پاک بھارت کرکٹ روابط کی بحالی کی کوشش

شائقین تصویر کے کاپی رائٹ BBC World Service
Image caption ’شائقین پاک بھارت کرکٹ کی روایتی سحرانگیزی سے مزید محروم نہ ہوں‘

پاکستان کرکٹ بورڈ کے چیئرمین ذ کا اشرف دسمبر کے پہلے ہفتے میں بھارت جائیں گے جہاں وہ بھارتی کرکٹ بورڈ کے صدر سری نواسن سے اہم ملاقات کریں گے۔

ذ کا اشرف نے دبئی سے بی بی سی کو دیئے گئے انٹرویو میں کہا کہ انہوں نے پاک بھارت کرکٹ روابط کی بحالی کے لیے بھارتی کرکٹ بورڈ کے صدر کو خط لکھا تھا اور انہیں فون بھی کیا تھا انہوں نے اس کا مثبت جواب دیا ہے اور انہیں بھارت آنے کی دعوت دی ہے لہذا وہ دسمبر کے پہلے ہفتے میں بھارت جاکر ان سے ملاقات کریں گے۔

پاکستان کرکٹ بورڈ کے چیئرمین نے کہا کہ وہ چاہتے ہیں کہ پاکستان میں بین الاقوامی کرکٹ جلد بحال ہو اور وہ یہ بھی خواہش رکھتے ہیں کہ شائقین پاک بھارت کرکٹ کی روایتی سحرانگیزی سے مزید محروم نہ ہوں۔

ذ کا اشرف نے کہا کہ ہاکی، کبڈی اور دوسرے کھیلوں میں اگر پاکستان اور بھارت آپس میں کھیل سکتے ہیں تو کرکٹ میں کیا مسئلہ ہے۔

انہوں نے کہا کہ وہ بنگلہ دیش بھی جائیں گے اور بنگلہ دیش کے کرکٹ حکام کو قائل کرنے کی کوشش کرینگے کہ وہ اپنی ٹیم پاکستان بھیجیں۔

انہوں نے کہا کہ دبئی میں بنگلہ دیشی کرکٹ بورڈ کے صدر مصطفٰی کمال سے ان کی بات چیت مفید رہی ہے اور اگر بنگلہ دیشی ٹیم کے دورۂ پاکستان میں آئی سی سی کی کلیئرنس درکار ہے تو اس ضمن میں وہ آئی سی سی کو بھی سکیورٹی کی ہرممکن یقین دہانی کرانے کے لیے تیار ہیں ۔

انہوں نے کہا کہ آئی سی سی کے چیف ایگزیکٹیو ہارون لورگاٹ بھی پاکستان میں انٹرنیشنل کرکٹ دوبارہ شروع کرنے کے بارے میں پاکستان کرکٹ بورڈ کے موقف سے متفق ہیں۔

ذ کا اشرف نے آئی سی سی کی نائب صدارت کے لیے پاکستان اور بنگلہ دیش کے مشترکہ امیدوار کے بارے میں سوال پر کہا کہ یہ بات درست ہے کہ سابق چیئرمین اعجاز بٹ نے امیدوار بنگلہ دیشی ہونے سے متعلق اپنے فیصلے سے آئی سی سی کو مطلع کردیا تھا جو سابق چیئرمین کے خیال میں ایک اصولی فیصلہ تھا۔

تاہم اب چونکہ انہوں نے پی سی بی کی باگ ڈور سنبھالی ہے وہ اپنے کرکٹ بورڈ کے اراکین سے باہمی مشورے کے بعد اس بارے میں بنگلہ دیشی بورڈ سے بھی بات کریں گے کیونکہ وہ سب کو ساتھ لے کر چلنا چاہتے ہیں۔

اسی بارے میں