شاہ رخ کے وانکھیڑے سٹیڈیم میں داخلے پر پابندی

شاہ رخ خان تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption شاہ رخ خان نے جمعرات کی شب سٹیڈیم میں اہلکاروں سے بدکلامی کی تھی

ممبئی کرکٹ ایسوسی ایشن (ایم سی اے) نے انڈین پریمئر لیگ کی ٹیم کولکتہ نائٹ رائڈرز کے مالک شاہ رخ خان کے وانکھیڑے سٹیڈیم میں داخل ہونے پر پانچ سال کے لیے پابندی عائد کر دی ہے۔

ایم سی اے کے صدر اور وفاقی وزیر ولاس راؤ دیشمکھ نے ممبئی میں ایک پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ جمعرات کی شب شاہ رخ خان نے جس انداز میں ایسوسی ایشن اور سکیورٹی اہلکاروں سے بدکلامی کی تھی اسے نظر انداز نہیں کیا جاسکتا اور ’اس کے لیے ایک سخت پیغام دینا ضروری‘ تھا۔

دوسری جانب بھارتی کرکٹ کنٹرول بورڈ کے نائب صدر اور آئی پی ایل کے کمشنر راجیو شکلا نے ٹوئٹر پر اپنے فوری رد عمل میں کہا کہ ایم سی اے صرف پابندی کی سفارش کرسکتی ہے اور حتمی فیصلہ آئی پی ایل اور بی سی سی آئی کرے گی۔

راجیو شکلا اور ولاس راؤ دیشمکھ دونوں وفاقی وزیر ہیں اور ان کا تعلق حکمران جماعت کانگریس سے ہے۔

ایم سی اے کا الزام ہے کہ جمعرات کی شب کولکتہ نائٹ رائیڈرز اور ممبئی انڈینز کے درمیان میچ کے بعد نشے کی حالت میں شاہ رخ خان نے سٹیڈیم میں اہلکاروں سے بدکلامی کی تھی کیونکہ انہیں کھیل کےمیدان پر جانے سے روکا گیا تھا۔

شاہ رخ خان کا دعویٰ ہے کہ وہ نشے میں نہیں تھے اور میچ ختم ہونے کے بعد وہ اپنے بچوں کو لینے سٹیڈیم گئے تھے۔

ان کا کہنا ہے کہ ان کے بچے میدان میں کھیل رہے تھے کہ سکیورٹی اہلکاروں نے انہیں زبردستی باہر دھکیلنے کی کوشش کی اور انہوں نے ان کے خلاف انتہائی جارحانہ رویہ اختیار کرتے ہوئے نازیبا زبان کا استعمال کیا جس کے لیے انہیں معافی مانگنی چاہیے۔

ایم سی کی شکایت پر پولیس نے اس سلسلے میں کیس درج کر لیا ہے۔

ولاس راؤ دیش مکھ کے مطابق پابندی سے متعلق قرارداد ورکنگ کمیٹی کے اجلاس میں اتفاق رائے سے منظور کی گئی۔

ایک سوال کے جواب میں کہ اتنی سخت کارروائی سے پہلے شاہ رخ خان سے ان کا موقف کیوں معلوم نہیں کیا گیا اور تمام حقائق معلوم کرنے کے لیے کوئی انکوائری کیوں نہیں کی گئی، دیشمکھ نے کہا کہ جس وقت یہ واقعہ پیش آیا اس وقت ایم سی اے کے آدھے سے زیادہ اہلکار سٹیڈیم میں موجود تھے لہذا کسی انکوائری کی ضرورت نہیں تھی۔

انہوں نے کہا کہ اگر شاہ رخ خان کو کوئی شکایت ہے تو وہ بھی پولیس سے رجوع کرسکتے ہیں۔

اس واقعہ کی آڈیو ریکارڈنگ اخبار انڈین ایکسپریس نے جاری کی ہے جس سے ظاہر ہوتا ہےکہ دونوں جانب سے سخت زبان کا استعمال ہوا لیکن ایک صحافی کی جانب سے یہ پوچھے جانے پر کہ کیا ایم سی اے کسی اہلکار کے خلاف بھی کارروائی کی جائے گی، ایسوسی ایشن کے اہلکار رنتاکر شیٹی نے کہا کہ ان کے ساتھیوں نے انتہائی ضبط سے کام لیا۔

سابق کرکٹر اور مبصر شیشر ہتن گڑی کا کہنا ہے کہ شاہ رخ خان پر پابندی کے سنگین مضمرات ہوسکتے ہیں کیونکہ وہ صرف ایک فلم سٹار ہی نہیں بلکہ ایک فرینچائز کے مالک ہیں اور وہ بی سی سی آئی سے یہ درخواست کرسکتے ہیں کہ اگر وہ سٹیڈیم میں داخل نہیں ہوسکتے تو ان کی ٹیم کے میچ کسی دوسرے میدان پر کرائے جائیں۔

کولکتہ نائٹ رائڈرز کی جانب سے ابھی کوئی ردعمل ظاہر نہیں کیا گیا ہے۔

اسی بارے میں