انگلینڈ کی اٹھائیس برس بعد بھارت میں فتح

آخری وقت اشاعت:  پير 17 دسمبر 2012 ,‭ 10:14 GMT 15:14 PST

الیسٹر کک کو شاندار بلے بازی پر سیریز کا بہترین کھلاڑی قرار دیا گیا

بھارتی شہر ناگپور میں انگلینڈ اور بھارت کے مابین کھیلا جا رہا چوتھا ٹیسٹ میچ بے نتیجہ رہا ہے تاہم انگلینڈ نے یہ ٹیسٹ سیریز ایک کے مقابلے میں دو میچوں سے جیت لی ہے۔

یہ اٹھائیس برس کے طویل انتظار کے بعد بھارتی سرزمین پر انگلینڈ کی کسی ٹیسٹ سیریز میں پہلی فتح ہے۔

انگلینڈ نے آخری مرتبہ 85۔1984 میں بھارت میں ٹیسٹ سیریز میں کامیابی حاصل کی تھی۔

کلِک میچ کا تفصیلی سکور کارڈ

پیر کو میچ کے آخری دن انگلینڈ نے تین وکٹ کے نقصان پر ایک سو اکسٹھ رنز سے اننگز شروع کی اور بھارتی بولر دن بھر میں مزید ایک وکٹ ہی لے سکے۔

جب آخری سیشن میں دونوں کپتانوں کی مشاورت سے کھیل ختم کرنے کا اعلان کیا گیا اس وقت انگلینڈ نے چار وکٹوں کے نقصان پر تین سو باون رنز بنائے تھے۔

انگلینڈ کی دوسری اننگز میں جوناتھن ٹراٹ اور ایئن بیل نے سنچریاں بنائیں۔ ٹراٹ ایک سو تنتالیس رنز بنا کر آؤٹ ہوئے جبکہ بیل نے ناقابلِ شکست ایک سو سولہ رنز بنائے۔

ان دونوں بلے بازوں کے درمیان دو سو آٹھ رنز کی شراکت ہوئی۔

بھارت کی جانب سے دوسری اننگز میں ایشون نے دو جبکہ پرگیان اوجھا اور رویندر جدیجا نے ایک ایک وکٹ حاصل کی۔

انگلش بولر جیمز اینڈرسن کو پہلی اننگز میں چار وکٹیں حاصل کرنے پر میچ کا بہترین کھلاڑی قرار دیا گیا۔

سیریز کے بہترین کھلاڑی کا اعزاز الیسٹر کک کے حصے میں آیا جنہوں نے اس سیریز میں پانچ سو اڑسٹھ رنز بنائے۔

جمعرات کو شروع ہونے والے میچ میں انگلینڈ نے ٹاس جیت کر پہلے بیٹنگ کرنے کا فیصلہ کیا تھا اور پہلی اننگز میں تین سو تیس رنز بنائے تھے۔

اس کے جواب میں بھارت نے اپنی پہلی اننگز نو وکٹوں کے نقصان پر تین سو چھبیس رنز بنا کر ڈیکلیئر کر دی تھی اور یوں انگلینڈ کو چار رنز کی سبقت حاصل ہوئی تھی۔

چار ٹیسٹ میچوں کی سیریز میں احمدآباد میں کھیلا گيا پہلا میچ بھارت نے جبکہ ممبئی اور کولکتہ میں کھیلے جانے والے میچ انگلینڈ نے جیتے تھے۔

اسی بارے میں

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔