تمام کھلاڑیوں کے ساتھ ایک جیسا سلوک ہونا چاہیے: سلمان بٹ

تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption ’میچ فکسنگ پر تحقیقات ہوچکی ہیں اب اس کی تفصیلات میں نہیں جانا چاہتا‘

میچ فکسنگ میں سزا پانے والے قومی کرکٹ ٹیم کے سابق کپتان سلمان بٹ کا کہنا ہے کہ غلطی چھوٹی ہو یا بڑی سب اپنی اپنی سزا پوری کر رہے ہیں تمام کھلاڑیوں کے ساتھ ایک جیسا سلوک ہونا چاہیے۔

لاہور میں میڈیا سے بات کرتے ہوئے محمد عامر کی معمولی غلطی کے سوال پر قومی ٹیم کے سابق کپتان سلمان بٹ نے کہا کہ کس کی غلطی بڑی ہے یا چھوٹی اس کے بارے میں کچھ نہیں کہا جاسکتا۔

’میچ فکسنگ پر تحقیقات ہوچکی ہیں اب اس کی تفصیلات میں نہیں جانا چاہتا۔ اپنی غلطی کی سزا پوری کر رہے ہیں اور ہم پر عائد پابندی 2015 میں ختم ہوگی۔ لہٰذا سزا پانے والے تمام کھلاڑیوں کے ساتھ ایک جیسا ہی سلوک ہونا چاہیے۔‘

یاد رہے کہ جمعہ کو لاہور میں پریس کانفرنس کے دوران چیئرمین پی سی بی نجم سیٹھی کا کہنا تھا کہ انہوں نے آئی سی سی کے اجلاس میں محمد عامر کا بھی معاملہ اٹھایا تھا۔ ان کا کہنا تھا کہ رواں سال جون میں آئی سی سی حکام پاکستان آئیں گے اور امید ہے کہ محمد عامر کی سزا میں ایک سال کی کمی کردی جائے گی اور وہ جلد انٹرنیشنل کرکٹ کھیلے گا۔

واضح رہے کہ 2010 میں دورۂ برطانیہ کے موقعے پر پاکستان کے تین کھلاڑیوں محمد عامر، محمد آصف اور سلمان بٹ پر سپاٹ فکسنگ کے الزام کے بعد پانچ پانچ سال پابندی کی سزائیں سنائی گئی تھیں۔ یہ سزائیں 2015 میں ختم ہوں گی۔ اگر جون میں محمد عامر کی سزا ایک سال کم کر کے چار سال ہو گئی تو وہ اس کے بعد فوری طور پر کرکٹ کھیل سکیں گے۔

یاد رہے کہ پچھلے سال سلمان بٹ نے پہلی مرتبہ سپاٹ فکسنگ میں ملوث ہونے کا اعتراف کرتے ہوئے قوم سے معافی مانگی تھی۔

سلمان بٹ نےسپاٹ فکسنگ میں ملوث ہونے کا اعتراف کرتے ہوئے کہا تھا ’وہ آئی سی سی ٹریبیونل کے ہر فیصلے کو تسلیم کرتے ہیں اور قوم سے معافی مانگتے ہیں۔ میں آج تمام پاکستانیوں اور پورے دنیا میں موجود کرکٹ کے شائقین سے اپنی غلطی کی معافی مانگتا ہوں۔‘

سابق کپتان نے کہا تھا کہ انھوں نے شائقین کی دل آزاری کی، جس پر وہ شرمندہ ہیں، کرکٹ کھیلنے والوں کو سپاٹ فکسنگ سے دور رہنا چاہیے تا کہ انھیں اپنے کیرئیر میں کبھی پریشانی کا سامنا نہ کرنا پڑے۔

سلمان بٹ نے کہا کہ ان کی سزا میں دو سال باقی ہیں اور انھوں نے انٹرنیشنل کرکٹ کونسل سے ڈومیسٹک کرکٹ کھیلنے کی اجازت دینے کی بھی درخواست کی ہے۔

اسی بارے میں