میسی ٹیکس فراڈ کے مقدمے کا سامنا کریں گے

لائنل میسی تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption ارجنٹائن کے کپتان اور بارسیلونا کے سٹار کھلاڑی اپنے اوپر لگے الزامات کی تردید کرتے رہے ہیں

ایک ہسپانوی جج نے ایک فیصلے میں کہا ہے کہ بارسیلونا اور ارجنٹائن کے سٹار فٹبالر لائنل میسی کو مبینہ طور پر ٹیکس کے فراڈ کے مقدمے کا سامنا کرنا پڑے گا۔

جج نے استغاثہ کی اس سفارش کو رد کر دیا کہ میسی پر سے الزامات واپس لے لیے جائیں کیونکہ ان کے والد ان کے مالی معاملات کے ذمہ دار ہیں۔

میسی اور ان کے والد جارج پر الزام ہے کہ انھوں نے پانچ ملین پاؤنڈ کا ٹیکس فراڈ کیا ہے۔

دونوں ان الزامات کی تردید کرتے ہیں اور ان کے پاس جج کے فیصلے کے خلاف اپیل دائر کرنے کے لیے پانچ دن ہیں۔

ان پر الزام ہے کہ انھوں نے سنہ 2007 اور 2009 کے دوران مبینہ طور پر یہ رقم چھپائی تھی۔

یہ رقم میسی کی تصاویر کے حقوق سے متعلق تھی جس میں بانکو سبادل، ڈانون، ایڈیڈاس، پیپسی کولا، پروکٹر اینڈ گینبل اور کویت فوڈ کمپنی کے ساتھ معاہدے شامل ہیں۔

فٹبالر اور ان کے والد پر الزام ہے کہ انھوں نے ہسپانوی ٹیکس سے بچنے کے لیے بیلیز اور یوروگوئے میں رجسٹرڈ کمپنیوں کے ذریعے حقوق بیچے۔

جج نے اپنے فیصلے میں کہا کہ ’اس طرح کے جرائم میں یہ ضروری نہیں ہوتا کہ مذکورہ شخص کو اکاؤنٹنگ اور بزنس آپریشنز کے متعلق سب کچھ علم ہو بلکہ یہ ہی کافی ہے کہ فراڈ کرنے کے ڈیزائن کے متعلق آگاہی اور مرضی شامل ہو۔‘

اگست 2013 میں میسی اور ان کے والد نے پانچ ملین یورو کی رقم ٹیکس کی عدم ادائیگی اور سود کی مد میں واپس کی تھی۔

میسی چار مرتبہ فیفا کے سال کے بہترین عالمی کھلاڑی رہ چکے ہیں اور ارجٹائن کی ٹیم کے کپتان بھی ہیں۔

یہ فیصلہ اس وقت سامنے آیا ہے جب بارسیلونا کو ایک اور اہم مقدمے کا سامنا ہے۔

میڈرڈ کی ایک عدالت میں ایک مقدمہ سنا جا رہا ہے جس میں بارسیلونا پر 2013 میں برازیل کے کھلاڑی نیمار کی ٹرانسفر فیس میں سے فنڈز کو خورد برد کرنے کا الزام ہے۔

کلب کے صدر سیندرو روسیل نے الزامات کے بعد جنوری میں استعفیٰ دے دیا تھا لیکن اس کے ساتھ ساتھ انھوں نے یہ اصرار بھی کیا تھا کہ انھوں نے کوئی غلطی نہیں کی۔

اسی بارے میں