آسٹریلوی بیٹنگ ڈگمگانے لگی

Image caption عثمان خواجہ نے اپنے ٹیسٹ کیریئر کا آغاز پر اعتماد انداز میں کیا

ایشز سیریز کے پانچویں ٹیسٹ کے پہلے دن کھیل کے اختتام پر آسٹریلیا نے اپنی پہلی اننگز میں چار وکٹوں کے نقصان پر ایک سو چونتیس رنز سکور کیے ہیں۔

سڈنی میں جاری میچ میں پہلے دن کا کھیل چار مرتبہ بارش کی وجہ سے روکا گیا اور دن میں صرف انسٹھ اووز کا کھیل ہوسکا۔

تفصیلی سکور کارڈ

آسٹریلوی کپتان مائیکل کلارک نے ٹاس جیت کر پہلے بیٹنگ کا فیصلہ کیا تو آسٹریلوی اوپنرز نے ٹیم کو پچپن رنز کا آغاز فراہم کیا۔

آسٹریلیا کے آؤٹ ہونے والے پہلے کھلاڑی فلپ ہیوز تھے جنہیں ٹریملٹ نے آؤٹ کیا۔ فلپ کی جگہ اپنا پہلا ٹیسٹ کھیلنے والے پاکستانی نژاد آسٹریلوی بیٹسمین عثمان خواجہ میدان میں آئے اور سینتیس رنز کی پر اعتماد اننگز کھیل کر آؤٹ ہوئے۔

سڈنی کی تیز پیچ اور ابر الود موسم کی سخت بولنگ کنڈیشنز میں نوجوان عثمان خواجہ نے عمدہ بیٹنگ اور ماہرین کی تعریفیں سمیٹتے رہے۔ ان کے علاوہ شین واٹسن نے پینتالیس رنز بنائے جبکہ کپتان مائیکل کلارک صرف چار رن بنا سکے۔

Image caption عثمان خواجہ آسٹریلوی کپتان مائیکل کلارک کے ہمراہ

انگلینڈ کی جانب سے بریسنن نے دو جبکہ ٹریملٹ اور سوان نے ایک ایک وکٹ لی ہے۔

آسٹریلوی ٹیم نے گزشتہ میچ کھیلنے والی ٹیم میں دو تبدیلیاں کیں اور بلے باز عثمان خواجہ اور سپنر مائیکل بیئر کو ٹیم میں شامل کیا جبکہ انگلینڈ نے اپنی ٹیم میں کو ئی تبدیلی نہیں کی ہے۔ہے۔

مائیکل کلارک اس میچ میں آسٹریلیا کی کپتانی کی فرائض سرانجام دے رہے ہیں۔ ان کا کہنا ہے کہ ’ آخری ٹیسٹ میں ہمارے لیے ابھی بہت کچھ باقی ہے‘۔ ان کا کہنا تھا کہ ’ سب سے کم جو ہم کر سکتے ہیں وہ یہ کہ آسٹریلیا کی جم کر مقابلہ کرنے کی صلاحیت دکھائیں جو کہ اس ڈریسنگ روم میں موجود ہر شخص میں ہے‘۔

انگلش ٹیم اگرچہ میلبرن ٹیسٹ جیت کر ایشز ٹرافی پر اپنا قبضہ قائم رکھنے میں کامیاب رہی ہے تاہم اگر وہ چوبیس برس میں آسٹریلیا میں کوئی ٹیسٹ سیریز جیتنے والی پہلی انگلش ٹیم بننا چاہتی ہے تو اسے سڈنی ٹیسٹ کم از کم برابر کرنا ہوگا۔

ایشز سیریز میں اب تک انگلینڈ نے دو میچوں میں آسٹریلیا کو اننگز کی شکست سے دوچار کیا ، آسٹریلیا نے ایک میچ جیتا جبکہ سیریز کا پہلا میچ بےنتیجہ رہا تھا۔

اسی بارے میں