سربیا کے فٹبالر پر نسل پرستی کا الزام

آخری وقت اشاعت:  اتوار 16 دسمبر 2012 ,‭ 17:34 GMT 22:34 PST
الگزنڈر

الیگزنڈر کوروف نے الزامات کی تریدید کی ہے

برطانوی پولیس مانچيسٹر سٹی ٹیم کے کھلاڑی الیگزنڈر کولروف کے خلاف اس الزام کی تفتیش کر رہی ہے کہ انہوں نے میچ کے دوران مخالف ٹیم کے ایک حامی سے نسل پرستی پر مبنی باتیں کہیں تھیں۔

یہ واقعہ سینٹ جیمز پارک میں نیو کاسل یونائیٹیڈ ٹیم کے خلاف سنیچر کو کھیلے گئے میچ کے دوران ہوا۔

پولیس نے اس بات کی تصدیق کی ہے کہ شکایت ملنے کے بعد وہ اس معاملے کی تفتیش کر رہے ہیں۔

ستائیس سالہ کولروف عالمی ڈیفینڈ ہیں جن کا تعلق سربیا سے ہے۔ ان پر الزام ہے کہ میچ کے دوران انہوں نے ایک مداح پر حملہ کیا جنہوں نے البانیہ کا پرچم اٹھایا ہوا تھا۔

البانیہ اور سربیا میں تاریخی طور پر کشیدگی رہی ہے۔

پولیس کا کہنا ہے کہ وہ اس طرح کے الزامات کو بہت سنجیدگی سے لیتی ہے اور اس معاملے میں تحقیقات چل رہی ہیں۔

پولیس نے اس بارے میں ہر اس شخص کو معلومات دینے کو کہا ہے جس نے کچھ سنا یا دیکھا ہو۔

لیکن اطلاعات کے مطابق کھلاڑی الیگزنڈر کولروف نے اس الزام کی سختی سے تردید کی ہے۔

کولروف اس میچ میں ایک کھلاڑی کے متبادل کے روپ میں آئے تھے لیکن اٹھارہ منٹ بعد ہی انہیں دوسرے کھلاڑی سے پھر بدل دیا گيا۔ میچ مانچیسٹر سٹی نے ایک کے مقابلے میں تین گول سے جیت لیا تھا۔

سربیا اور البانیہ میں میں کشیدگي کی وجہ دو ہزار آٹھ میں کوسووو کے اکثریتی البانین صوبے کی سربیا سے علیحدگی کا اعلان بھی ہے۔

سنہ انیس سو اٹھانوے اور نناوے میں اسی صوبے پر تنازعے کے سبب دونوں ممالک کے درمیان جنگ بھی ہوئي تھی۔

اسی بارے میں

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔