’انگلینڈ سے مفاہمت کا کوئی امکان نہیں‘

Image caption مچل جانسن نے پہلے ٹیسٹ میچ میں نو وکٹیں حاصل کئیں

آسٹریلیا کے بالر میچل جانسن نے آسٹریلیا اور انگینڈ کے درمیان ایشز سیریز کے پہلے میچ میں بدمزگی کے بعد انگلینڈ کی کرکٹ ٹیم کے ساتھ مفاہمت کے امکان کو رد کر دیا ہے۔

جوناتھن ٹراٹ پر آسٹریلیا کے کھلاڑی ڈیوڈ وانر نے تنقید کی تھی۔ جوناتھن ٹراٹ پہلی ٹیسٹ میں ٹیم کی شکست کے بعد ذہنی دباؤ کا شکار ہونے کے بعد سیریز ادھوری چھوڑ کر واپس انگلینڈ لوٹ آئے ہیں۔

Image caption براڈ اس صورت حال سے پریشان نہیں ہیں

آسٹریلیا کے کپتان مائیکل کلارک نے انگلینڈ کے کھلاڑی جیمز اینڈرسن کو بازو ٹوٹنے کے لیے تیار رہنے کی دھمکی کی وجہ سے جرمانہ بھی ادا کرنا پڑا تھا۔

جانسن نے کہا کہ ان کی اطلاع کے مطابق انگلینڈ ٹیم کے کوچ مفاہمت کرنا چاہتے ہیں لیکن ہماری طرف سے اس کا کوئی امکان نہیں ہے۔

Image caption ٹارٹ کی تکنیک پر بھی سوال اٹھنے لگے ہیں

جانسن نے کہا کہ ’ماحول بہت گرم ہو گیا ہے، انگلینڈ والے اس سے پریشان ہیں، اور انھیں یہ بالکل پسند نہیں آ رہا۔‘

آئی سی سی کے میچ ریفری جیف کرو دوسرے ٹیسٹ میچ سے قبل ماحول کو ٹھنڈا کرنے کی کوشش کریں گے۔

دوسرا ٹیسٹ میچ ایڈیلیڈ میں پانچ دسمبر سے شروع ہو رہا ہے۔

آسٹریلیا نے اس سیریز میں ایک صفر کی برتری حاصل کر لی ہے۔ آسٹریلیا نے برزبین کے پہلے ٹیسٹ میچ میں انگلینڈ کو تین سو اکاسی رنز سے شکست دی تھی۔

جانسن نے اس میچ میں ٹراٹ کو دو مرتبہ آؤٹ کیا۔ انھوں نے اس میچ میں نو وکٹیں حاصل کیں۔ اس پر ڈیوڈ وانر نے انھیں کمزور بیٹنگ کا طعنہ دیا۔

انگلینڈ کے کپتان ایلیسٹر کک نے ڈیوڈ وارنر کے طعنے کو نازیبا اور توہین آمیز قرار دیا تھا۔

بتیس سالہ مچل جانسن کا خیال ہے کہ فقرے بازی حد سے نہیں بڑھی ہے۔

دوسری طرف انگلینڈ کے مینیجر اینڈی فلاور نے کہا ہے کہ کرکٹ کی کشمکش اور مناسب رویئے کے درمیان توازن رکھنا ہوگا۔

انھوں نے کہا کہ کھلاڑیوں کو اپنے برتاؤ کے لیے ایک معیار کا خود تعین کرنا ہوگا۔

اسی بارے میں