فٹبال ورلڈ کپ کے 11 متنازع واقعات

تصویر کے کاپی رائٹ AFP

یوروگوائے کے لوئس سواریز برازیل میں جاری فٹبال ورلڈ کپ میں ایک بار پھر مخالف اطالوی کھلاڑی کو کاٹنے کے الزام کے بعد خبروں میں ہیں۔

بی بی سی سپورٹس نے فٹبال کے عالمی مقابلوں کے 11 متنازع واقعات کی فہرست مرتب کی ہے۔

1۔ زیدان کی ماتیزاری کو ٹکر

تصویر کے کاپی رائٹ Getty

فرانسیسی فٹبال ٹیم کے کپتان زین الدین زیدان نے برلن میں 2006 کے فٹبال ورلڈ کپ کے فائنل میں اٹلی کے مارکو ماتیرازی کو سینے میں ٹکّر دے ماری تھی۔ اس اقدام پر انھیں سرخ کارڈ دکھا کر میدان سے باہر بھیج دیا گیا تھا۔

کئی ماہ بعد زیدان نے دعویٰ کیا تھا کہ اطالوی کھلاڑی نے زیدان کی بہن کے بارے میں نازیبا کلمات کہے تھے جس پر انھوں نے یہ قدم اٹھایا۔

2۔ کارلوس کا فاؤل

1986 کے ورلڈ کپ کے کوارٹر فائنل میں گول کرنے کی کوشش کے دوران فرانس کے سٹرائیکر برونو بیلون کو برازیل کے گول کیپر کارلوس نے گرایا۔

ریفری نے فری کک نہ دینے کا فیصلہ کیا جسے مبصرین نے ’بہت بری غلطی‘ قرار دیا۔

3۔ پیٹرک بیٹسٹن کی بےہوشی

تصویر کے کاپی رائٹ Getty

سنہ 1992 کے سیمی فائنل میں مشرقی جرمنی کے گول کیپر نے فرانس کے دفاعی کھلاڑی کے خلاف فاؤل کر کے انھیں گرا دیا۔

فرانسیسی کھلاڑی پیٹرک بٹیسٹن بےہوش ہوگئے جس کے بعد ان کو میدان میں ہی آکسیجن دی گئی۔ اس سب کے ہونے کے باوجود ریفری نے فرانس کو صرف گول کک دی۔

4۔فرینک رائیکارڈ کا تھوکنا

تصویر کے کاپی رائٹ Getty

سنہ 1990 کے ورلڈ کپ کے دوسرے راؤنڈ کے میچ میں ہالینڈ کے مڈفیلڈر فرینک رائیکارڈ نے مشرقی جرمنی کے کھلاڑی روڈی والر پر تھوکا جس کے بعد 22 منٹ تک دونوں کھلاڑی آپس میں وقفے وقفے سے جھگڑتے رہے جس کے بعد ریفری نے انھیں میدان سے باہر بھیج دیا۔

5۔ ’ہینڈ آف گاڈ‘

1986 کے ورلڈکپ کوارٹر فائنل میچ میں ارجنٹائن کے سٹرائیکر میراڈونا نے انگلینڈ کے خلاف میچ میں ہاتھ سے گول کیا اور یہ میچ ان کی ٹیم نے جیت لیا۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty

میراڈونا نے میچ کے بعد صحافیوں کو بتایا کہ انھیں ’خدائی ہاتھ ‘ کی مدد حاصل تھی۔

6۔انتونیو راتن کی میدان بدری

ورلڈکپ 1966 کے لندن کے ویمبلے سٹیڈیم میں ہونے والے کوارٹر فائنل میں ریفری نے ارجنٹینا کے کپتان انٹونیو ریٹن کو باہر بھیج دیا تھا۔ تاہم ریٹن نےگراؤنڈ سے باہر جانے سے انکار کردیا جس کے بعد میچ التوا کا شکار ہوگیا۔

7۔ سواریز کا ہینڈ بال

2010 کے ورلڈ کپ میں کوارٹر فائنل میں گھانا اور یوروگوائے کے مابین میچ میں لوئس سواریز نے اضافی وقت میں گھانا کا یقینی گول ہاتھ سے روک لیا۔ اس پر سواریز کو میدان سے باہر بھیج دیا گیا اور گھانا کو پنلٹی ملی جس پر گول نہ ہو سکا۔ میچ کا فیصلہ پنلٹی شوٹ آؤٹ پر ہوا جہاں یوروگوائے نے میچ دو کے مقابلے میں چار گول سے جیت لیا۔

8۔ نوریمبرگ کی جنگ

تصویر کے کاپی رائٹ Getty

سنہ 2006 کے ورلڈکپ میں ہالینڈ اور پرتگال کے درمیان ہونے والا میچ جارحانہ کھیل کے لیے مدتوں یاد رکھا جائے گا۔ اس میچ میں ریفری نے 16 پیلے کارڈ دکھائے اور 4 کھلاڑیوں کو میدان سے باہر بھیجا گیا۔ جرمنی میں کھیلے گئے اس میچ کو نوریمبرگ کی جنگ کہا جاتا ہے اور پرتگال نے اس میچ میں فتح حاصل کی تھی۔

9. ڈی جانگ کی کراٹے کک

تصویر کے کاپی رائٹ Getty

سنہ 2010 کے ورلڈ کپ فائنل میں ہالینڈ کے کھلاڑی ڈی جانگ نے سپین کے زابی الونزو سے بال چھینتے ہوئے ان کے سینے پر لات ماری۔ ان کی حرکت کو ’کراٹے کک‘ سے تشبیہ دی گئی تاہم ریفری نے انھیں صرف پیلا کارڈ ہی دکھایا اور وہ میدان بدر ہونے سے بچ گئے۔

10۔ریوالڈو کا ڈرامہ

تصویر کے کاپی رائٹ Getty

2002 کے ورلڈکپ میں برازیلی کھلاڑی ریوالڈو کو ترکی کے دفاعی کھلاڑی ہکان انسال کی کک کی ہوئی گیند ٹانگ پر لگی تاہم ریوالڈو اپنا سر پکڑ کر گر گئے اور کمال یہ ہوا کہ ریفری نے ہکان انسال کو میدان سے باہر بھیج دیا۔

11۔ سان تیاگو کی جنگ

1962 میں اٹلی اور چلی کے مابین کھیلے گئے ورلڈکپ میچ کو سان تیاگوکی جنگ کے نام سے یاد کیا جاتا ہے۔ اس میچ میں دو اطالوی کھلاڑیوں کو ریفری نے ریڈ کارڈ دکھا کر باہر بھیجا تھا۔