پاکستان خواتین کرکٹ ٹیم کی ناکامیاں

آخری وقت اشاعت:  جمعـء 8 فروری 2013 ,‭ 17:52 GMT 22:52 PST

پاکستان کی بد ترین شکست کے بعد پاکستان ٹیم کی مینجر عائشہ اشعر نے اسے بد قسمتی قرار دیا

پاکستان کی خواتین کرکٹ ٹیم سے اس بات کی توقع تو کم تھی کہ وہ آسٹریلیا، نیوزی لینڈ اور جنوبی افریقہ جیسی ٹیموں سے نہ جیت سکے گی تاہم یہ بات بہت افسوس ناک ہے کہ پاکستان کی ٹیم بناء مزاحمت ہی تمام میچز ہار گئی۔

پاکستان کی خواتین کرکٹ ٹیم بھارت سے میچ ہارنے کے بعد عالمی کپ میں آٹھویں پوزیشن پر آئی ہے۔

پاکستان کی خواتین کرکٹرز نے کچھ عرصے سے اچھی کارکردگی دکھائی لیکن ان کے حصے میں آنے والی چند فتوحات ان کے اپنے خطے کی ٹیموں کے خلاف تھیں لیکن جب بھی ان کا سامنا بڑی ٹیموں سے ہوا تو ان کے معیار اور تیاریوں کی ساری قلعی کھل گئی، وہ ان کے سامنے بے بس نظر آئیں اور تمام میچز یک طرفہ رہے۔

ورلڈ ٹی ٹونٹی کرکٹ ٹورنامنٹ ہو یا اب جاری عالمی کپ کرکٹ پاکستان کی خواتین کرکٹ ٹیم کی بیٹنگ بری طرح ناکام رہی۔

ورلڈ کپ میں روانگی سے پہلے ہی پاکستان کی ٹیم کے کوچ محتشم رشید نے تسلیم کیا تھا کہ ان کی ٹیم کا کمزور شعبہ بیٹنگ ہے۔ سوال یہ پیدا ہوتا ہے کہ خامی کا اندازہ ہونے کے باوجود کیا پاکستان کرکٹ بورڈ کے خواتین ونگ نے ایسی کوئی کوشش کی کہ اس خامی کو دور کیا جا سکے۔

عالمی کپ سر پر تھا اور سابق ٹیسٹ کرکٹر باسط علی کو خواتین ٹیم کی بیٹنگ درست کرنے کے لیے بلایا گیا اور اتنے مختصر وقت میں انہیں ان کرکٹرز کے نام بھی معلوم نہ ہو سکے وہ ان کی خامیاں کیا درست کرتے۔

اتنے بڑے میگا ایونٹ کے لیے پاکستان خواتین کرکٹ ٹیم کے انتخاب پر بھی کافی لے دے ہوئی اور ٹیم میں ایسی لڑکیاں شامل تھیں جنہیں بین الاقوامی کرکٹ کا کوئی خاص تجربہ نہیں تھا۔

پاکستان کی خواتین کرکٹرز کو ویسے بھی بین الاقوامی میچز بہت کم ملنے کا گلہ ہے اور یہ ایک اہم وجہ ہے کہ پاکستانی خواتین ٹیم آسٹریلیا، نیوزی لینڈ اور دیگر بڑی ٹیموں کے سامنے بے بس نظر آتی ہے۔

پاکستان کی بد ترین شکست کے بعد پاکستان ٹیم کی مینجر عائشہ اشعر نے اسے بد قسمتی قرار دیا لیکن ایسی کار کردگی کو بد قسمتی کہہ دینا مسئلے سے آنکھیں چرانے کے مترادف ہے۔ اس وقت ضرورت ہے کہ پاکستان کرکٹ بورڈ کا خواتین ونگ سر جوڑ کر بیٹھے اور ایسی حمکت عملی تیار کرے جس کے بعد کم از کم پاکستان کی خواتین کرکٹ ٹیم میں اتنا دم خم ہو کہ وہ بڑی ٹیموں کے ساتھ کھیلتے ہویے اتنی بری طرح نہ ہارے۔

اسی بارے میں

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔