’ایک بچہ جو ابھی بھی یاد ہے‘

آخری وقت اشاعت:  پير 24 دسمبر 2012 ,‭ 12:14 GMT 17:14 PST

پاکستان کرکٹ ٹیم کے سابق فاسٹ بالر وقار یونس کی سچن تندولکر سے بہت سی پرانی یادیں وابستہ ہیں۔

اس کی بڑی وجہ یہ ہے کہ دونوں کھلاڑیوں نے ٹیسٹ کرکٹ کا آغاز ایک ہی میچ میں کیا تھا اور سچن کو بین الاقوامی کرکٹ میں جس بالر کے پہلے سخت چیلنج کا سامنا کرنا پڑا وہ وقار یونس ہی تھے۔

ان پرانی یادوں کا ذ کرکرتے ہوئے وقاریونس سچن تندولکر کی تعریف میں فراخدلی کا مظاہرہ کرتے ہیں۔

’ کراچی ٹیسٹ کھیلنے والا ایک بچہ مجھے ابھی بھی یاد ہے ۔گو کہ میں نے سچن کو اس اننگز میں آؤٹ کیا تھا لیکن اس سولہ سالہ کرکٹر نے اپنے روشن مستقبل کے بارے میں اپنے عزائم بتا دیے تھے۔ سچن میں بلا کا اعتماد تھا اور کمال کا ٹیلنٹ ۔یہ اسی ٹیلنٹ کا نتیجہ ہے جس کے بل پر انہوں نے بین الاقوامی کرکٹ میں تیئس سال انتہائی کامیابی کے ساتھ گزارے ہیں۔‘

سچن میں ایسی کیا خوبی ہے جو انہیں دوسروں سے منفرد ثابت کرتی ہے؟

"کراچی ٹیسٹ کھیلنے والا ایک بچہ مجھے ابھی بھی یاد ہے ۔گو کہ میں نے سچن کو اس اننگز میں آؤٹ کیا تھا لیکن اس سولہ سالہ کرکٹر نے اپنے روشن مستقبل کے بارے میں اپنے عزائم بتا دیے تھے۔ سچن میں بلا کا اعتماد تھا اور کمال کا ٹیلنٹ ۔یہ اسی ٹیلنٹ کا نتیجہ ہے جس کے بل پر انہوں نے بین الاقوامی کرکٹ میں تیئس سال انتہائی کامیابی کے ساتھ گزارے ہیں۔"

وقار یونس

اس سوال کا جواب وقاریونس کچھ یوں دیتے ہیں’حالات کے مطابق خود کو ڈھالنا۔ سچن نے کرکٹ کے بدلتے انداز کے مطابق خود کو بھی بڑی خوبصورتی سے تبدیل کیا۔ انہوں نے اپنی صلاحیتوں کو بھرپور انداز میں استعمال کیا۔ اگرچہ میں نے کئی دوسرے بڑے کرکٹرز بھی دیکھے ہیں جن میں انضمام الحق، رکی پونٹنگ اور راہول ڈراوڈ شامل ہیں لیکن سچن نے نہ صرف ایشین وکٹوں پر بڑی اننگز کھیلیں بلکہ آسٹریلیا، انگلینڈ اور دوسرے ممالک میں بھی یادگار اننگز کھیلیں۔‘

سچن کا ٹیسٹ کیریئر کتنا عرصہ جاری رہتا ہوا دکھائی دے رہا ہے؟

وقاریونس کے خیال میں اب سچن کے پاس زیادہ وقت نہیں ہے۔

’بدقسمتی سے ون ڈے کیریئر کے آخری حصے میں ان سے رنز نہیں ہوئے اور اب انہوں نے خود کو ٹیسٹ کرکٹ تک محدود کرنےکا فیصلہ کیا ہے ممکن ہے کہ صرف ٹیسٹ کرکٹ کھیلنے سے انہیں کچھ وقت مل جائے اور وہ تازہ دم جسم اور دماغ کے ساتھ میدان میں اتریں۔ انہیں بھی یہ اندازہ ہوگیا ہے کہ انتالیس سال کی عمر ہونے کے بعد اب ان کی انٹرنیشنل کرکٹ زیادہ نہیں رہی ہے تاہم اس سے قطع نظر سچن کے ریکارڈز اور بھارتی کرکٹ کے لیے ان کی خدمات ناقابل فراموش ہیں ۔مختصر لفظوں میں میں صرف یہی کہتا ہوں ’ایک عظیم کرکٹر اور ایک عظیم انسان‘۔

اسی بارے میں

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔