پاکستانی بولرز حاوی، برتری 189 رنز کی

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption دبئی ٹیسٹ کے تیسرے دن پاکستانی ٹیم کھیل کے پہلے ہی سیشن میں چار وکٹیں حاصل کر کے حاوی ہوگئی

ڈیوڈ وارنر کی سنچری کے باوجود پاکستانی بولروں نے آسٹریلوی بیٹنگ کو قابو کرتے ہوئے اننگز کی بساط 303 رنز پر لپیٹ دی۔

اس طرح پاکستان کو پہلی اننگز میں 151 رنز کی سبقت حاصل ہوگئی جو کھیل کے اختتام پر بڑھ کر 189 رنز ہو چکی تھی۔

دبئی ٹیسٹ کے تیسرے دن پاکستانی ٹیم کھیل کے پہلے ہی سیشن میں چار وکٹیں حاصل کر کے حاوی ہوگئی۔

ڈیوڈ وارنر اور کرس راجرز گذشتہ روز کے سکور میں صرف 15 رنز کا اضافہ کر سکے۔

128 رنز کی یہ شراکت راحت علی نے کرس راجرز کو بولڈ کر کے ختم کی جنھوں نے 130 گیندوں کا سامنے کرتے ہوئے 38 رنز سکور کیے۔

ایلکس ڈولن کو بھی پانچ کے انفرادی سکور پر راحت علی نے اس وقت پویلین کی راہ دکھائی جب ان کی تھرو ڈولن کی رفتار سے تیز ثابت ہوئی۔

پاکستان کو کپتان مائیکل کلارک کی شکل میں قیمتی وکٹ بھی جلد مل گئی۔ وہ صرف دو رنز بناکر ذوالفقار بابر کی گیند پر بیک ورڈ پوائنٹ پر اظہرعلی کے ہاتھوں کیچ ہوگئے۔

یہ تین وکٹیں سکور میں صرف 30 رنز کے اضافے پر گریں۔

204 کے مجموعی سکور پر آسٹریلیا نے چوتھی وکٹ گنوائی جب سٹیو سمتھ 22 رنز بناکر لیگ سپنر یاسر شاہ کی گیند کو کٹ کرنے کی کوشش میں بیک ورڈ پوائنٹ پر محمد حفیظ کے ہاتھوں کیچ ہوگئے۔

یہ یاسر شاہ کی پہلی ٹیسٹ وکٹ تھی جنہوں نے کھانے کے وقفے کے بعد پہلے اوور میں خطرناک ڈیوڈ وارنر کی آگ برساتی توپوں کو بھی خاموش کر دیا۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption ڈیوڈ وارنر گیارہ چوکوں اور دو چھکوں کی مدد سے ایک سو تنتیس رنز بناکر بولڈ ہوئے

ڈیوڈ وارنر 11 چوکوں اور دو چھکوں کی مدد سے 133 رنز بناکر بولڈ ہوئے۔

یہ ان کی ٹیسٹ کرکٹ میں نویں اور لگاتار اننگز میں تیسری سنچری تھی۔

بریڈ ہیڈن نے جارحانہ انداز اختیار کرتے ہوئے دباؤ کو پرے دھکیلنے کی کوشش کی لیکن 22 کے انفرادی سکور پر بولڈ ہوکر وہ عمران خان کی پہلی ٹیسٹ وکٹ بن گئے۔

اپنا پہلا ٹیسٹ میچ کھیلنے والے مچل مارش نے 26 رنز کے سکور پر ریویو لے کر اپنی وکٹ بچائی لیکن ایک رن کے اضافے پر وہ پاکستانی ٹیم کی طرف سے لیے گئے ریویو پر اپنی وکٹ نہ بچا سکے۔

ذوالفقار بابر کی ایل بی ڈبلیو کی اپیل امپائر ایرازمس کو متاثر نہ کر سکی لیکن تھرڈ امپائر نائیجل لانگ کا فیصلہ پاکستانی ٹیم کے حق میں گیا۔

محمد حفیظ نے پیٹر سڈل کو صفر پر ایل بی ڈبلیو کیا تو آسٹریلیا کا سکور 267 تھا۔

مچل جانسن کی 37 رنز کی اننگز نے رنز کے خسارے کو کم کرنے کی کوشش کی لیکن راحت علی کی گیند پر وہ متبادل فیلڈر شان مسعود کو کیچ دے گئے۔

یاسر شاہ نے سٹیو اوکیف کو مصباح الحق کے ہاتھوں کیچ کر اکر آسٹریلوی اننگز ختم کر دی۔ یہ اس اننگز میں یاسر کی تیسری وکٹ تھی۔

ذوالفقار بابر اور راحت علی دو دو وکٹیں حاصل کرنے میں کامیاب رہے۔

اپنا پہلا ٹیسٹ کھیلنے والے فاسٹ بولر عمران خان اور محمد حفیظ کے حصے میں ایک ایک وکٹ آئی۔

پاکستانی اننگز کا آغاز محمد حفیظ کے ان فٹ ہوجانے کے سبب احمد شہزاد اور اظہرعلی نے کیا تو 15 اوورز کا کھیل باقی تھا۔ یہ دونوں کھیل کے اختتام تک سکور کو 38 رنز تک لے گئے۔

جب میچ کا تیسرا دن کم روشنی کے باعث دو اوور پہلے ختم کیا گیا تو احمد شہزاد 22 اور اظہرعلی 16 رنز پر ناٹ آؤٹ تھے۔

اسی بارے میں