ورلڈ کپ 2014: آسٹریلیا اور کیمرون کا سفر تمام

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption میچ برابر ہونے کے 9 منٹ بعد آسٹریلوی کیپر نے وہ غلطی کی جو اس ٹورنامنٹ سے ان کی ٹیم کے اخراج کا باعث بن گئی۔

برازیل میں جاری فٹبال ورلڈ کپ کے گروپ بی میں دفاعی چیمپیئن سپین کو بری طرح ہرانے والی ہالینڈ کی ٹیم آسٹریلیا سے جیت تو گئی لیکن شائقین ڈچ ٹیم کی وہ کارکردگی دیکھنے سے محروم رہے جس کی انھیں توقع تھی۔

ہالینڈ اور ٹورنامنٹ کے سب سے کم رینکنگ والی ٹیم آسٹریلیا کا میچ بدھ کو پورٹ الیگرے کے بیرا۔ریو سٹیڈیم میں کھیلا گیا جہاں ہالینڈ کی ٹیم کا حوصلہ بڑھانے کے ان کے بادشاہ ولیم الیگزینڈر اور ملکہ میکسم بھی سٹیڈیم میں موجود تھے۔

ہالینڈ نے یہ میچ دو کے مقابلے میں تین گول سے جیتا اور یوں اس ورلڈ کپ میں آسٹریلیا کا سفر تمام ہوگیا۔

اس میچ کے ابتدائی لمحات میں کھیل قدرے آہستہ رہا اور دونوں ٹیمیں خاص کر ہالینڈ اپنے تیز انداز میں نہیں کھیل پائی۔

ہالینڈ کی ٹیم دفاعی لحاظ سے میچ کے پہلے ہاف میں خاصی کمزور نظر آئی جبکہ آسٹریلیا نے اپنی کارکردگی سے کہیں سے یہ نہیں لگنے دیا کہ وہ عالمی درجہ بندی میں ہالینڈ سے کہیں نیچے ہے۔

میچ کا پہلا گول 19ویں منٹ میں ہالینڈ کے آرجن رابن نے کیا۔ یہ اس ورلڈ کپ میں رابن کا تیسرا گول تھا۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption آسٹریلیا نے اپنی کارکردگی سے کہیں سے یہ نہیں لگنے دیا کہ وہ عالمی درجہ بندی میں ہالینڈ سے کہیں نیچے ہے

ہالینڈ کے کھلاڑی ابھی پوری طرح اس گول کی خوشی منا بھی نہ پائے تھے کہ آسٹریلوی کھلاڑی ٹم کے ہل نے ایک مشکل پاس کو شاندار طریقے سےگول میں تبدیل کر کے میچ برابر کر دیا۔

ان دونوں گولوں کے درمیان صرف 69 سیکنڈز کا وقفہ تھا اور پہلے ہاف کے اختتام پر میچ ایک ایک گول سے برابر تھا۔

پہلے ہاف کے ختم ہونے سے ایک منٹ قبل آسٹریلیا کے لیے گول کرنے والے ٹم کے ہل کو ہالینڈ کے کھلاڑی برونو انڈی کو بری طرح گرانے پر پیلا کارڈ دکھا دیا گیا۔ لگاتار دو میچوں میں کارڈ ملنے کی وجہ سے اب کے ہل آسٹریلیا کے لیے اگلے میچ میں حصہ نہیں لے سکیں گے۔

دوسرا ہاف شروع ہوتے ہی ہالینڈ کے سٹار کھلاڑی روبن وین پرسی کو بھی اس وقت پیلا کارڈ ملا جب انھوں نے آسٹریلوی کھلاڑی سپرانوؤک کے چہرے پر کہنی ماری اور یوں وین پرسی بھی چلی کے خلاف میچ سے باہر ہوگئے۔

میچ کے 53ویں منٹ میں ڈی کے اندر ڈچ کھلاڑی کے ہاتھ سے گیند ٹکرانے پر ریفری نے آسٹریلیا کو پنلٹی دے دی جس پر کپتان جیڈیناک نے گول کر کے اپنی ٹیم کو برتری دلوا دی۔ مبصرین کے خیال میں یہ پینلٹی متنازع تھی۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption روبن وین پرسی کو بھی اس وقت پیلا کارڈ ملا جب انھوں نے آسٹریلوی کھلاڑی سپرانوؤک کے چہرے پر کہنی ماری

خسارے میں جانے کے باوجود ہالینڈ کے کھلاڑیوں نے ہمت نہیں ہاری اور آسٹریلوی ٹیم پر دباؤ ڈالتے رہے جس کا نتیجہ چار منٹ بعد ہی ان کے حق میں یوں نکلا کہ رابن وین پرسی نے گول کر کے آسٹریلوی برتری کا خاتمہ کر دیا۔

میچ برابر ہونے کے 9 منٹ بعد آسٹریلوی کیپر نے وہ غلطی کی جو اس ٹورنامنٹ سے ان کی ٹیم کے اخراج کا باعث بن گئی۔

آسٹریلوی کیپر میٹ رائن متبادل ڈچ کھلاڑی میمفس ڈی پے کی تیس گز سے لگائی آسان شاٹ روکنے میں ناکام رہے اورگیند آسٹریلوی گول میں چلی گئی۔ ڈچ ٹیم کی یہ برتری میچ کے اختتام تک قائم رہی۔

خیال رہے کہ ہالینڈ نے اب تک کھیلے گئے اپنے میچوں میں 8 گول کیے ہیں جو کہ گزشتہ ورلڈ کپ کے چیمپیئن سپین کی طرف سے اُس ٹورنامنٹ میں کیے گئے کُل گولوں سے بھی زیادہ ہیں۔

کیمرون بھی ورلڈ کپ سے باہر

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption ماریو منزوکچ نے کیمرون کے خلاف دو گول کیے

آسٹریلیا کے علاوہ بدھ کو ورلڈ کپ سے باہر ہونے والی ایک اور ٹیم کیمرون کی تھی۔

کیمرون کو گروپ اے کے ایک میچ میں کروئیشیا نے صفر کے مقابلے میں چار گول سے شکست دے دی۔

مناس میں کھیلے جانے والے میچ میں کیمرون کی ٹیم میں اعتماد، مہارت اور ٹیم روک کی کمی دکھائی دی۔

کروئیشیا کی جانب سے پہلے میچ میں معطلی کی وجہ سے شرکت نہ کرنے والے ماریو منزوکچ نے دو گول کیے۔

ان کے علاوہ اوئیکا اولچ اور ایوان پیریسچ نے ایک ایک مرتبہ گیند کو گول کی راہ دکھلائی۔

اس شکست کے بعد کیمرون کی ٹیم ورلڈکپ سے باہر ہوگئی ہے اور یہ لگاتار پانچواں موقع ہے کہ ورلڈ کپ میں ایسا ہوا ہے۔

اسی بارے میں