’ڈی آر ایس کا استعمال لازمی نہیں‘

تصویر کے کاپی رائٹ BBC World Service

کرکٹ کی گورننگ باڈی انٹرنیشنل کرکٹ کونسل نے کہا ہے کہ متنازعہ ڈسیژین ریویو سسٹمم (ڈی آر ایس) کا استعمال آئندہ دو طرفہ سیریز میں لازمی نہیں ہو گا۔

تاہم اس سسٹم کا استعمال انٹرنیشنل کرکٹ کونسل (آئی سی سی) کے تمام بین الاقوامی مقابلوں میں ہو گا جس کے تحت کسی بھی ٹورنامنٹ میں شریک تمام ممالک ٹیسٹ اور دیگر بین الاقوامی مقابلوں میں اس سسٹم کو استعمال کرنے کی پابند ہوں گی۔

آئی سی سی بورڈ نے اپنے ایک اجلاس میں سنہ دو ہزار پندرہ میں منعقد ہونے والے کرکٹ کے عالمی کپ کے لیے کوالیفائینگ سسمٹم کی منظوری بھی دی۔

آئی سی سی کی جانب سے سنہ دو ہزار تیرہ میں مجوزہ ٹیسٹ کرکٹ چیمپئین شپ کے انعقاد کے بارے میں ابھی تک شبہات پائے جاتے ہیں۔

واضح رہے کہ ڈی آڑ ایس سسٹم کو سنہ دو ہزار آٹھ میں پہلی بار آزمائشی طور متعارف کرایا گیا تھا لیکن اپنے نفاذ کے ساتھ یہ متنازعہ ہو گیا اور کرکٹ کھیلنے والے کچھ ممالک جن میں بھارت شامل ہے اس سسٹم کی مخالفت کی تھی۔

انگلینڈ اور بھارت کے درمیان ختم ہونے والی حالیہ ٹیسٹ سیریز میں اس سسٹم کو کم حد تک استعمال کیا گیا جس کے مطابق دونوں ٹیمیں ایل بی ڈبلیو کے فیصلوں کے خلاف سوال پوچھ نہیں سکتے تھے۔

واضح رہے کہ پاکستان کرکٹ بورڈ نے منگل کو اعلان کیا تھا کہ سری لنکا اور انگلینڈ کے خلاف یو اے ای میں کھیلی جانے والی سریز میں ڈی آر ایس سسٹم کو استعمال کیا جائے گا۔

اس سے پہلے آئی سی سی نے اعلان کیا تھا کہ وہ ڈی آر ایس کو بین الاقوامی کرکٹ میں استعمال کرنے پر غور کر رہی ہے تاہم اب اس نے یہ فیصلہ منسوخ کر دیا ہے۔

آئی سی سی کے چیف ایگزیکٹو ہارون لوگارٹ نے کہا ہے کہ ڈی آر ایس کے استعمال نے امپائروں کے فیصلوں کو پانچ فیصد تک درست کیا ہے۔

انہوں نے کہا کہ وہ اس سسٹم کو مذید بہتر بنانے کے لیے کام جاری رکھیں گے۔

اسی بارے میں