ٹی ٹوئنٹی میں اچھی بری ٹیموں کا فرق کم رہ گیا ہے

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption مہندر سنگھ نے بھارتی ٹی وی چینل زی کے خلاف ہتک عزت کا دعوی بھی دائر کر رکھا ہے

مہندر سنگھ دھونی کا کہنا ہے کہ اگر آپ بھارتی کرکٹ ٹیم کا حصہ ہیں تو آپ کے اردگرد کئی چیزیں ہوتی رہتی ہیں قطع نظر اس بات کے کہ آپ اچھی کارکردگی کامظاہرہ کر رہے ہوں یا نہیں؟۔

مہندر سنگھ دھونی کا اشارہ موجودہ صورتحال کی جانب تھا جس پر نہ وہ کوئی بات سننا چاہتے ہیں اور نہ ہی کوئی تبصرہ کرنا چاہتے ہیں لیکن آئی سی سی ورلڈ ٹی ٹوئنٹی میں پاکستان کے خلاف میچ سے قبل پریس کانفرنس میں اپنی یہ بات کہہ کر وہ کرکٹ کے دوسرے معاملات کی طرف بڑھ گئے۔

واضح رہے کہ دھونی کو اسوقت آئی پی ایل کرپشن کے الزامات کا سامنا ہے اور انہوں نے مدراس کی عدالت میں ایک بھارتی ٹی وی چینل زی کے خلاف ہتک عزت کا دعوی بھی دائر کر دیا ہے ۔

مہندر سنگھ دھونی پریس کانفرنس میں اپنی بذلہ سنجی کے لیے مشہور ہیں اور اس پریس کانفرنس میں بھی انہوں نے ہر سوال کا جواب مسکراتے ہوئے خندہ پیشانی سے دیا۔

دھونی کو شاہد آفریدی کے ایشیا کپ کے دو چھکے یاد دلائے گئے تو انہوں نے کہا کہ دوسرے چھکے پر تو انہیں ایسا لگا تھا جیسے یہ کیچ ہوگا لیکن چھکا ہوگیا۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption مہندر سنگھ دھونی کو 2007 کا ورلڈ کپ یاد ہے جب عمر گل گیارھویں اوور سے بولنگ کے لیے آتے تھے

دھونی نے پاکستانی بولرز عمرگل اور سعید اجمل کی تعریف میں کوئی کمی نہیں ہونے دی۔ سعید اجمل کے بارے میں ان کا کہنا تھا کہ وہ صرف بھارت کے لیے ہی نہیں بلکہ ہر ٹیم کے لیے خطرہ ہیں۔ان کے خلاف آسانی سے رنز نہیں بنائے جاسکتے۔

عمرگل کے بارے میں دھونی کا کہنا تھا کہ انہیں دو ہزار سات کا ورلڈ ٹی ٹوئنٹی اچھی طرح یاد ہے جس میں عمرگل گیارھویں اوور سے بولنگ کے لیے آتے تھے اور آخری اوور تک ریورس سوئنگ سے بیٹسمینوں کو پریشان کرتے تھے لیکن کپتان کی حیثیت سے وہ انفرادی طور پر کسی کھلاڑی کو نہیں بلکہ پوری ٹیم کو نظر میں رکھتے ہیں۔

دھونی نے کہا کہ وقت گزرنے کے ساتھ ساتھ پاک بھارت کرکٹ میں پائی جانے والی تناؤ کی کیفیت میں کمی آئی ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ ورلڈ ٹی ٹوئنٹی میں ٹیموں کے درمیان فرق بہت کم رہتا ہے کیونکہ اس کرکٹ میں بہت اتار چڑھاؤ ہے ۔

اپنے فاسٹ بولرز کے بارے میں بھارتی کپتان نے کہا کہ یقیناً ان کے تیز بولرز کے پاس انٹرنیشنل ٹی ٹوئنٹی کا تجربہ نہیں ہے لیکن آئی پی ایل کھیل کر انہیں اس فارمیٹ کی سمجھ بوجھ ہوچکی ہے۔

اسی بارے میں