نے ٹاس جیت کر پہلے فیلڈنگ کا فیصلہ کیا تھا۔۔

جنوبی افریقہ نے اس میچ کے لیے اپنی ٹیم میں کوئی تبدیلی نہیں کی جبکہ پاکستانی ٹیم میں عمر اکمل، وہاب ریاض اور سعید اجمل کی جگہ محمد سمیع، تنویر احمد اور اسد شفیق کو شامل کیا گیا ہے۔یہ تنویر احمد اور اسد شفیق کا پہلا ٹیسٹ میچ ہے۔

دو میچوں کی سیریز کا پہلا ٹیسٹ میچ دبئی میں کھیلا گیا تھا جو بےنتیجہ رہا تھا۔

جنوبی افریقہ کی ٹیم: گریم سمتھ، الویرو پیٹرسن، ہاشم آملہ، ژاک کیلس ، اے بی ڈیویلیئرز ، ایشول پرنس، مارک باؤچر، یوان بوتھا، پال ہیرس، ڈیل سٹین، اور مورکل۔

پاکستان کی ٹیم: توفیق عمر، محمد حفیظ، یونس خان، اظہر علی، مصباح الحق، اسد شفیق، عدنان اکمل، عمر گل، عبد الرحمن، محمد سمیع اور تنویر احمد۔

اسی بارے میں