میسی یا میراڈونا ثانی

تصویر کے کاپی رائٹ Other

نیمار ورلڈ کپ سے باہر سٹریچر پرگئے، جیمز روڈ ریگز آنسوؤں کے ساتھ، جبکہ لوئس سواریز اپنی عزت گنوا کر۔ اسی طرح رونالڈو اور وین رونی بھی کوئی جوہر نہیں دکھا پائے اور زلاتان ابرہیموچ اپنےگھر پر پڑے رہے۔

لیکن فٹبال کے اِن ستاروں میں سب سے بڑا سٹار کھلاڑی لوئنل میسی ابھی تک نہ صرف میدان میں کھڑا ہے، بلکہ پوری آب وتاب کے جگمگا رہا اور مذید دو میچوں میں کامیابی سے اس کا شمار فٹبال کی تاریخ کے بڑے بڑے ناموں میں ہو سکتا ہے۔

میسی نے ابھی اپنے تمام جوہر نہیں دکھائے لیکن اس کے باوجود بارسلونا کا یہ فارورڈ ارجنٹائن کو تاریخی طور پر ایک قدم آگے لے گیا ہے، کیونکہ سنہ 1990 کے بعد یہ پہلا موقع ہے کہ ارجنٹائن بلجیئم کو شکست دے کر سیمی فائنل میں پہنچ گیا ہے۔

ارجنٹائن کے کوچ کے بقول ’وہ ہمارے لیے صحرا میں پانی ثابت ہوئے۔ جب زمین خشک ہو چکی تھی، میسی نے ہمیں ایک اور موقع دیا کہ ہم تازہ ہوا میں سانس لے سکیں۔‘

اس ورلڈ کپ کے دوران جس دن وہ ارجنٹائن کی طرف سے 91ویں مرتبہ عالمی کپ کے میدان میں اترے تو انھوں نے میراڈونا کا ریکارڈ برابر کر دیا تھا۔ اس کے بعد میراڈونا کے ساتھ میسی کا موازنہ کرنا کوئی اچھنبے کی بات نہیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ

بلجیئم کے خلاف میسی کی کارکردگی اُس معیار کی نہیں تھی جو میراڈونا نے سنہ 1986 کے سیمی فائنل میں دکھائی تھی جب بلجیئم اور ارجنٹائن میکسیکو سٹی میں ٹکرائے تھے، لیکن میسی کی کارکردگی اتنی اچھی ضرور تھی کہ دونوں کھلاڑیوں کا تقابل کیا جا سکے۔

جب آپ وہ منظر دیکھتے ہیں جب میسی نے پہلے ہاف میں بلجیئم کے پانچ کھلاڑیوں کو نچانے کے بعد ارجنٹائن کو فری کِک دلوائی تو آپ کو بالکل اس جیسا سنہ 1982 کا ایک منظر ضرور یاد آتا ہے جب میراڈونا بال لیے ہوئے بیلجیئم کے گول کی جانب اڑتے جا رہے تھے اور بیچارے چھ مخالف کھلاڑیوں کو سمجھ نہیں آ رہی تھی کہ اِس شخص کے ساتھ کیا کریں۔

بالکل سنہ 1982 کی طرح اس مرتبہ بھی بیلجیئم کے کھلاڑی 10 نمبر کی شرٹ کی جانب یوں کھِچے چلے آ رہے تھے جیسے لوہے کی کئی کیلیں بیک وقت مقناطیس کو چمٹ جاتی ہیں۔

صرف یہی ایک منظر نہیں ، بلکہ اس میچ میں کئی لمحات ایسے تھے جبکہ میسی کو دیکھ کر آپ کو میراڈونا یاد آئے۔

بیلجیئم کے خلاف میچ کے بارے میں ارجنٹائن کے کوچ الیگزینڈرو سبیلا کا کہنا ہے کہ ’ میسی کی کارکردگی زبردست تھی۔‘

’یہ صرف گول سکور کی بات نہیں، بلکہ میسی مخالف ٹیم کے تین چار کھلاڑیوں کو اپنے ساتھ باندھے رکھتے ہیں۔ میسی ہماری امید ہیں۔ وہ دشمن کے لیے خطرات پیدا کرتے ہیں اور میدان میں ان کا رویہ میچ کے لیے فیصلہ کُن ہوتا ہے۔ ہم میسی کی بہت قدر کرتے ہیں۔‘

تصویر کے کاپی رائٹ

دیکھتے ہیں کہ میسی آگے کیا کرتے ہیں؟ کیا وہ واقع سیمی فائنل اور پھر فائنل میں ارجنٹائن کو وہ کامیابی دلا سکتے ہیں جو سنہ 86 میں میراڈونا اور ان کے ساتھیوں نے دلوائی تھی۔

چاہے تاریخ سنہ 86 کو صرف میراڈونا کے حوالے سے یاد کرے، لیکن حقیقت بہرحال یہی ہے کہ اُس وقت بھی ارجنٹائن کی ٹیم صرف ایک کھلاڑی پر مشتمل نہیں تھی اور نہ ہی اُس مرتبہ کے سیمی فائنل میں ہوگی۔

لیکن اس کے باوجود ارجنٹائن کے کھلاڑیوں اور ان کے سپورٹرز کو برازیل میں جب بھی امید اور جذبے کی ضرورت ہوگی، تو ان سب کی نظریں اس شخص کی جانب اٹھیں گی جس کی کمر پر لکھا ہوگا نمبر 10۔