ورلڈ کپ: سپین نے بالاخر فتح کا ذائقہ چکھ ہی لیا

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption سپین کے دونوں گول انئیستا کے پاس پر ہوئے

برازیل میں جاری فٹبال ورلڈ کپ کے گروپ بی کے ایک میچ میں دفاعی چیمپیئن سپین نے آسٹریلیا کو صفر کے مقابلے میں تین گول سے شکست دے دی ہے۔

سپین اور آسٹریلیا دونوں کا اس ورلڈ کپ میں سفر تو پہلے ہی تمام ہو چکا ہے لیکن اس فتح کے نتیجے میں سپین کو ٹورنامنٹ میں پہلے پوائنٹس ملے۔

برازیل میں فٹبال کا 20واں عالمی میلہ: خصوصی ضمیمہ

کوئرتیبا میں پیر کو کھیلے جانے والے میچ کے پہلے ہاف کے آغاز میں آسٹریلوی ٹیم نے عمدہ کھیل کا مظاہرہ کیا اورگیند زیادہ تر اپنے کنٹرول میں رکھی۔

تاہم 15 منٹ کے کھیل کے بعد سپین کی ٹیم آہستہ آہستہ فارم میں آئی اور آسٹریلوی گول پر حملے شروع کیے۔

سپین کے ڈیوڈ ویا نے کئی اچھی شاٹس لگائیں اور آسٹریلوی ٹیم کو دباؤ میں لائے۔

سپین کے اس دباؤ کا نتیجہ 36 ویں منٹ میں گول کی صورت میں نکلا جب ویا نے انئیستا کے پاس پر ایڑھی گیند آسٹریلوی گول میں پھینک کر سپین کو برتری دلوا دی۔

پہلے ہاف کے اختتام پر سپین کی برتری برقرار رہی۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption فرنینڈو ٹوریس نے دوسرے ہاف میں سپین کی برتری دوگنی کر دی

دوسرے ہاف کے آغاز سے ہی سپین کی فارورڈ لائن نے برتری میں اضافے کی کوششیں کیں لیکن آسٹریلوی کھلاڑیوں کے پہلے ہاف کی طرح ابتدا میں گیند بہتر انداز میں کنٹرول کی۔

دوسرے ہاف کے ابتدائی 20 منٹ میں 60 فیصد وقت آسٹریلوی کھلاڑیوں کے قبضے میں رہی لیکن اس کے باوجود وہ گول کرنے میں ناکام رہے۔

سپین کا دوسرا گول بھی انیئستا کے پاس کا مرہونِ منت تھا۔ ان کے عمدہ پاس پر فرنینڈو ٹوریس نے بھی 69ویں منٹ میں گیند گول میں پھینکنے میں کوئی غلطی نہیں کی۔

سپین کے لیے پہلا گول کرنے والے ڈیوڈ ویا کی جگہ میدان میں اتارے جانے والے ماتا نے تیسرا گول کیا اور فیبریگاس کے آسٹریلوی دفاعی کھلاڑیوں کے اوپر سے دیے گئے پاس پر ماتا کے پاس گول کرنے کے لیے وقت ہی وقت تھا۔

ہسپانوی ٹیم کی یہ برتری میچ کے آخر تک قائم رہی اور یوں 2010 کے دفاعی چیمپیئن کا ورلڈ کپ 2014 میں صرف تین پوائنٹس اور گروپ میں تیسری پوزیشن کے ساتھ اپنے اختتام کو پہنچا۔

یہ فٹبال ورلڈ کپ کی تاریخ میں مجموعی طور پر پانچواں اور لگاتار دوسرا موقع ہے کہ دفاعی چیمپیئن کا ٹورنامنٹ پہلے ہی راؤنڈ میں ختم ہوا ہو۔

اس سے قبل 2010 میں دفاعی چیمپیئن اٹلی کی ٹیم بھی پہلے ہی راؤنڈ میں باہر ہوگئی تھی۔

اسی بارے میں