’سٹے بازوں کی بے ضرر پیشکش‘

تصویر کے کاپی رائٹ BBC World Service
Image caption آئی سی سی محمد عامر کو سدھرنے کا ایک موقع دے، راشد لطیف

پاکستان کرکٹ ٹیم کے سابق کپتان راشد لطیف کہتے ہیں کہ بک میکرز ابتدا میں کھلاڑیوں کو کبھی بھی میچ فکسنگ کی پیشکش نہیں کرتے اور نہ ہی انہیں اس کے لیے مجبور کرتے ہیں بلکہ ان کا اعتماد حاصل کرتے ہوئے بظاہر بے ضرر نظر آنے والے معاملات پر پیسہ کمانے کی ترغیب دیتے ہیں۔

راشد لطیف نے بی بی سی کو دیئے گئے انٹرویو میں کہا کہ سپاٹ فکسنگ اسکینڈل نے سولہ سال پہلے کے میچ فکسنگ قضیئے کی یاد تازہ کردی ہے جب پاکستانی ٹیم کے ایک سینیئر کھلاڑی نے انہیں پہلی بار پیشکش کی تھی کہ ایک پارٹی تیار بیٹھی ہے کہ میچ ہارے بغیر ہم اچھا خاصا پیسہ کما سکتے ہیں۔یہ پیشکش ایک سیشن میں بک میکر کے بتائے گئے مقررہ رنز بنانے اور کبھی کبھار جان بوجھ کر وکٹ گنوانے سے متعلق تھی جو ظاہر ہے انہیں قبول نہ تھی۔

راشد لطیف کا کہنا ہے کہ آج جب وہ سپاٹ فکسنگ کا معاملہ دیکھتے ہیں تو وہ بھی کسی میچ کو فکس کرنے کا نہیں ہے بلکہ اس کا تعلق بظاہر بے ضرر نظرآنے والی تین نوبالز کا ہے۔

نامہ نگار عبدالرشید شکور کے مطابق راشد لطیف نے کہا کہ کھلاڑیوں کے قریب آنے والا سٹے باز پہلے اپنا اعتماد حاصل کرتا ہے اور پھر وہ ایسی پیشکش کرتا ہے جو میچ ہارے بغیر پیسہ کمانے سے متعلق ہوتی ہیں۔

راشد لطیف نے کہا کہ وہ اکثر آن لائن شرطیں دیکھتے رہتے ہیں اور انہیں پتہ ہے کہ عام طور پر نوبالز اور وائیڈ بالز پر شرطیں نہیں لگتیں اور لندن کی مارکیٹ میں تو بالکل نہیں لگتیں البتہ کراچی میں رمضان کے موقع پر ہونے والی کلب کرکٹ میں نوبال اور وائیڈ بال پر شرطیں لگتی ہیں۔

راشد لطیف نے کہا کہ تین پاکستانی کھلاڑیوں کو ملنے والی سزائیں بالکل صحیح ہیں کیونکہ انہوں نے اپنے ملک اور اپنے شائقین کو دھوکہ دیا ہے۔

سابق کھلاڑی کا کہنا ہے کہ انہیں صرف محمد عامر سے ہمدردی ہے کہ انہوں نے پہلے ہی اعترافِ جرم کرلیا تھا۔

راشد لطیف کے مطابق عام طور پر کھلاڑی کرپشن کے بارے میں اپنے بورڈ اور آئی سی سی کو نہیں بتاتے اور جب پکڑے جائیں تو اعتراف نہیں کرتے لہذا عامر کو ان کی کم عمری کا فائدہ دیتے ہوئے خود کو سدھارنے کا ایک موقع دیا جانا چاہیے۔

راشد لطیف کا کہنا ہے کہ ابھی تو صرف پستول کو سزا ہوئی ہے جس نے چلائی ہے اسے تو سزا نہیں ملی۔ اگر آئی سی سی اور اس کا انٹی کرپشن یونٹ کرکٹ کو کرپشن سے پاک کرنا چاہتے ہیں تو انہیں سخت سے سخت اقدامات کرنے ہوں گے۔

اسی بارے میں