میرپور:سنسنی خیز مقابلے کے بعد پاکستان کی فتح

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption پاکستانی بولروں نے میچ کے آخری حصے میں نپی تلی بولنگ کی

بنگلہ دیش میں جاری ٹی ٹوئنٹی کے عالمی مقابلوں میں گروپ بی کے میچ میں پاکستان نے سنسنی خیز مقابلے کے بعد آسٹریلیا کو 16 رنز سے شکست دے دی ہے۔

میرپور میں کھیلے جانے والے میچ میں آسٹریلیا نے پاکستان کو پہلے کھیلنے کی دعوت دی تو عمر اکمل کی شاندار بلے بازی کی بدولت پاکستان نے مقررہ 20 اوورز میں پانچ وکٹوں کے نقصان پر 191 رنز بنائے۔

میچ کا تفصیلی سکور کارڈ

پاکستان بمقابلہ آسٹریلیا: تصاویر میں

اس کے جواب میں آسٹریلوی ٹیم گلین میکسویل کی جارحانہ اننگز کے باوجود ہدف تک نہ پہنچ سکی اور آخری گیند پر 175 رنز بنا کر آؤٹ ہوگئی۔

192 رنز کے ہدف کے تعاقب میں جب آسٹریلوی اننگز شروع ہوئی تو آف سپنر ذوالفقار بابر نے پہلے ہی اوور میں ڈیوڈ وارنر اور شین واٹسن کو آؤٹ کر دیا۔

تاہم اس کے بعد میکسویل اور فنچ نے وکٹ کے چاروں جانب دلکش سٹروک کھیلے اور 118 رنز کی شراکت قائم کی۔

میکسویل نے صرف 32 گیندوں پر چھ چھکوں اور سات چوکوں کی مدد سے 74 رنز کی اننگز کھیلی، انھیں شاہد آفریدی نے آؤٹ کیا۔

اس وکٹ کے بعد ہی پاکستانی ٹیم میچ میں واپس آئی اور میچ پر اپنی گرفت مضبوط کی۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption میکسویل نے پاکستانی بولروں کو حاوی نہیں ہونے دیا

شاہد آفریدی نے ہی آسٹریلوی کپتان جارج بیلی کو آؤٹ کر کے ٹیم کو چوتھی وکٹ دلوائی۔ عمر گل نے بریڈ ہوج کو سعید اجمل کے ہاتھوں کیچ کروایا اور پھر کولٹر نائل کی وکٹ بھی حاصل کی۔

سعید اجمل نے انتہائی اہم موقع پر شاندار بولنگ کرتے ہوئے اننگز کے 18ویں اوور میں نہ صرف 65 رنز بنانے والے ایرون فنچ کو آؤٹ کیا بلکہ صرف ایک رن دیا۔

شیرِ بنگال نیشنل سٹیڈیم میں کامران اکمل اور احمد شہزاد نے پاکستانی اننگز شروع کی تو دوسرے ہی اوور میں احمد شہزاد کی وکٹ کی شکل میں پاکستان کو پہلا نقصان اٹھانا پڑا جو بولنجر کی گیند پر انھی کو کیچ دے بیٹھے۔

محمد حفیظ نے بولنجر کو تو دو گیندوں پر دو چوکے لگائے لیکن پانچویں اوور میں شین واٹسن کی گیند پر شاٹ مارنے کی کوشش میں بولڈ ہوگئے، انھوں نے 13 رنز بنائے۔

اس کے بعد اکمل برادران نے تیسری وکٹ کے لیے 96 رنز کی شراکت قائم کی۔

عمر اکمل نے چار چھکوں اور نو چوکوں کی مدد سے 53 گیندوں پر 94 رنز کی اننگز کھیلی اور آخری اوور میں کیچ آؤٹ ہوئے۔

اس شراکت کا خاتمہ کولٹر نائل نے کامران اکمل کو 31 کے انفرادی سکور پر کیچ آؤٹ کروا کے کیا۔ صہیب مقصود آؤٹ ہونے والے چوتھے پاکستانی بلے باز تھے، وہ بھی نائل کی ہی وکٹ بنے۔

تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption اکمل برادران نے تیسری وکٹ کے لیے 96 رنز کی شراکت قائم کی

اس میچ کے لیے پاکستان نے اپنی ٹیم میں ایک تبدیلی کی ہے۔ پاکستانی فاسٹ بولر جنید خان نے یہ میچ نہیں کھیلا اور ان کی جگہ سپنر ذوالفقار بابر کو ٹیم میں شامل کیا گیا۔

آسٹریلیا کی ٹیم نے اس میچ سے ورلڈ ٹی ٹوئنٹی میں اپنے سفر کا آغاز کیا جبکہ پاکستان کا یہ دوسرا میچ تھا۔ جمعے کو اپنے پہلے میچ میں پاکستان کو بھارت کے ہاتھوں 7 وکٹوں سے شکست ہوئی تھی۔

پاکستان اور آسٹریلیا ماضی میں 11 مرتبہ ٹی ٹوئنٹی میچوں میں مدِمقابل آ چکے ہیں جن میں سے پاکستان نے سات اور آسٹریلیا نے چار میچ جیتے ہیں۔ پاکستان کو ان سات فتوحات میں سے ایک میچ ٹائی ہونے کے بعد سپر اوور میں ملی تھی۔

دونوں ٹیمیں آخری مرتبہ سری لنکا میں سنہ 2012 کے ورلڈ ٹی ٹوئنٹی مقابلوں کے دوران ہی کسی ٹی ٹوئنٹی میچ میں آمنے سامنے آئی تھیں اور اس میچ میں پاکستانی سپنرز نے آسٹریلوی بلے بازوں کو باندھ کر رکھ دیا تھا اور فتح پاکستان کی ہوئی تھی۔

اسی بارے میں