پہلے دن دو سنچریاں ایک نصف سنچری

تصویر کے کاپی رائٹ BBC World Service

پاکستان کے خلاف پہلے ٹیسٹ میچ میں سری لنکا نے اپنے تجربہ کار بلے بازوں تلکرتنے دلشان اور کمار سنگاکارا کی سنچریوں کی بنا پر میچ پر بالادستی حاصل کر لی ہے۔

دلشان نے ایک سو ایک رن بنا کر ٹیسٹ میچوں میں اپنی تیرویں سنچری مکمل کی جب کہ سنگاکارا اپنی انتیسویں سنچری بنا کر ناٹ آؤٹ رہے۔ یوں سری لنکا نے میچ کے پہلے دن دو وکٹوں کے نقصان پر تین سو رن بنا کر میچ پر اپنی گرفت مضبوط کر لی۔

ٹیسٹ میچوں میں سنگاکارا کی پاکستان کے خلاف اسی رن فی میچ کی اوسط ہے۔ اس میچ میں بھی انھوں نے ایک سو چورانے گیندوں پر ایک سو گیارہ رن سکور کیے اور آؤٹ نہیں ہوئے۔ انھوں نے اپنی اننگز میں تیرہ چوکے لگائے۔

سنگاکارا نے جےوردھنے کے ساتھ تیسری وکٹ کر شراکت میں ایک سو تیرہ رن بنائے۔ جے وردھنے کھیل ختم ہونے پر پچپن رن پر کھیل رہے تھے۔ اس سے قبل عمر گل کی ایک گیند پر ان کے خلاف ایل بی ڈبلیو کی زبردست اپیل ہوئی لیکن انھیں آؤٹ قرار نہیں دیا گیا۔

سنگاکارا نے ایک خطرناک رن لے کر انتیس ٹسیٹ سنچریوں کا ڈان بریڈ مین کا ریکارڈ برابر کیا۔ اس کوشش میں انھیں منہ کے بل جست لگا کر اپنی کریز تک پہنچنا پڑا۔

پاکستان نے پچاسویں اوور میں دوسری نئی گیند لی لیکن وہ رن بنانے کی رفتار کو کم کرنے کے علاوہ کچھ حاصل نہ کر سکے اور آخری پانچ اوور میں صرف نو رن بن پائے۔

اس میچ میں پاکستان کے کپتان محمد حفیظ نے میچ کے بعد کہا کہ انھیں اپنی حکمت عملی کا از سر نو جائزہ لینا پڑے گا۔ انھوں نے کہا کہ میدان کے باہر کا حصہ انتہائی تیز ہے اور جو گیند بھی اندورنی حصہ سے باہر نکل جاتی ہے وہ باونڈری پر جا کر ہی رکتی ہے۔

پاکستان کی طرف سے دونوں وکٹیں سیعد اجمل نے حاصل کیں۔ پہلے ان کی گیند پر ترنگا پراناوتانا سٹمپ آوٹ ہو ئے۔ اس کے بعد انھوں نے دلشان کو ایل بی ڈبلیو آوٹ کر دیا۔

اسی بارے میں