بڑا ہدف ایک بار پھر پاکستان کی کمزوری

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption لستھ ملنگا کی شاندار بولنگ نے مصباح الحق اور عمراکمل کو فتح گر بننے نہیں دیا

سری لنکا نے منفرد بولنگ ایکشن اور ہیئر سٹائل والے لستھ ملنگا کی پانچ وکٹوں کی زبردست پرفارمنس کے نتیجے میں پاکستان کو 12 رنز سے شکست دے دی۔

پاکستانی ٹیم اس سال اپنی ون ڈے کرکٹ کا آغاز جیت سے نہ کر سکی۔گذشتہ سال کا اختتام بھی اس نے شکست پر ہی کیا تھا اور اس وقت بھی یہ زخم سری لنکا نے ہی لگایا تھا۔ لیکن پاکستانی ٹیم کے لیے کہیں زیادہ تکلیف دہ بات یہ ہے کہ وہ تین سال سے 250 سےزائد کا ہدف عبور کرنےمیں کامیاب نہیں ہو سکی ہے۔

پاکستان بمقابلہ سری لنکا، تصاویر

آخری بار اس نے یکم فروری 2011 میں نیوزی لینڈ کے خلاف نیپئر میں 263 رنز کا ہدف مصباح الحق کے ناقابل شکست 93 رنز کی بدولت حاصل کیا تھا۔

مصباح الحق نے اس بار بھی خود کو ایک مشکل صورتحال میں پایا جس کے اب وہ عادی ہوچکے ہیں۔ وہ 83 کے سکور پر کریز پر آئے تھے جب شرجیل خان، احمد شہزاد اور محمد حفیظ مایوس کن کارکردگی دکھاکر پویلین میں جا چکے تھے۔صہیب مقصود بھی کچھ نہ کرکے آؤٹ ہوئے تو پاکستان کا سکور 121 رنز تھا ۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption مصباح الحق نے 73 رنز کی عمدہ اننگز کھیلی

ٹوٹی پھوٹی بیٹنگ لائن کی مرمت کرتے ہوئے مصباح اور عمراکمل نے سری لنکن کھلاڑیوں کے چہروں سے مسکراہٹ غائب کردی جو اسی وقت واپس آ سکی جب یہ دونوں آؤٹ ہوئے۔

دونوں کے درمیان پانچویں وکٹ کی 121 رنز کی شراکت نے فاصلے سمیٹ دیے تھے۔

عمراکمل کا ٹیلنٹ بڑے دنوں بعد سرچڑھ کر بولا ۔انہوں نے 14 اننگز کے بعد پہلی نصف سنچری سکور کی۔ ان کی 74 رنز کی اننگز میں تین چھکے اور سات چوکے شامل تھے۔

جب وہ آؤٹ ہوئے تو پاکستان کو جیتنے کے لیے 45 گیندوں پر 55 رنز درکار تھے اور تمام تر امیدیں مصباح الحق سے وابستہ تھیں لیکن لستھ ملنگا کے ایک اوور نے کہانی بدل دی۔

ملنگا نے پہلے شاہد آفریدی کو شارٹ کور میں کیچ کرایا اور پھر مصباح الحق کی قیمتی وکٹ ڈیپ اسکوائر لیگ پر سینانائیکے کے کیچ کے ذریعے حاصل کرکے میچ کا توازن پھر اپنی ٹیم کی طرف کردیا۔

مصباح الحق نے چار چوکوں اور دو چھکوں کی مدد سے 73 رنز سکور کیے۔ان کے آؤٹ ہونے پر پاکستان کو جیت کے لیے 30 گیندوں پر 43 رنز درکار تھے لیکن ملنگا نے عمرگل، سعید اجمل اور بلاول بھٹی کو بھی آؤٹ کر کے اپنی ٹیم کی جیت کا راستہ خوبصورتی سے بنا ڈالا۔

اس سے قبل سری لنکن اننگز میں عمرگل کے ہاتھوں کوشل پریرا کی وکٹ جلد گرجانے کے بعد تھری مانے اور سنگاکارا نے پاکستانی بولنگ کو قابو کرلیا۔ وہ جب تک کریز پر رہے گیند تقریباً ہر اوور میں باؤنڈری کی راہ لیتی رہی اور سکور بورڈ پر تین سے زیادہ رنز کے امکانات بھی موجود رہے ۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption شرجیل خان آؤٹ ہونے والے پہلے کھلاڑی تھے

دونوں کی 161 رنز کی شراکت عمرگل نے سنگاکارا کو آؤٹ کر کے ختم کی ۔ تھری مانے اپنی دوسری ون ڈے سنچری کی تکمیل کے بعد سعید اجمل کی وکٹ بنے تو صورتحال بھی تبدیل ہوگئی۔ شاہد آفریدی نے مہیلاجے وردھنے اور تشارا پریرا کو پویلین کی راہ دکھائی اور احمد شہزاد نے اپنا پہلا ون ڈے کھیلنے والے چترنگا ڈی سلوا کو رن آؤٹ کردیا۔

سری لنکا کی پانچ وکٹیں صرف 62 رنز پر گریں اس مرحلے پر کپتان اینجیلو میتھیوز کی نصف سنچری اور چندی مل کے ساتھ قیمتی 45 رنز کی شراکت کام آ گئی جس کی وجہ سے اسکور 296 تک پہنچ گیا۔

اسی بارے میں