سابق ٹیسٹ کرکٹر خالد حسن انتقال کرگئے

Image caption خالد حسن 14 جولائی سنہ 1937 کو پشاور میں پیدا ہوئے

پاکستان کے سابق ٹیسٹ کرکٹر خالد حسن 76 برس کی عمر میں انتقال کرگئے۔

انھوں نے سنہ 1954 میں انگلینڈ کے خلاف ٹرینٹ برج ناٹنگھم میں کھیلے گئے ٹیسٹ میچ میں پاکستان کی نمائندگی کی تھی جو ان کے کریئر کا واحد ٹیسٹ میچ ثابت ہوا لیکن 16 سال 352 دن کی عمر میں ٹیسٹ کیپ حاصل کر کے وہ اس وقت دنیا کے سب سے کمر عمر ٹیسٹ کرکٹر بن گئے تھے۔ ان کا یہ عالمی ریکارڈ بعد میں پاکستان ہی کے نسیم الغنی مشتاق محمد اور حسن رضا نے توڑا ۔

خالد حسن نے رائٹ آرم لیگ سپن گگلی باؤلر کے طور پر کھیلتے ہوئے اس میچ میں 278 رنز بنانے والے ڈینس کامپٹن اور 101 رنز سکور کرنے والے ریج سمپسن کو آؤٹ کیا تھا تاہم اس کے بعد وہ کوئی ٹیسٹ میچ نہ کھیل سکے۔

دلچسپ بات یہ ہے کہ خالد حسن انگلینڈ کا دورہ کرنے والی اس ٹیم میں شامل نہیں تھے لیکن کپتان عبدالحفیظ کاردار کے طلب کیے جانے پر وہ انگلینڈ گئے تھے۔

خالد حسن 14 جولائی سنہ 1937 کو پشاور میں پیدا ہوئے۔ انھوں نے فرسٹ کلاس کرکٹ میں پنجاب اور لاہور کی ٹیموں کی نمائندگی کی۔

انطوں نے سنہ 1953 سے1959 تک فرسٹ کلاس کرکٹ کھیلتے ہوئے 17 میچوں میں 28 وکٹیں حاصل کیں ۔ان کی بہترین باؤلنگ 27 رنز کے عوض تین وکٹ رہی۔

اسی بارے میں