’گراں پری فارمولہ ریس منعقد ہو گی‘

تصویر کے کاپی رائٹ BBC World Service

بحرین کے ولی عہد شہزادہ سلمان بن حمد الخليفہ نے کہا ہے کہ مظاہروں کے باوجود اتوار کو ہونے والی گراں پری فارمولہ ون ریس منعقد ہو گی۔

انہوں نے کہا کہ ریس منسوخ کرنے سے دہشت گردوں کو حوصلہ ملے گا۔

بحرین کے ولی عہد کا کہنا ہے کہ ریس کا منعقد ہونا ملک کے معاشی حالات کے لیے بہت ضروری ہے۔

واضح رہے کہ خلیج ریاستوں میں جاری بے چینی کی وجہ سے اس ریس کو منسوخ کرنے کا مطالبہ کیا جا رہا ہے۔

بحرین میں جمعہ کو ہزاروں افراد نے اس ریس کے خلاف مظاہرہ کیا تھا۔

اس موقع پر مظاہرین نے سیاسی رہنما عبدل ہادی الخواجہ کی فوری رہائی کا بھی مطالبہ کیا۔

عبدل ہادی الخواجہ بحرین کی فوجی عدالت سے دی جانے والی سزا کے خلاف گزشتہ ستر دنوں سے جیل میں بھوک ہڑتال پر ہیں۔

گزشتہ روز بھارتی ٹیم کی گاڑیوں پر پٹرول بم پھینکے جانے کے بعد بھارتی ٹیم نے بحرین سے واپس آنے کا فیصلہ کیا تھا۔

بھارتی ٹیم ’فورس انڈیا‘ کی گاڑیوں پر اس وقت پٹرول بم پھینکے گئے جب وہ گراں پری کے ٹریک سے واپس آ رہی تھیں۔

دوسری جانب برطانیہ کے متعدد سیاستدانوں نے گراں پری فارمولہ ون ریس کو منسوخ کرنے کا مطالبہ کیا ہے۔

برطانوی وزیر اعظم ڈیوڈ کیمرون کا کہنا ہے کہ یہ صرف ایک ریس کا مسئلہ ہے تاہم لیبر پارٹی کے رہنما ملی بینڈ کا کہنا ہے کہ ریس منعقد ہونے سے ملک میں جاری ہنگاموں کے حوالے سے ایک غلط پیغام جائے گا۔

بحرین میں سیاسی بے چینی ہے اور حکومت کے خلاف مظاہروں کے سبب گزشتہ برس کار ریسنگ کا یہی مقابلہ منسوخ کرنا پڑا تھا۔

اس برس بھی بہت سی ٹیموں کو اسی بات کا خدشہ تھا لیکن کسی نے بھی اس کے خلاف کھل کر آواز نہیں اٹھائي اور حکومت نے بھی خراب حالات کے باوجود مقابلہ کرانے کا فیصلہ کیا۔

اس سے پہلے موٹر سپورٹس کی گورننگ باڈی ایف آئی اے نے کہا تھا کہ بحرین میں پائی جانے والی سیاسی بے چینی کے باجود وہاں فارمولا ون گراں پری ریس کا انعقاد پروگرام کے مطابق ہوگا۔

گزشتہ برس بحرین میں حکومت مخالف مظاہروں کی وجہ سے گراں پری ریس منسوخ کر دی گئی تھی۔ دو ہزار بارہ کی گلف ایئر ایف ون گراں پری بائیس اپریل کو مناما کے سخیر سرکٹ پر منعقد ہونی ہے۔

اسی بارے میں