حفیظ قومی کرکٹ ٹیم کے تمام عہدوں سے مستعفی

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption پاکستان کی کرکٹ ٹیم میں محمد حفیظ ’پروفیسر‘ کے نام سے جانے جاتے ہیں

پاکستان کرکٹ ٹیم کے ٹی ٹوئنٹی میچوں کے کپتان محمد حفیظ نے ٹی ٹوئنٹی مقابلوں میں ٹیم کی ناقص کارکردگی کے بعد کپتانی سے دستبردار ہونے کا اعلان کیا ہے۔

جمعرات کو لاہور میں کرکٹ بورڈ کے سربراہ نجم سیٹھی سے ملاقات کے بعد محمد حفیظ نے صحافیوں سے بات کرتے ہوئے مستعفی ہونے کا اعلان کیا۔

محمد حفیظ نے ٹی ٹوئنٹی ٹیم کی قیادت کے علاوہ ٹیسٹ اور ایک روزہ ٹیم کی نائب کپتانی سے بھی مستعفی ہونے کا اعلان کیا۔

انھوں نے اس موقعے پر کہا کہ ان پر مستعفی ہونے کے لیے کوئی دباؤ نہیں تھا اور یہ ان کا ذاتی فیصلہ ہے اور کرکٹ کی بہتری کے لیے ہے۔

’مستعفی ہونے کا کا فیصلہ میرا ذاتی ہے اور میں ٹیم کی اچھی بُری کارکردگی کی ذمہ داری قبول کرتا ہوں۔‘

آل راؤنڈ شاہد آفریدی کو ٹی ٹوئنٹی ٹیم کا نیا کپتان بنانے سے متعلق ایک سوال کے جواب میں محمد حفیظ نے کہا کہ انھوں نے کرکٹ بورڈ کو کلین چٹ دی ہے اور بورڈ جس کو ذمہ داری بہتر طریقے سے نبھانے کے لیے بہتر سمجھتا ہے اس کو ذمہ داری دے دے۔

واضح رہے کہ ایک روز قبل بدھ کو شاہد آفریدی نے عندیہ دیا تھا کہ اگر انھیں کپتانی کی ذمے داری سونپی گئی تو وہ اسے قبول کر لیں گے۔

اس موقعے پر معین خان نے بھی میڈیا سے بات کی اور کہا کہ ان کا بطور کوچ بورڈ سے معاہدہ ختم ہو گیا ہے اور یہ بورڈ کی صوابدید پر منحصر ہے کہ انھیں آئندہ بھی کوچ مقرر کیا جائے یا نہیں۔

پاکستان کرکٹ کے کپتان محمد حفیظ نے ورلڈ ٹی ٹوئنٹی میں ٹیم کے سیمی فائنل میں نہ پہنچنے پر عوام سے معافی مانگی تھی لیکن ساتھ ہی یہ بھی واضح کر دیا ہے کہ اس کی تہنا ذمہ داری ان پر عائد نہیں کی جاسکتی۔

ٹی ٹوئنٹی مقابلوں کے عالمی کپ میں پاکستان پہلی بار سیمی فائنل کے مرحلے میں پہنچنے میں ناکام رہا ہے۔

اسی بارے میں