یوسین بولٹ پانچویں بار دنیا کے بہترین ایتھلیٹ

جمیکا سے تعلق رکھنے والے ایتھلیٹ یوسین بولٹ نے پانچویں بار دنیا کے بہترین ایتھلیٹ کا اعزاز حاصل کیا ہے۔

27 سالہ جمیکن شہری یوسین نے اس سال ماسکو میں ہونے والی عالمی چیمپئن شپ میں سو میٹر، دو سو میٹر اور سو میٹر ریلے ریس میں طلائی تمغے جیتے۔

جمیکا ہی کی شیلی این فریزر پائرس نے خواتین کا عالمی ایوارڈ جیتا جنہوں نے روس میں بولٹ کی طرح انہی تین درجہ بندیوں میں طلائی تمغے جیتے۔

بولٹ نے برطانیہ کے مو فرح پر سبقت لے کر اس ایوارڈ کو حاصل کیا جو دو بار عالمی چیمپئن رہ چکے ہیں۔

اس کے بعد یوسین بولٹ عالمی چیمپئن شپ کی تاریخ کے کامیاب ترین ایتھلیٹ بن گئے ہیں جنہوں نے آٹھ طلائی تمغوں سمیت دس تمغے جیتے ہیں۔

موناکو کے شہر مونٹی کارلو میں منعقد ہونے والی ایوارڈ کی تقریب میں انہوں نے کہا کہ 2014 میں ان کا ہدف دو سو میٹر کے عالمی ریکارڈ کو توڑنا ہے جو کہ 19.19 سیکنڈز کا ہے۔

انہوں نے کہا کہ ’یہ میرا ہمیشہ سے خواب اور ہدف رہا ہے اور یہ سال وہ سال ہو گا جب میں عالمی ریکارڈ کو توڑنے کے لیے کوشش کروں گا کیونکہ اس سال کوئی بڑا مقابلہ نہیں ہو گا۔‘

بولٹ نے کہا کہ ’ریکارڈ کو توڑنے کے نقطۂ نظر سےسو میٹر کی نسبت دو سو میٹر زیادہ آسان ہے۔ اور یہ میرا اس سال کا ہدف ہو گا۔‘

بولٹ نے اس سے قبل کہہ رکھا ہے کہ وہ 2016 کے اولمپکس کے بعد ریٹائر ہو جائیں گے، مگر انہوں نے یہ بھی کہا کہ وہ شاید اس کے اگلے سال لندن میں منعقد ہونے والی عالمی چیمپئن شپ میں حصہ لیں۔

یوسین نے کہا کہ ’میں اس سلسلے میں اپنے کوچ سے بات کر رہا تھا اور وہ مجھے کہہ رہے تھے کہ مجھے ایک اور سال کے لیے ٹھہرنا چاہیے۔‘

اسی بارے میں