فیفا ورلڈ کپ کی تاریخ

تصویر کے کاپی رائٹ AFP

سنہ 1930 میں یوروگوائے میں شروع ہونے والے فٹبال کے عالمی مقابلوں نے عالمی جنگ، قدرتی آفات اور دہشت گردی کے واقعات کے پیش منظر میں ایک طویل سفر طے کیا ہے۔

دعوتی بنیاد پر 13 ممالک کی شرکت سے جن مقابلوں کا آغاز ہوا تھا، آج ان میں شرکت کے لیے دنیا بھر سے 200 ممالک کی ٹیمیں مقابلہ کرتی ہیں۔

یوروگوائے 1930، اٹلی 1934 اور فرانس 1938

Image caption جولیئیس ریمٹ نے پہلے ورلڈ کپ کی ٹرافی یوروگوائے کے حکام کے حوالے کی تھی

لاطینی امریکہ کے ملک یوروگوائے کے حصے میں 1930 میں ہونے والے پہلے ٹورنامنٹ کی میزبانی آئی جس کے بعد براعظم یورپ کے دو ممالک اٹلی اور فرانس اس کے میزبان ٹھہرے۔

پہلے ورلڈ کپ میں میزبان ٹیم کی فتح کا رواج دوسرے ورلڈ کپ میں بھی جاری رہا لیکن پھر اٹلی کی ٹیم چار برس بعد فرانس میں یہ مقابلہ جیت کر اعزاز کا دفاع کرنے والی پہلی ٹیم بنی۔

برازیل 1950 اور سوئٹزرلینڈ 1954

تصویر کے کاپی رائٹ b
Image caption مغربی جرمنی کے میکس مارلوک نے فائنل میں ہنگری کے خلاف گول کیا

دوسری جنگِ عظیم نے دنیا بھر کی طرح کھیلوں کے ان عالمی مقابلوں کو بھی متاثر کیا اور فٹبال کا اگلا ورلڈ کپ 12 برس بعد ایک بار پھر لاطینی امریکہ میں منعقد ہوا۔

اس مرتبہ میزبان اور ٹورنامنٹ کی فیورٹ ٹیم برازیل تھی جسے فائنل میں یوروگوئے کے ہاتھوں اپ سیٹ شکست کا سامنا کرنا پڑا۔

1954 میں اس ٹورنامنٹ کی میزبانی سوئٹزرلینڈ کو ملی اور مغربی جرمنی نے برن میں کھیلے گئے فائنل میں ہنگری کو شکست دی۔ اس میچ میں جرمنی کی فتح کو ’برن کا معجزہ‘ بھی کہا جاتا ہے۔

سویڈن 1958 اور چلی 1962

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption پیلے 1958 کے ورلڈ کپ کے ہیرو ثابت ہوئے

1958 میں یہ مقابلے یورپی ملک سویڈن میں منعقد ہوئے اور فائنل میں برازیل کے 17 سالہ فٹبالر پیلے نے دو گول کر کے نہ صرف اپنی ٹیم کو چیمپیئن بنوایا بلکہ وہ خود دنیا بھر میں مشہور ہوگئے۔

چار برس بعد یہ مقابلے جنوبی امریکی ملک چلی میں اس وقت منعقد ہوئے جب ملک ایک شدید زلزلے کے اثرات سے نبردآزما تھا۔ اس ٹورنامنٹ میں فتح ایک بار پھر برازیل کے حصے میں آئی۔

انگلینڈ 1966

تصویر کے کاپی رائٹ PA
Image caption انگلش سٹرائیکر جیف ہرسٹ نے فائنل میں ہیٹ ٹرک کی تھی

1966 میں پہلی مرتبہ انگلینڈ کو اس ٹورنامنٹ کی میزبانی کا موقع ملا اور انگلش ٹیم ہوم گراؤنڈ اور ہوم کراؤڈ کا بھرپور فائدہ اٹھاتے ہوئے فائنل میں پہنچی۔

فائنل میں جیف ہرسٹ مردِ میدان ثابت ہوئے اور ان کی ہیٹ ٹرک نے انگلینڈ کو پہلی بار جولیئیس ریمٹ ٹرافی اٹھانے کا موقع فراہم کیا۔

میکسیکو 1970

تصویر کے کاپی رائٹ b
Image caption 1970 کا ورلڈ کپ برازیل کے نام رہا

میکسیکو میں منعقد ہونے والا یہ ورلڈ کپ تاریخ کا پہلا فٹبال کا ٹورنامنٹ تھا جسے دنیا بھر میں ناظرین نے رنگین ٹی وی پر دیکھا۔

اس ٹورنامنٹ میں آغاز سے اختتام تک برازیلی ٹیم چھائی رہی اور تیسری مرتبہ یہ اعزاز جیتنے میں کامیاب رہی۔

مغربی جرمنی 1974

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption نیدرلینڈز کی ’ٹوٹل فٹبال‘ سے شائقین محظوظ ہوئے

مغربی جرمنی نے سرد جنگ کے زمانے میں 1974 میں عالمی کپ کی میزبانی کی۔

فائنل میں میزبان ملک کا مقابلہ ایک اور یورپی ملک دی نیدرلینڈز سے تھا جن کی ’ٹوٹل فٹبال‘ سے شائقین محظوظ تو ہوئے لیکن فتح مغربی جرمنی کے حصے میں ہی آئی۔

ارجنٹائن 1978

Image caption 1978 میں ارجنٹائن نے پہلی بار فٹبال ورلڈ کپ جیتا

لاطینی امریکی ملک ارجنٹائن جب 1978 میں فٹبال کے ورلڈ کپ کا میزبان بنا تو وہاں فوجی حکومت تھی۔

میزبان ملک کے فاتح رہنے کا چلن ان مقابلوں میں بھی جاری رہا اور ماریو کیمپس نے ارجنٹائن کو پہلی بار فٹبال کی دنیا کا بادشاہ بنا دیا۔

سپین 1982

تصویر کے کاپی رائٹ b
Image caption پاؤلو روسی 1982 کے ورلڈ کپ میں بہت اچھا کھیلے

جنرل فرانکو کی موت کے سات سال بعد ایک جمہوری سپین ورلڈ کپ کا میزبان بنا۔

لیکن یہ میزبانی اسے ٹائٹل نہ دلوا سکی اور فائنل میں فتح اٹلی کے ہاتھ آئی اور پاؤلو راسی نے اپنی اطالوی ٹیم کو تیسری مرتبہ عالمی چیمپیئن بنوا دیا۔

میکسیکو 1986

تصویر کے کاپی رائٹ b
Image caption ارجنٹائن کے سپر سٹار ڈیاگو میراڈونا نے اپنی ٹیم کی کامیابی میں کلیدی کردار ادا کیا

یہ میکسیکو کے لیے ورلڈ کپ کی میزبانی کا دوسرا موقع تھا اور یہ ٹورنامنٹ ایسے وقت میں ہوا جب اس کے آغاز سے آٹھ ماہ قبل وہاں شدید زلزلہ آیا۔

یہ ورلڈ کپ ارجنٹائن کے سپر سٹار ڈیاگو میراڈونا کا ٹورنامنٹ کہا جاتا ہے جنھوں نے ایک لحاظ سے تنِ تنہا ارجنٹائن کو دوسری مرتبہ یہ اعزاز دلوا دیا۔

اٹلی 1990

تصویر کے کاپی رائٹ b
Image caption مغربی جرمنی تین بار عالمی چیمپیئن بننے والے ممالک کی فہرست میں شامل ہوا

آٹھ برس کے وقفے کے بعد ورلڈ کپ کی میزبانی ایک بار پھر یورپ کو ملی اور میزبان تھا تین مرتبہ کا چیمپیئن اٹلی۔

یہ ٹورنامنٹ ٹیموں کے دفاعی اور منفی کھیل اور کم گولوں کی وجہ سے یاد رکھا جائے گا۔

1966 کے بعد ورلڈ کپ میں انگلینڈ کی بہترین کارکردگی کے باوجود فتح ان سے دور رہی اور مغربی جرمنی تین بار عالمی چیمپیئن بننے والے ممالک کی فہرست میں شامل ہوا۔

ریاست ہائے متحدہ امریکہ 1994

تصویر کے کاپی رائٹ b
Image caption برازیلی کپتان ڈنگا اور روماریو ورلڈ کپ ٹرافی کے ہمراہ

تاریخ میں پہلی مرتبہ امریکہ کو فٹبال کا عالمی میلہ سجانے کا موقع ملا اور امریکی عوام کے جوش و خروش نے اس کا لطف دوبالا کر دیا۔

اس ٹورنامنٹ کا فائنل اٹلی کے روبرٹو بیجیو کی پنلٹی کک کی وجہ سے یادگار بن گیا جو اٹلی کی شکست اور برازیل کے چوتھی مرتبہ چیمپیئن بننے کی وجہ بنی۔

فرانس 1998

تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption زین الدین زیدان کا شمار فرانس کے بہترین فٹبالرز میں ہوتا ہے

ایک بار پھر ورلڈ کپ میں میزبان ملک کے جیتنے کی روایت زندہ ہوئی جب 1998 میں فرانس نے یہ ٹورنامنٹ جیتا۔

فرانس کی کثیر الثقافتی ٹیم کے لیے زین الدین زیدان ایک مثال ثابت ہوئے اور ان کا جوش فرانس کے لیے پہلا ورلڈ کپ جیتنے کی اہم وجہ بنا۔

جاپان اور جنوبی کوریا 2002

تصویر کے کاپی رائٹ b
Image caption رونالڈو نے برازیل کو پانچویں بار ورلڈ کپ دلوانے میں اہم کردار ادا کیا

نئی صدی کا پہلا فٹبال ورلڈ کپ پہلی مرتبہ ایشیا میں منعقد ہوا اور میزبانی مشترکہ طور پر جاپان اور جنوبی کوریا کے حصے میں آئی۔

اس ٹورنامنٹ میں سب سے زیادہ گول کرنے کا اعزاز برازیل کے رونالڈو کو حاصل ہوا جنھیں سنہری جوتا اور ان کی ٹیم کو ورلڈ کپ کی سنہری ٹرافی ملی۔

یہ برازیل کا پانچواں ورلڈکپ تھا۔

جرمنی 2006

Image caption اٹلی کی ٹیم 2006 میں پورا ٹورنامنٹ بہت اچھا کھیلی

یہ مشرقی اور مغربی جرمنی کے ایک ہوجانے کے بعد پہلا موقع تھا کہ ورلڈ کپ کا میزبان یہ یورپی ملک بنا۔

فائنل میں بھی دو یورپی ٹیمیں ہی مدِمقابل آئیں لیکن فتح اٹلی کے حصے میں آئی اور نامرادی فرانس کا مقدر بنی۔

اس ورلڈ کپ کے فائنل کو زین الدین زیدان کی اس ٹکر کی وجہ سے یاد رکھا جائے گا جس کے نتیجے میں انھیں میدان بدر کر دیا گیا۔

جنوبی افریقہ 2010

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption سپین کے کپتان کیسیئس 2010 کے ورلڈ کپ کی ٹرافی کے ہمراہ

ایشیا کے بعد اب براعظم افریقہ کے پہلی بار ورلڈ کپ کی میزبانی کرنے کی باری آئی اور یہ موقع جنوبی افریقہ کو ملا۔

اس ٹورنامنٹ کے آغاز سے قبل ہی سپین کو فیورٹ قرار دیا جا رہا تھا اور یہ پیشین گوئی صد فیصد صحیح ثابت ہوئی۔

ہالینڈ کو شکست دے کر ہسپانوی ٹیم نے اپنا پہلا عالمی کپ جیتا اور اب چار برس بعد جب وہ برازیل میں اس کا دفاع کرنے جا رہی ہے تو وہ پھر فیفا کی عالمی درجہ بندی میں سرِ فہرست ہے۔

اسی بارے میں