مالم جبہ سنو فیسٹول کا اختتام

آخری وقت اشاعت:  پير 18 مارچ 2013 ,‭ 22:41 GMT 03:41 PST
ملم جبہ سن فیسٹیول

ملم جبہ سنو فیسٹیول سے ہر عمر کے لوگ لطف اندوز ہوئے

وادی سوات کے مرکزی شہر مینگورہ سے تقریباً بیالیس کلو میٹر دور اور سطح سمندر سے نو ہزار دو سو فٹ کے بلندی پر واقع خوبصورت سیاحتی مقام مالم جبہ میں سنو فیسٹول اختتام پذیر ہوگیا ہے۔

اس فیسٹیول میں آٹھ سو فٹ کی بلند ڈھلوان پر موسم سرما کے کھیل کھیلے گئے جن میں سکیٹنگ ، گلائیڈنگ، گولی گلاسز، سنو ٹریکنگ، ٹوبو گینگ اور سنو مین کے مقابلے شامل تھے۔

فیسٹول میں ہزاروں کی تعداد میں مقامی اور غیر مقامی سیاح شریک ہوئے اور فیسٹول میں شریک بعض سیاحوں نے ڈول کی تاپ پر رقص بھی کیا جبکہ مقامی روایتی موسیقی کے علاوہ فوجی بینڈبھی بجائے گئے۔ پاکستان کے مختلف علاقوں سے آئے ہوئے سیاحوں نے بتایا کہ یہاں آنے سے پہلے ان کے ذہنوں میں سیکورٹی خدشات تھے لیکن یہاں آکر انہوں نے خود کو محفوظ تصور کیا۔ جی او سی میجر جنرل ثنا اللہ خان نے بتایا کہ آرمی کا مقصد یہی ہے کہ سوات میں سیاحت بحال ہو کیونکہ سیاحوں کی آمد سے یہاں کی معیشت بہتر ہوگی۔

ملم جبہ

ملم جبہ سنو فیسٹیول سے سیاحت کو فروغ ملے گا اور علاقے کی معیشت بہتر ہو گی

مالم جبہ میں لکڑیوں سے بنی ہوئی دکانوں میں قائم ہوٹلوں پر سیاحوں کا کافی رش رہا۔ جس سے ان چھوٹے ہوٹلوں کے مالکان بہت خوش نظر آئے۔ ان کا کہنا تھا کہ فیسٹول کے انعقاد کے باعث ان کے کاروبار بہتر ہوئے ہیں اور ان کی آمدنی میں اضافہ ہوا ہے۔ چائے کے ایک ہوٹل کے مالک اکبر زادہ نے بتایا کہ فیسٹول کے انعقاد سے سیاحوں کی آمد بڑھ گئی ہے جس سے ان کا روزگار بہتر ہوا ہے اور آمدنی 400 سے بڑھ کر ایک ہزار تک پہنچ گئی ہے۔

پشاور سے آنے والے سیاح ناصر آٹھ سال کے وقفے کے بعد وادی سوات کے سیاحتی مقام مالم جبہ پہنچ کر انتہائی خوش تھے۔ ان کے مطابق وہ اور ان کے اہل خانہ مالم جبہ میں وقت گزارنے اور پرانی یادیں تازہ کرنےکے لیے بے قرار تھے۔

ملم جبہ

موسم سرما کے کھیلوں کا انعقاد پاکستان فوج نے کیا تھا

سوات میں آئی ایس پی ار کے ترجمان کرنل ذیشان فیصل نے بی بی سی بتایا کہ سوات میں امن کی واپسی سے ثقافت اور سیاحت سمیت کسی بھی صنعت کے لیے اب کوئی خطرہ نہیں۔ ’خوبصورت سیاحتی مقام مالم جبہ میں سالانہ بنیاد پر ہونے والے سکی فیسٹول کے انعقاد کے باعث ملک بھر سے ہزاروں کی تعداد میں سیاح وادی سوات کا رخ کر رہے ہیں جس سے سوات میں امن کا اظہار ہوتا ہے۔‘

اسی بارے میں

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔