چین کی برتری برقرار، پسٹوریئس کو شکست

آخری وقت اشاعت:  پير 3 ستمبر 2012 ,‭ 15:13 GMT 20:13 PST

اسی قسم کا الزام آسکر نے ایلن کے خلاف سنیچر کے روز بھی لگایا تھا

لندن میں جاری پیرالمپکس کھیلوں کے پانچویں دن بھی چین کی برتری قائم ہے اور چار روز کے مقابلوں کے اختتام پر چین کے طلائی تمغوں کی تعداد پنتیس ہو چکی تھی۔

دوسرے نمبر پر میزبان برطانیہ ہے جس نے اب تک پندرہ طلائی تمغے حاصل کیے ہیں۔

اولمپکس کی طرح پیرالمپکس میں بھی برطانیہ سائیکلنگ میں چھایا ہوا ہے اور اس نے پانچ طلائی تمغے حاصل کرڈالے ہیں۔

اسپرنٹ میں انتھونی کیپس اور کریگ مک لین نے گولڈ میڈل جیتا۔ خواتین کی تیراکی میں برطانیہ کی جیسیکا جین ایپل گیٹ نے دو سو میٹرز فری اسٹائل میں طلائی تمغہ جیت لیا۔

گھڑ سواری میں برطانیہ نے دو گولڈ میڈلز جیت لیے۔ پانچ ہزار میٹرز کی وہیل چیئر ریس برطانیہ کے ڈیوڈ ویر نے جیتی۔

کامیابیوں کے اس سلسلے میں اگر کسی کے ساتھ بری ہوئی تو وہ جنوبی افریقی ایتھلیٹ آسکر پرسٹوریئس تھے۔

اتوار کی شام برازیل کے ایلن اولیویرا نے جنوبی افریقہ کے فیورٹ آسکر پسٹوریئس کو دو سو میٹر ریس میں شکست دے کر طلائی تمغہ جیت لیا۔

اس ریس میں شکست کے بعد آسکر نے الزام لگایا کہ ایلن نے وہ بلیڈ لگائے ہوئے تھے جن کی لمبائی کو تبدیل کیا جا سکتا ہے۔

تاہم انٹرنیشنل پیرالمپکس کمیٹی نے اس الزام کو مسترد کرتے ہوئے کہا ہے کہ تمام ایتھلیٹس کے بلیڈ ناپے گئے تھے اور ایلن کے بلیڈ صحیح لمبائی کے تھے۔

اسی قسم کا الزام آسکر نے ایلن کے خلاف سنیچر کے روز بھی لگایا تھا۔ ان کا کہنا تھا کہ بلیڈ کی لمبائی کو عمومی طور پر کال روم میں نہیں ناپا جاتا۔

اس کے جواب میں ایلن نے کہا ’میرے بلیڈز کی لمبائی بالکل صحیح تھی۔ ریفریز نے مجھے سارے عمل کیا۔ میں جب ٹریک پر پہنچا تو اس کا مطلب ہے کہ میں نے تمام ٹیسٹ پاس کیے ہیں اور تبھی میں ٹریک پر پہنچا ہوں۔ اور یہ بات آسکر بھی جانتے ہیں۔‘

ایلن سے جب پوچھا گیا کہ کیا انہوں نے بلیڈ کی لمبائی سیمی فائنل اور فائنل کے درمیان تبدیل کی تھی تو ان کا کہنا تھا ’نہیں۔ جب سے یہ بلیڈ پہنے ہیں تب سے یہ بلیڈ انٹرنیشنل پیرالمپکس کمیٹی کے قواعد و ضوابط کے مطابق ہیں۔ میں یہ بلیڈ ایک ماہ سے زیادہ سے استعمال کر رہا ہوں۔‘

اسی بارے میں

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔