سری لنکا ایشیا کپ کے فائنل میں

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption اس ٹورنامنٹ میں سری لنکا کی مسلسل تیسری کامیابی ہے

سری لنکا کی ٹیم جیت کا سو فیصد ریکارڈ برقرار رکھتے ہوئے افغانستان کو 129 رنز سے شکست دیتے ہوئے ایشیا کپ کے فائنل میں پہنچ گئی۔

یہ اس ٹورنامنٹ میں سری لنکا کی مسلسل تیسری کامیابی ہے ۔

تفصیلی سکور کارڈ

دیگر چاروں ٹیموں کے پاس فائنل میں پہنچنے کے مواقع موجود ہیں لیکن اگر پاکستانی ٹیم منگل کو بنگلہ دیش کو ہرادیتی ہے تو پھر ہفتے کے روز فائنل پاکستان اور سری لنکا کے درمیان ہوگا۔

افغانستان کے بولرز نے سری لنکن بیٹنگ کی توپوں کو گرجنے نہیں دیا لیکن اس کے بیٹسمین بھی تجربہ کارسری لنکن بولرز کے سامنے سر نہ اٹھاسکے۔آخری پانچ وکٹیں اسکور میں صرف تین رنز کا اضافہ کرسکیں۔

دو سو چّون رنز کے ہدف کو حاصل کرنے کی افغانستان کی امیدوں کو پہلا جھٹکا اس بار بھی محمد شہزاد سے لگا جن کا آؤٹ آف فارم ہونا پریشانی کا سبب بنا ہوا ہے۔ وہ دوسرے ہی اوور میں لکمل کی گیند پر بولڈ ہوگئے۔

افغانستان کی اننگز میں نہ کوئی قابل ذکر بیٹنگ نظرآئی اور نہ ہی کوئی اچھی پارٹنرشپ۔

کپتان محمد نبی سنتیس رنز کے ساتھ ٹاپ اسکورر رہے۔

وقفے وقفے سے گرنے والی وکٹیں سری لنکا کو جیت کے قریب لے جاتی رہیں۔اصغر استانکزئی ۔نورعلی اور نوروز منگل کی وکٹیں اسکور میں صرف آٹھ رنز کے اضافے پر گریں جس کے بعد سب کچھ محض رسمی کارروائی معلوم ہورہا تھا۔

تشارا پریرا اور اجانتھا مینڈس نے برابری کے بٹوارے میں تین تین وکٹوں پر ہاتھ صاف کیا۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption سنگاکارا نے ایشیا کپ کے تینوں میچوں میں عمدہ بیٹنگ کا مظاہرہ کیا ہے

سری لنکا نے ٹاس جیت کر پہلے بیٹنگ کی تو سلو وکٹ پر کرکٹ بھی بڑی خاموش رہی۔ پہلا چوکا پانچویں اوور میں لگا لیکن اگلے ہی اوور میں شاہ پور زدران کی گیند نے مڈل اسٹمپ اکھاڑکر تھری مانے کو واپسی دکھائی۔

کوشل پریرا اور سنگاکارا کی خطرہ بنتی شراکت میرواعظ اشرف نے پریرا کو بولڈ کرکے ختم کی۔

رنز کے لیے ترسنے والے مہیلا جے وردھنے مسلسل گیارہویں اننگز میں نصف سنچری کے بغیر آؤٹ ہوئے تو سری لنکا کو ایک بار پھر سنگاکارا کی قدروقیمت کا احساس ہوگیا۔

سنگاکارا نے چندی مل کے ساتھ چوتھی وکٹ کی شراکت میں چوہتر رنز کا اضافہ کیا لیکن چار گیندوں میں ان دونوں کی وکٹیں افغانستان کے قابو میں آگئیں۔

سنگاکارا چھہتر رنز بناکر رن آؤٹ ہوئے یہ ان کی پچاس یا زائد رنز کی مسلسل چوتھی اننگز تھی۔

کپتان اینجیلو میتھیوز نے آخری اوور میں اسکور کو آگے بڑھانے کی ذمہ داری اس بار بھی نبھائی لیکن وہ اور تشارا پریرا بولنگ پر پوری طرح حاوی نہ ہوسکے تشارا پریرا تیئس گیندیں کھیل کر انیس رنز بناپائے جس میں ایک بھی چوکا شامل نہ تھا۔ میتھیوز کی پنتالیس رنز کی اننگز میں چار چوکے شامل تھے۔

اسی بارے میں