آسٹریلیا کے بغیر نقصان کے سو رنز

تصویر کے کاپی رائٹ getty images
Image caption سرفراز کی سنچری تیز رفتار سنچریوں میں شمار ہو گی

دبئی میں کھیلے جانے والے پہلے ٹیسٹ میچ کے دوسرے دن پاکستان کی ٹیم پہلی اننگز کے مجموعی سکور 454 کے جواب میں آسٹریلیا نے سو رن بنالیے ہیں اور اس کا کوئئ کھلاڑی آؤٹ نہیں ہے۔

آسٹریلوی اوپنر ڈیوڈ وانر نے نصف سنچری مکمل کرنے کے بعد ستر گیندوں پر 72 رنز بنائے جب کے دوسری طرف کرس راجرز نے 102 گیندوں پر صرف 27 رنز سکور کیے۔

دوسرے دن کے کھیل میں سرفراز احمد کی اننگز قابل دید تھی جنہوں نے بڑے جارحانہ انداز میں کھیلتے ہوئے 80 گیندوں پر اپنی سنچری مکمل کی۔ سرفراز کی سنچری ٹیسٹ کرکٹ میں تیز ترین سنچریوں میں شمار ہو گی۔

جمعرات کو پاکستان نے چار وکٹوں کے نقصان پر 219 رنز سے اپنی اننگز دوبارہ شروع کی اور کپتان مصباح الحق 69 رنزبنا کر آؤٹ ہو گئے جس کے بعد وکٹ کیپر سرفراز اور اسد شفیق کے درمیان شاندار 124 رنز کی شراکت ہوئی۔

اسد شفیق کے آؤٹ ہونے کے بعد پاکستان کے آخری نمبروں پر کھیلنے والے کھلاڑی زیادہ دیر آسٹریلوی بولر کا سامنا نہ کر پائے اور پاکستان کی وکٹیں گرنے کا سلسلہ شروع ہو گیا۔

اسد کے بعد نوجوان کھلاڑی یاسر شاہ آؤٹ ہوئے، اس کے بعد ذولفقار بابر کی وکٹ گری جس کے بعد سرفراز احمد پویلین لوٹ گئے۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty

اسد شفیق نے 83 رنز بنائے اور وہ اوکیف کی گیند پر آوٹ ہوئے۔ اوکیف کی یہ ٹسیٹ کرکٹ میں پہلی وکٹ تھی۔

میچ کا تفصیلی سکور کارڈ

پہلے دن کے اختتام پر مصباح الحق اور اسد شفیق کریز پر موجود تھے۔ پاکستان کی جانب سے محمد حفیظ اور احمد شہزاد نے اننگز کا آغاز کیا اور دونوں سات رنز کے مجموعی سکور پر پویلین واپس لوٹ گئے۔

ابتدائی نقصان کے بعد یونس خان اور اظہر علی نے تیسری وکٹ کی شراکت میں 108 رنز بنائے۔

پاکستان کی اننگز کی خاص بات یونس خان کی شاندار سنچری تھی۔

انھوں نے دس چوکوں اور ایک چھکے کی مدد سے 106 رنز کی ذمہ دارانہ اننگز کھیلی۔ یونس خان کی یہ پچیسویں نصف سنچری تھی اور انھوں نے انضمام الحق کا ریکارڈ برابر کیا۔

یونس خان آسٹریلیا کے خلاف سنچری بنا کر پہلے پاکستانی کھلاڑی بن گئے ہیں جنھوں نے تمام ٹیسٹ کھیلنے والے ملکوں کے خلاف سنچری سکور کی ہے۔

آسٹریلیا کی جانب سے مچل جانسن نے تین اور پیٹر سڈل نے ایک کھلاڑی کو آؤٹ کیا۔

پاکستان کی جانب سے لیگ سپنر یاسر شاہ اور فاسٹ بولر عمران خان اپنا پہلا ٹیسٹ کھیل رہے ہیں۔

آسٹریلیا کی جانب سے لیفٹ آرم سپنر سٹیو اوکیف اور بیٹسمین مچل مارش کا یہ پہلا ٹیسٹ ہے۔

پاکستان اور آسٹریلیا کے درمیان کھیلے گئے آخری 14 میں سے 13 ٹیسٹ میچ آسٹریلیا نے جیتے ہیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption پاکستان کی اننگز کی خاص بات یونس خان کی شاندار سنچری تھی

پاکستانی ٹیم نے لگاتار 13 ٹیسٹ میچ ہارنے کے بعد سنہ 2010 میں ہیڈنگلے میں کھیلا گیا ٹیسٹ میچ محمد عامر اور محمد آصف کی عمدہ بولنگ کے نتیجے میں تین وکٹوں سے جیتا تھا۔

آسٹریلوی ٹیم دبئی میں پہلی بار ٹیسٹ میچ کھیل رہی ہے۔

اس سے قبل آسٹریلیا نے پاکستان کے خلاف سنہ 2002 میں شارجہ میں دو ٹیسٹ میچ کھیلے تھے جو اس نے جیتے تھے۔

پاکستانی ٹیم ان کھلاڑیوں پر مشتمل ہے: مصباح الحق (کپتان)، احمد شہزاد، محمد حفیظ، اظہرعلی، یونس خان، اسد شفیق، سرفراز احمد، ذوالفقار بابر، یاسرشاہ، عمران خان اور راحت علی۔

آسٹریلوی ٹیم میں یہ کھلاڑی شامل ہیں: مائیکل کلارک (کپتان) کرس راجرز، ڈیوڈ وارنر، ایلکس ڈولن، سٹیو سمتھ، مچل مارش، بریڈ ہیڈن، مچل جانسن، پیٹر سڈل، اسٹیو اوکیف اور نیتھن لیون۔

اسی بارے میں